Bismillah

694


۱۰رمضان المبارک۱۴۴۰ھ

نفیس پھُول ۔ 669

نفیس پھُول

امام جمال الدین ابن الجوزیؒ

(شمارہ 669)

اللہ تعالیٰ کی حلال چیزوں کو حرام کرنا

وقت کے بعض صوفیاء سے سننے میں آیا ہے کہ ان کے آگے کھانا لایا گیا تو فرمایا: میں نہیں کھائوں گا، پوچھا گیا: کیوں؟فرمایا :اس لئے کہ میرا نفس اس کی خواہش رکھتا ہے اور میں نے برسوں سے نفس کو اس کی مرغوبات سے روک رکھا ہے ،میں نے کہا کہ اس سلسلہ میں آپ کو دو طرح سے غلطی لگی ہے اور اس کی وجہ لاعلمی اور جہالت ہے، پہلی وجہ تو یہ کہ خود آنحضرتﷺ اور آپ کے اصحاب کا یہ طریقہ نہ تھا۔ آپﷺ مرغی کا گوشت تناول فرمالیتے تھے میٹھی چیز اور شہد آپ ﷺکو مرغوب تھے۔

فرقد سنجی حضرت حسنؒ کی خدمت میں آئے دیکھا کہ فالودہ کھا رہے ہیں۔ آپ نے سوال کیا: فرقد اس فالودہ کے بارے میں کیا خیال ہے؟فرقد نے عرض کیا: میں نہ خود کھاتا ہوں نہ کھانے والے کو پسند کرتا ہوں، حضرت حسن ؒنے فرمایا کہ اس میں شہد ہے میدہ ہے اور گائے کا گھی ہے، کون سی چیز ہے جسے کوئی مسلمان معیوب سمجھ سکتا ہے؟ ایک اور آدمی حضرت حسنؒکی خدمت میں آکر کہنے لگا: میراایک ہمسایہ ہے جو فالودہ نہیں کھاتا۔ پوچھا: کیوں؟ آدمی نے جواب دیا کہ وہ کہتا ہے میں اس کا حق شکرادا نہیں کر سکتا۔ آپ نے فرمایا کہ تیرا ہمسایہ جاہل ہے کیا بھلا وہ ٹھنڈے پانی کا شکرادا کرسکتا ہے؟سفیان ثوریؒ سفر میں فالودہ اور بکری کے بچے کا بھنا ہوا گوشت ساتھ رکھتے تھے اور فرماتے کہ جانور کے ساتھ اچھا سلوک کروتو وہ کام خوب دیتا ہے۔ ان حضرات کے بعد بعض صوفیوں میں جو اس دین کی کچھ باتیں چل نکلی ہیں وہ رہبانیت سے چرائی ہوئی ہیں، ہمیں تو ان سے ڈر ہی لگتا ہے کیونکہ اللہ تعالیٰ کا ارشاد مبارک ہے:’’وہ پاکیزہ چیزیں جو اللہ تعالیٰ نے حلال فرمائی ہیںانہیں حرام مت بناؤ اور حد سے مت گزرو۔‘‘

رنگین صفحات کے مضامین

  • رنگ و نور ۔ سعدی کے قلم سے
  • Rangonoor English
  • Message Corner
  • رنگ و نور پشتو ترجمہ
  • کلمۂ حق ۔ مولانا محمد منصور احمد
  • السلام علیکم ۔ طلحہ السیف
  • قلم تلوار ۔ نوید مسعود ہاشمی
  • نقش جمال ۔ مدثر جمال تونسوی
  • سوچتا رہ گیا ۔ نورانی کے قلم سے

Alqalam Latest Epaper

Alqalam Latest Newspaper

Rangonoor Web Designing Copyrights Khabarnama Rangonoor