Bismillah

694


۱۰رمضان المبارک۱۴۴۰ھ

افضل غزوہ کا افضل شہیدؒ( آخری قسط) (بل احیاء۔ حبیب الحق)

افضل غزوہ کا افضل شہیدؒ( آخری قسط)

حبیب الحق (شمارہ 659)

محمد افضل شہیدؒ کو تو جہاد کا شوق بچپن ہی سے تھا لیکن 2012؁ء سے اپنے آپ کو مستقل جہاد کے لئے وقف کردیا۔۔۔ دورۂ تربیہ، اساسیہ، دورۂ تفسیر جیسے بنیادی دورات کرنے کے بعد معسکر تشریف لے گئے۔۔۔ اور اعلیٰ سے اعلیٰ عسکری تربیت حاصل کی۔۔۔ تربیت حاصل کرنے کے بعد افضل شہیؒ نے محاذ کا رخ کیا اور افغانستان میں کافی عرصہ امریکہ اور نیٹو افواج کے خلاف دادِ شجاعت دیتے رہے۔۔۔ جب محاذ سے واپس اپنے علاقے میں آئے تو دعوتِ جہاد میں لگ جاتے، کبھی کسی مسجد کے باہر القلم اخبار فروخت کرتے نظر آتے تو کبھی مجاہدین کے لئے مساجد کے باہر جھولی پھیلائے نظر آتے۔۔۔۔ چھٹیاں ختم ہوتے ہی دوبارہ محاذوں کا رخ کرلیتے۔۔۔ غرض یہ کہ اپنی زندگی کے آخری چھ سات سال کا عرصہ مکمل جہادی امور میں لگایا۔۔۔ افضل شہید رحمہ اللہ کو ہماری جماعت کے عظیم مجاہد محمد افضل گورو شہید رحمہ اللہ کی شہادت نے بہت متاثر کیا۔۔۔ اسی وجہ سے انہوں نے اپنے نام کے ساتھ ’’گورو‘‘ کا اضافہ کرکے انڈیا کو پیغام دیا کہ افضل گورو کو شہید کرکے تم یہ مت سمجھو کہ افضل گورو کا مشن ختم ہوجائے گا بلکہ میری طرح ہزاروں افضل گورو ابھی زندہ ہیں اور تم سے انتقام لینے کے لئے میدانوں میں نکل چکے ہیں۔۔۔ اور پھر اسی جزبہ انتقام اور شوق شہادت کو لیکر خونی لکیر عبور کرکے مقبوضہ وادی میں پہنچا اور بالآخر رمضان المبارک کی 27 ویں شب کو اپنی لیلائے شہادت کو گلے لگا کر ہمیشہ کے لئے اپنی حور عیناء کی آغوش میں چلاگیا۔۔۔۔

شہید کے بڑے بھائی عجب خان نے راقم کو بتایا کہ شہید کے دو جڑواں بھائی پیدا ہوئے تو وہ بہت خوش ہوا اور ایک کا نام ابوبکر اور دوسرے کا نام عمر رکھا اور پھر مجھے کہنے لگا کہ اگر اللہ تعالیٰ نے آپ کو اولاد کی نعمت سے نوازا تو اپنے ایک بیٹے کا نام عثمان اور دوسرے کا نام علی رکھنا۔۔۔۔

افضل شہیدؒ نے محاذ پر جانے سے پہلے مسلسل تین تربیہ کئے اور اپنی مقبول شہادت کی دعا اللہ تعالیٰ سے قبول کروا کر اُٹھا۔۔۔۔ شہیدنے اپنے وصیت نامہ  میں اپنے بھائیوں اور اہل علاقہ کو دورۂ تربیہ اور مجاہدین کے لئے قربانی کی کھالیں جمع کرنے کی وصیت کی ہے۔۔۔۔ اس وصیت نامے کا اثر یہ ہوا کہ الحمدللہ شہید کے بھائیوں سمیت علاقہ سے بہت بڑی تعداد نے دورۂ تربیہ میں شرکت کی اور ہر مہینے افضل شہیدؒ کے محلے کا کوئی نہ کوئی فرد ضرور تربیہ میں ہوتا ہے۔

حلقہ فرنٹیئر کے منتظم بھائی سردار نے راقم کو بتایا کہ ہمارے حلقے سے ہر سال ایک ٹرک کھالیں جمع ہوتی تھی لیکن اس سال الحمدللہ افضل شہیدؒ کی وصیت ور قربانی کی برکت سے 2 ٹرک کھالیں جمع ہوئی۔۔۔ شہید کے بڑے بھائی عجب خان نے بھی افضل شہیدؒ کے مشن پر چلنے کا عزم کیا اور افضل کی شہادت کے بعد سب سے پہلا کام انہوں نے یہ کیا کہ اپنے چہرے پر داڑھی رکھ کر اپنے چہرے کو سنت کے نور سے منور کیا اور تربیہ کرکے اپنے دل کو اللہ کے نور سے منور کیا۔۔۔ اللہ تعالیٰ انہیں مزید استقامت نصیب فرمائیں اور افضل شہیدؒ کے مشن کو پورا کرنے کی توفیق نصیب فرمائیں۔

شہداء کی کرامت:ـ

افضل شہیدؒ اور دیگر شہداء کرام کو مقام شہادت کے قریب ہی اجتماعی قبر میں سپرد خاک کردیا گیا تھا۔۔۔۔ شہادت کے کچھ عرصہ بعد شہداء کی قبر اور جہاں تک قبر کی مٹی کے ذرات گئے تھے وہاں پر بہت ہی عجیب قسم کے پھول اُگ آئے ہیں جن کی خوشبو سے پورا علاقہ معطر ہے۔ بتانے والوں نے بتایا کہ اس قسم کے پھول پوری وادی کے اندر کہی اور نہیں ہے اس بارے میں تفصیلی کالم حضرت مفتی اصغر خان کشمیری صاحب القلم شمارہ نمبر 657 میں تحریر کرچکے ہیں قارئین وہاں ملاحظہ کرسکتے ہیں۔۔۔۔

محمد افضل شہید رحمہ اللہ پر لکھنے کے لئے بہت کچھ باقی تھا لیکن عین کالم لکھتے وقت راقم کو اپنے ہی سگے بھائی شریف اللہ کی شہادت کی خبر موصول ہوئی۔۔۔ اللہ میرے پیارے بھائی کی شہادت کو قبول فرمائیں اور مجھ سمیت میرے سارے گھر والوں کو صبر جمیل نصیب فرمائیں۔۔۔۔ دل، دماغ اور قلم ساتھ نہیں دے رہے ہیں اس لئے افضل شہیدؒ کے وصیت ناموں پر اس کالم کا اختتام کرتے ہیں۔۔۔

افضل شہیدؒ نے دو وصیت نامے تحریر کئے ہیں ایک اپنے گھر والوں کے لئے اور ایک اپنے ضلع کے ساتھیوں کے لئے۔۔۔

وصیت نامہ

السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ‘

سلام کے بعد عرض ہے کہ آپ گھر والے خیریت سے ہونگے اور میں بھی ٹھیک ہوں۔ ہمارے رمضان کے روزے بڑے اچھے گزر رہے ہیں آج 15 روزے ہوگئے ہیں۔ موسم کچھ گرم ہوگیا ہے۔ کراچی میں تو بڑی گرمی ہوگی اور اس حساب سے ثواب بھی زیادہ ہوگا۔۔۔

الحمدللہ میں نے 2 قرآن پاک ختم کرلئے ہیں اور ان شاء اللہ دو کا مزید پکا ارادہ ہے۔۔۔ اور باقی سارے دوست احباب بھی اچھے ہیں اور آپ کو سلام دے رہے ہیں۔۔۔۔

امی، ابو! آپ میرے لئے دعا کرو کہ اللہ مجھ سے اپنے دین کا بڑا کام لے۔۔۔ میں اس مرتبہ بھی آیا لیکن جیسے آپ لوگوں کی خدمت کا حق تھا وہ میں ادا نہ کرسکا۔۔۔۔ اور خصوصی طور پر بھائی عجب خان سے معافی مانگتا ہوں۔ اس کا تھوڑا سا دل دکھایا اور ملاقات بھی نہ ہوسکی۔ ہوسکے تو اپنے اس گنہگار اور مسافر بھائی کو معاف کردینا۔ چچائوں، چچیوں، ماموں اور سب رشتہ داروں کو پیار اور محبت بھرا سلام۔ آپ سب میرے لئے دعا کرو۔۔۔ والد صاحب! آپ میرے دوستوں خصوصاً عمران، وسیم، احسان علی کو سلام کہنا اور ان سے یہ بھی کہنا کہ افضل چلا گیا ہے لیکن آپ لوگوں نے اب محلے کے سب لڑکوں کو دورہ تربیہ پر لیکر جانا ہے۔۔۔ بھائی محمد دین آپ پر ذمہ داری اور بھی زیادہ ہے۔۔۔ اور کیا کہوں رات کے ساڑھے بارہ بج رہے ہیں اور میں پہرے پر کھڑا ہوں۔۔۔ بس میرے لئے دعا کرو۔۔۔ بھائی عجب خان اور واجد خان سے میری دلی اپیل ہے کہ اگر اللہ آپ کو اولاد دیں تو نام عثمان اور علی رکھنا۔۔۔ میں خصوصی طور پر تہجد میں آپ کے لئے دعا کرونگا۔۔۔ آپ سب مجھ سے دور ہو کر بھی میرے دل کے قریب ہو۔۔۔ ایک طرف اللہ کی محبت اور دوسری طرف آپ لوگوں کی جدائی۔۔۔ پر کیا کروں اللہ سے ملاقات کا شوق ہے۔۔۔ دعا کرو اللہ مجھے اپنی ملاقات نصیب کریں۔۔۔ پھر ان شاء اللہ جنت میں سب ساتھ ہونگے۔۔۔

والسلام

آپ کا مسافر بھائی، بیٹا

افضل خان (کشمیر)

جگہ کی تنگی کی وجہ سے سے صرف ایک ہی وصیت نامہ پر اکتفاء کرتے ہیں۔ اللہ تعالیٰ ہمیں بھی افضل شہیدؒ کے نقش قدم پر چلاتے ہوئے جام شہادت نصیب فرمائیں۔

ہے نام افضل تھا کام افضل

ملا ہے کیسا انعام افضل

٭…٭…٭

رنگین صفحات کے مضامین

  • رنگ و نور ۔ سعدی کے قلم سے
  • Rangonoor English
  • Message Corner
  • رنگ و نور پشتو ترجمہ
  • کلمۂ حق ۔ مولانا محمد منصور احمد
  • السلام علیکم ۔ طلحہ السیف
  • قلم تلوار ۔ نوید مسعود ہاشمی
  • نقش جمال ۔ مدثر جمال تونسوی
  • سوچتا رہ گیا ۔ نورانی کے قلم سے

Alqalam Latest Epaper

Alqalam Latest Newspaper

  • القلم کے گذشتہ شمارے و مضامین
  • کارٹون
Rangonoor Web Designing Copyrights Khabarnama Rangonoor