Bismillah

599

۲۷رمضان المبارک تا۳شوال المکرم ۱۴۳۸ھ        بمطابق      ۲۳تا۲۹جون۲۰۱۷ء

دوراتِ تفسیر (السلام علیکم ۔ طلحہ السیف)

Assalam-o-Alaikum 589 (Talha-us-Saif) - Dorat e Tafseer

 دوراتِ تفسیر

السلام علیکم..طلحہ السیف (شمارہ 589)

جہاد لازم ہے: ماننا بھی اور کرنا بھی

کیسے پتا چلا؟

قرآن مجید کی درجنوں واضح اور محکم آیات سے

جہاد کس کس پر لازم ہے؟

کیونکر لازم ہے؟

کن کے خلاف ہے اور کن اہداف کے لیے ہے؟

کب تک ہے؟

یہ سب کیسے معلوم ہو گا؟

قرآن مجید کی سینکڑوں آیات میں یہ مضامین بیان ہوئے ہیں۔قرآن مجید پڑھیں گے تو سب معلوم ہو جائے گا

جہاد میں فتح شکست کیسے ہوتی ہے؟

فتح کے بعد کیا کرنا چاہیے اور شکست سے کیسے نمٹا جاتا ہے؟

جہاد کے راستے کی رکاوٹیں کیا کیا ہیں اور ان سے نبرد آزما کیونکر ہوا جا سکتا ہے؟

بے سروسامانی اور قلت کے عالم میں کس طرح بڑی طاقتوں سے بھڑا جاتا ہے اور نتیجہ کیا نکلتا ہے؟

جان کیوں مانگی جا رہی ہے اور مال کیوں؟

ان کا بدلہ کیا ملنے والا ہے؟

ان سوالوں کے جواب کسی دانش ور، علامہ اور مفتی کے پاس نہیں۔ اللہ تعالیٰ کے کلام میں بڑی وضاحت کے ساتھ موجود ہیں

اور ہاں!

جہاد سے دور رکھنے کے لئے نفس کیا کیا بہانے گھڑتا ہے؟

شیطان کیا کیا دانشورانہ حیلے سمجھاتا ہے؟

اخوان الشیاطین کس طرح قدموں میں تاویلات کی زنجیریں اور دماغ پر تلبیسات کے پردے چڑھاتے ہیں؟

ایک ایک بات، ایک ایک بہانہ، ایک ایک تاویل صدیوں پہلے قرآن مجید میں نازل ہو چکی اور اس کا شافی جواب بھی کیا آپ نے پڑھا ہے؟

اور پھر انجام:

جو ان جالوں میں پھنس کر رہ جائے اس کا بھی

اور

ان کا بھی جو

سمجھ کر اے خرد اس دل کو پابند علائق کر

یہ دیوانہ اڑا دیتا ہے ہر زنجیر کے ٹکڑے

کہہ کر حدود سودوزیاں سے گذر جاتے ہیں

(علائق عقل اور نفس کی طرف سے ڈالے جا رہے ہوں تو اے خرد کہتے ہیں اور اگر کسی عقلمند غامدی کی طرف سے تو خطاب سے خرد کی دال اڑا دیتے ہیں)

پھر ان میں سے جو جاں سے گذر گئے ان کا خوبصورت،حسین، دل آویز انجام بھی تفصیل سے اور واپس لوٹ آنے والوں کا مقام بھی مفصل انداز میں قرآن مجید نے ہی ذکر کیا ہے کیا آپ کی نظر سے گذرا؟

جماعت کیوں ضروری ہے؟

اطاعت کیوں کر لازم ہے؟

یہ چیزیں مضبوط نہ ہوں تو نتائج کیسے بدلتے ہیں؟

اتنا اہم موضوع قرآن مجید میں مذکور ہے کیا آپ نے دیکھا ہے؟

جہاد کے بارے میں ہر طرف سوالات بکھرے ہیں،شکوک و شبہات کے انبار ہیں اور الحادی نظریات کے ڈھیربظاہر مدلل مبرھن اور عقلی مگر حقیقت میں مکڑی کے جالے سے کمزور تر محض لفظوں کے کھیل

آپ سوالات سے تو ضرور متاثر ہوں گے کیا جوابات بھی جانتے ہیں؟

چونکہ جہاد کو سوالات کا سامنا ہے اور ہمیشہ سے ہے اس لئے جہاد کے ہر عقلی پہلو،ہر عملی زاویے اور ہر نظریاتی رخ پر باریکی سے قرآن مجید نے کلام کیا ہے

جنہوں نے پڑھ لیا ہے انہیں اب کوئی سوال اور شبہ پریشان نہیں کرتا کیا آپ نے بھی پڑھ لیا ہے؟

نہیں؟ تو دو کام کیجیے!

(۱)چار جلدوں کی ایک کتاب خرید لیجیے۔نام ہے اس کا فتح الجوّاد فی معارف آیات الجہاد

مصنف کا نام ہے۔ امیر المجاہدین حضرت مولانا محمد مسعود ازہر حفظہ اللہ تعالیٰ

یہ کتاب اردو زبان میں ہے اور اپنے موضوع پر لکھی جانے والی واحد کتاب ہے

آپ اسے آسانی سے پڑھ اور سمجھ سکتے ہیں

اس میں ایسے ہر سوال کا شافی جواب قرآن کی زبان میں ہی موجود ہے۔روزانہ کچھ وقت مختص کیجیے اور قرآن مجید کے پیغام جہاد سے اپنے دل و دماغ کو معطر کر لیجئے

لیکن!

اگر آپ مطالعہ کرنے میں سست ہیں یا کسی اور وجہ سے ایسا نہیں کر سکتے تو دوسرا کام کر لیجیے جو آسان بھی ہے اور مختصر بھی

اس ہفتے سے ملک بھر میںدورات تفسیر آیات جہاد کا سالانہ سلسلہ ہو چکا ہے۔دو مقامات (کراچی اور میانوالی) پر یہ دورہ جاری ہے البتہ ۲۲ تا  ۲۷ اپریل اور پھر ۲۹ اپریل تا ۴ مئی ان دو ہفتوں میں یہ سلسلہ اپنے عروج پر ہوگا اور درجنوں مقامات پر یہ دورہ منعقد ہوگا ان شاء اللہ…محض ایک ہفتے کے اس دورے میں قرآن مجید کی ان آیات کا ترجمہ اور تفسیر پڑھائے جاتے ہیں جن کا تعلق اللہ تعالیٰ کے حکم جہاد سے ہے۔ان چھ دنوں میں عقیدہ بھی سمجھایا جاتا ہے،نظریئے کے خد و خال بھی نمایاں کئے جاتے ہیں،عمل کی ترتیب بھی سمجھائی جاتی ہے اور سوالوں کے جوابات بھی دئیے جاتے ہیں۔قرآن مجید میں مذکور نبی کریم ﷺ اور صحابہ کرام کے غزوات و سرایا بھی تفصیل سے بیان ہوتے ہیں اور سابقہ امتوں کے جہادی واقعات بھی۔ سیرت مطہرہ سے آقا مدنیﷺکے مبارک جہاد کی تفصیلات سامنے آئیں تو ایک مومن اور محب نبی ﷺ کے ذہن سے سوالات کے پردے ویسے ہی ہٹنے لگتے ہیں اور دل خود میدان عمل کی طرف کھنچنے لگتا ہے۔بے شک محبت ہزار سوالوں کا جواب اور سو بیماریوں کا شافی علاج ہے۔

عنقریب ان دورات کا مکمل شیڈول القلم کے صفحے پر شائع کردیا جائے گا،اس میں دیکھ لیں کہ آپ کے علاقے کے قریب تر کون سی جگہ اور کون سی تاریخ کو آرہا ہے۔اگر قریب میسر نہ ہو تو اپنی اس ایمانی ضرورت کیلئے سفر گوارہ کریں۔آج گلی گلی،قریہ قریہ، ہر اخبار،ہر ٹیلی ویژن پر فتنہ انکار جہاد زوروں پر ہے۔غامدی اور اس کے ہم نوا مختلف انداز میں مختلف ناموں سے صرف اسی ایک کام کو ہدف بنا کر مصروف عمل ہیں۔انہوں نے جہاد فی سبیل اللہ کے اسلامی مفہوم کو بدلنے کے لئے امت کو فضول مباحث میں الجھا دیا ہے۔قرآن مجید ان تمام فتنوں کا توڑ ہے۔آپ جہاد کو قرآن مجید سے سمجھ لیں۔حضرت آقا مدنی ﷺ کی تعلیمات اور عمل سے جان لیں اور صحابہ کرام کے تعامل سے دیکھ لیں تو نہ صرف خود ان فتنوں سے محفوظ ہو جائیں گے بلکہ ان شاء اللہ دوسروں کو بچانے کے قابل بھی ہو جائیں گے۔اللہ تعالیٰ نے اس مقصد کے حصول کے لئے آپ کو دو نعمتیں نصیب فرمائی ہیں۔فتح الجواد اور دورات تفسیر آیات جہادان کی قدر کریں اور ان سے بھر پور استفادہ کریں۔دورات کے اس  سلسلے میں فوری طور پر اپنی اور اپنے احباب کی شرکت کی ترتیب بنائیں ۔جہاد کی دعوت دینے والے ساتھی خود بھی اہتمام سے ان دورات میں شرکت کریں اور اپنی دعوت کو قرآنی دلائل سے مضبوط کریں۔

امید ہے اس مسعود سلسلے سے القلم پڑھنے والے تمام لوگ فیض یاب ہوں گے۔

٭…٭…٭

رنگین صفحات کے مضامین

  • رنگ و نور ۔ سعدی کے قلم سے
  • Rangonoor English
  • Message Corner
  • رنگ و نور پشتو ترجمہ
  • کلمۂ حق ۔ مولانا محمد منصور احمد
  • السلام علیکم ۔ طلحہ السیف
  • قلم تلوار ۔ نوید مسعود ہاشمی
  • نقش جمال ۔ مدثر جمال تونسوی
  • سوچتا رہ گیا ۔ نورانی کے قلم سے

Alqalam Latest Epaper

Alqalam Latest Newspaper

  • القلم کے گذشتہ شمارے و مضامین
  • کارٹون
TAKWIR Web Designing (www.takwir.com) Copyrights Alqalam Weekly Online