Bismillah

694


۱۰رمضان المبارک۱۴۴۰ھ

گناہوں کو پہچانیے… اور پھر ان سے بچیے۔۲۲ (شفیق الرحمن)

گناہوں کو پہچانیے… اور پھر ان سے بچیے (۲۲)

شفیق الرحمن (شمارہ 546)

سودکی لعنت سے بچو!

سود کھانے والے کہاں ہیں؟

حضرت مولانا مفتی عبد الرؤف سکھروی مد ظلہم العالیہ نے اپنی کتاب ہمارے تین گناہ میں ایک حدیث پاک نقل کی ہے جسے انہوں نے’’ دقائق الاخبار‘‘ کے حوالہ سے نقل کیا ہے… جس کا خلاصہ یہ ہے کہ قیا مت کے روز تمام لوگ میدان حشر میں جمع ہوں گے تو بچھو کی نسل کا ایک جانور نکلے گا جس کا نام’’ حریش‘‘  ہوگا، اس کا سر آسمان پر ہوگا اور اس کی دم زمین پر ہوگی، اتنا بڑا جانور ہوگا، اور وہ ستر مرتبہ یہ آواز لگائے گا کہ ’’ این من بارزالرحمن، واین من حارب الرحمن‘‘

’’ وہ لوگ کہاں ہیں جنہوں نے رب العالمین کو مقابلہ کی دعوت دی ہے؟؟؟…

اور کہاں ہیں وہ لوگ جنہوں نے اللہ تعالیٰ سے جنگ کا اعلان کیا ہے؟؟؟…

حضرت جبرائیل علیہ السلام اس جانور سے مخاطب ہوکر پوچھیں گے:

اے حریش! تجھے کن لوگوں کی تلاش ہے؟؟؟…

جواب میں وہ کہے گا مجھے پانچ آدمیوں کی تلاش ہے…

(۱) این من ترک الصلوۃ  ؟؟؟…

وہ لوگ کہاں ہیں جو دنیا میں نماز نہیں پڑھا کرتے تھے؟؟؟…

یہ حریش جانور بے نمازیوں کو ایک ایک کرکے پکڑ لے گا…

(۲) این من منع الزکاۃ ؟؟؟…

پھر وہ جانور پکارے گا کہ وہ لوگ کہاں ہیں جو دنیا میں مال دولت کے مالک  تھے، لیکن مال کی زکوۃ نہیں دیا کرتے تھے…

(۳) این من شرب الخمر ؟؟؟…

پھر وہ’’حریش‘‘ پکارے گا کہ وہ لوگ کہاں ہیں جو دنیا میں شراب نوشی کیاکرتے تھے؟؟؟…

(۴) این من اکل الربوا ؟؟؟…

چوتھے نمبر پر وہ ’’ حریش‘‘ پکارے گا کہ وہ لوگ کہاں ہیں جو دنیا میں سودکھایا کرتے تھے؟؟؟…

 بہر حال یہ’’ حریش‘‘ ان لوگوں کو تلاش کرکے پکڑلے گا جو دنیا میں سود کھایا کرتے تھے… یاسودی لین دین کیا کرتے تھے…

یہ گناہ ایسا ہے جو آج معاشرے کے اندر عام ہوچکا ہے… اور ہماری معیشت میں ریڑھ کی ہڈی بن چکا ہے… جب کوئی شخص کارخانہ لگاتا ہے تو اکثر سودی قرض لے کرکار خانہ لگاتا ہے… اور معمولی کاروبارکرنے والے بھی بینک سے سودی قرض لیتے ہیں…

آج کتنے مسلمان ایسے ہیں جو اپنی رقمیں بینکوں کے اندر فکس ڈپازٹ میں یا سیونگ اکاؤنٹ میں رکھواتے ہیں اور اس کے ذریعہ بینک سے سود وصول کرکے اپنا کام چلاتے ہیں… یہ ایک ایسا گناہ جس کی وجہ سے ہم پریشانی، ذلت اور رسوائی میں، طرح طرح کے عذابوں اور وبالوں میں گرفتار ہیں، جب تک ہم ان گنا ہوں کو نہیں چھوڑیں گے اور توبہ کرکے اللہ تعالیٰ کو راضی نہیں کریں گے… اس وقت تک ہمارے حالات بدلنا مشکل ہیں…

(۵) پانچویں مرتبہ وہ’’ حریش‘‘ اعلان کرے گا ’’ این من یتحدث بحدیث الدنیا فی المساجد‘‘ ؟؟؟…

کہ وہ لوگ کہاں ہیں جو مساجد میں بیٹھ کر دنیا کی باتیں کیا کرتے تھے؟؟؟…

اس اعلان کے بعد وہ حریش جانور اپنا کام اس طرح شروع کرے گا کہ اپنی گردن سے ان پانچ قسم کے لوگوں کو ایک ایک کرکے اُچک لے گا اور اپنے منہ میںجمع کرتا جائے گا۔ (دقائق الاخبارص ۳۸)

 اللہ اور رسول کا سود خور سے اعلان جنگ

قرآن پاک میں اللہ تعالیٰ نے اپنے مؤمن بندوں کو خطاب کرتے ہوئے فرمایا: ’’ اے ایمان والو! اللہ تعالیٰ سے ڈرو اور اگر تم واقعی مؤمن ہو توسود کا جوحصہ بھی(کسی کے ذمہ) باقی رہ گیا ہو اسے چھوڑدو… پھر بھی اگر تم ایسا نہ کروگے تو اللہ تعالیٰ اور اس کے رسول صلی اللہ تعالیٰ علیہ واٰلہ وسلم کی طرف اعلان جنگ سن لو‘‘۔ (سورۃ البقرۃ)

ان آیات مبارکہ میں اللہ تعالیٰ نے اپنے حکم کی مخالفت کرنے والوں کو سخت وعید سنارہے ہیں جس کا مضمون یہ ہے کہ اگر تم نے سود کو نہ چھوڑا  تو اللہ تعالیٰ اور اس کے رسول کی طرف سے اعلان جنگ سن لو…

یہ ایسی سخت وعید ہے کہ کفرکے سوا اورکسی بڑے سے بڑے گناہ پر قرآن میں ایسی وعید نہیں آئی… اور جب انسان احکم اکحاکمین سے اعلان جنگ کرلے اور اپنے کو اللہ تعالیٰ کے غضب وقہرکا مستحق بنادے تو پھر کہاں سے حالات درست ہونگے… آج امت مسلمہ سنگین حالات سے دوچار ہے آج ہم نے آپنے اوپر غورکیا … ؟؟؟… ہم اس وقت کس کشتی پر سوار ہورہے ہیں… آیا کہ وہ کشتی رحمن کی ہے یا شیطان کی… وہ کشتی جہنم میں چھوڑے گی یا جنت کی نعمتوں میں… اپنے عقلوں سے پردے ہٹانے کا وقت ہے … اور دلوں کی قساوت اور سختی کو دور کرنے کا… آنکھوں سے آنسو بہانے کا… اور ہرگناہ سے توبہ کرنے کا… خصوصاً سود کی لنعت سے اپنے کو محفوظ رکھیں!…

سودی لین ودین محبتوں کی قینچی ہے

 حضرت سید قطب شہید رحمتہ اللہ علیہ فرماتے ہیں کہ اسلام نے جس طرح معاشرے کے درمیان محبت کا خاص خیال رکھا ہے اسی طرح افراد کی اخلاقی پاگیزگی کا بھی خاص خیال رکھا ہے اگر کوئی فرد سود لیتا ہے تو وہ حسن اخلاق سے کورا اور زندہ اور باشعور ضمیر سے خالی ہوتا ہے اور جو جماعت اس کو اختیار کرتی ہے تو اس کے درمیان سے باہمی محبت اور میل جول رخصت ہوجا تا ہے۔ (ظلال القرآن، ج۳، ص ۳۳)

سود خوری دل کی سختی کا سبب ہے

حضرت شیخ عبدالحق دہلوی رحمتہ اللہ علیہ فرماتے ہیں کہ ہر فعل کی انسان کی روح  پر تاثیر ہوتی ہے اور تجربہ سے یہ بات ثابت ہے کہ سود خوری سے دل پر سختی اور روپے کی محبت اور بزدلی اس درجہ ہوتی ہے کہ اس کا بیان نہیں ہوسکتا۔ (تفسیر حقانی، ج۳، ص۱۹)

 

رنگین صفحات کے مضامین

  • رنگ و نور ۔ سعدی کے قلم سے
  • Rangonoor English
  • Message Corner
  • رنگ و نور پشتو ترجمہ
  • کلمۂ حق ۔ مولانا محمد منصور احمد
  • السلام علیکم ۔ طلحہ السیف
  • قلم تلوار ۔ نوید مسعود ہاشمی
  • نقش جمال ۔ مدثر جمال تونسوی
  • سوچتا رہ گیا ۔ نورانی کے قلم سے

Alqalam Latest Epaper

Alqalam Latest Newspaper

  • القلم کے گذشتہ شمارے و مضامین
  • کارٹون
Rangonoor Web Designing Copyrights Khabarnama Rangonoor