Bismillah

694


۱۰رمضان المبارک۱۴۴۰ھ

مضامین

شہر مدینہ …سرکارِ مدینہ ﷺ کی نظر میں

 

شہر مدینہ …سرکارِ مدینہ ﷺ کی نظر میں

Madinah Madinah

آپ ﷺکی مدینہ منورہ سے محبت :

نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کو مدینہ بہت عزیز اور محبوب تھا ۔

چنانچہ حضرت انس رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ نبی کریمﷺ جب سفر سے آتے اور مدینہ کی دیواروں پر نظر پڑتی تو اپنی اونٹنی تیز کر دیتے اور اگر اونٹنی کے علاوہ کوئی دوسری سواری ہوتی تو اس کو تیز کر دیتے ۔

 انہیں سے ایک دوسری حدیث میں منقول ہے کہ نبی کریمﷺ نے مدینہ کے اُحد پہاڑ کے بارے میں فرمایا : یہ پہاڑ ہم سے محبت کرتا ہے اور ہم اس سے محبت کرتے ہیں ۔

 جیسا کہ احادیث ذیل میں اس کی تصریح ہے :

عن انس رضی اللّٰہ عنہ ان النبی ﷺ کان اذا قدم من سفر فنظر الی جدرات المدینۃ اوضع راحلتہ وان کان علی دابۃ حرکہا من حبہا (بخاری ۲۵۳)

’’ حضرت انس رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ نبی کریمﷺ جب کسی سفر سے واپس آتے اور مدینہ کی دیواروں کو دیکھتے تو اپنی اونٹنی کو تیز کر دیتے اور اگردوسری سواری پر ہوتے اس کو تیز کر دیتے اور یہ سب مدینہ سے محبت کی وجہ سے تھا ۔‘‘

و عنہ ان النبی ﷺ ان النبی صلی اللّٰہ علیہ وسلم طلع لہ احد فقال ہذا جبل یحبنا ونحبہ(مؤطا مالک ، کتاب الجامع ، باب ماجاء فی امر المدینۃ ۳۶۱)

’’ حضرت انس رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ نبی کریمﷺ کو جب اُحد پہاڑ دکھائی دیتا تو آپ ﷺ فرماتے :یہ پہاڑ ہم سے محبت کرتا ہے اور ہم اس سے محبت کرتے ہیں ۔‘‘

فائدہ : اس حدیث میں ’’ ہذا جبل یحبنا و نحبہ ‘‘ کی شرح میں محدثین کی دو رائے ہیں :

(۱)… یہ حدیث مجاز پر محمول ہے اور پہاڑ کے محبت کرنے کا مطلب ہے کہ اس پہاڑ کے قریب رہنے والے لوگ یعنی اہل مدینہ جو صاحب ایمان وتوحید ہیں ہم سے محبت کرتے ہیں اور ہم ان سے محبت کرتے ہیں

(۲)… یہ حدیث اپنے ظاہر پر محمول ہے اس لیے کہ اللہ تعالیٰ بعض دفعہ جمادات میں بھی علم و دانائی ، محبت و عداوت پیدا فرما دیتے ہیں ، جیسا کہ وہ ستون جس پر ٹیک لگا کر آپ ﷺ خطبہ دیا کرتے تھے جب منبر تیار ہو گیا اور آپﷺ منبر پر خطبہ دینے لگے اور ستون پر ٹیک لگا کر خطبہ دینا ترک فرما دیا تو وہ نبی کریمﷺ سے جدائی کے غم میں رونے لگا ۔

الغرض خواہ یہ حدیث ظاہر پر محمول ہو یا مجاز پر دونوں صورتوں میں مدینہ کی حرمت و عظمت کی طرف مشیر ہے ، اگر ظاہر پر محمول ہو تو اس لیے کہ اس حدیث سے آپ ﷺ اور صحابہ کرام رضی اللہ عنہم کا مدینہ کے پہاڑ اُحد سے محبت کرنا اور پہاڑ کا آپ ﷺ اور آپ کے صحابہ ؓ سے محبت کرنا ثابت ہوتا ہے۔ اور مجاز پر محمول ہو تو ،اس لیے کہ اس حدیث سے اہل مدینہ کا آپ ﷺ اور آپ کے صحابہ کرام رضی اللہ عنہم سے محبت کرنا ثابت ہوتا ہے اور آپﷺاور آپ کے صحابہ کرام رضی اللہ عنہم کا اہل مدینہ سے ۔

گویا اہل مدینہ آپ ﷺ اور آپ ﷺکے صحابہ کرام رضی اللہ عنہم کے نزدیک محبوب ہیں تو اہل مدینہ کی فضیلت ثابت ہوئی اور مکین کی فضیلت مکان کی فضیلت کو  مستلزم ہوتی ہے ، لہٰذا مدینہ کی فضیلت ثابت ہوئی ۔

(جاری ہے )

٭…٭…٭

رنگین صفحات کے مضامین

  • رنگ و نور ۔ سعدی کے قلم سے
  • Rangonoor English
  • Message Corner
  • رنگ و نور پشتو ترجمہ
  • کلمۂ حق ۔ مولانا محمد منصور احمد
  • السلام علیکم ۔ طلحہ السیف
  • قلم تلوار ۔ نوید مسعود ہاشمی
  • نقش جمال ۔ مدثر جمال تونسوی
  • سوچتا رہ گیا ۔ نورانی کے قلم سے

Alqalam Latest Epaper

Alqalam Latest Newspaper

Rangonoor Web Designing Copyrights Khabarnama Rangonoor