Bismillah

660

۱۰تا۱۶محرم الحرام۱۴۴۰ھ  بمطابق    ۲۱تا۲۷ستمبر۲۰۱۸ء

’’استقامت ‘‘قضیہ فلسطین کے خلاف سازشوں کے سامنے فولادی ڈھال! (محمد فیض اللہ جاوید)

’’استقامت ‘‘قضیہ فلسطین کے خلاف سازشوں کے سامنے فولادی ڈھال!

محمد فیض اللہ جاوید (شمارہ 651)

جنگیں، یہودی آباد کاری، جبری ھجرت اور سیاسی سمجھوتے یہ سب صہیونی دشمن کی فلسطینی قوم اورقضیہ فلسطین کو ختم کرنے کی مختلف شکلیں ہیں مگر ایک صدی کے قریب عرصہ گذر جانے کے باوجود صہیونی دشمن اپنی سازشوں میں اس لیے کامیاب نہیں ہوسکا کہ فلسطینی قوم نے ایک ایک سازش کے سامنے پوری استقامت اور اولوالعزمی کا مظاہرہ کرتے ہوئے خود کو ان سازشوں کے سامنے  آہنی اور فولادی دیوار ثابت کیا۔

ایک استعماری طاقت کے طور پر صہیونی ریاست نے فلسطین میں اپنے توسیع پسندانہ عزائم کو آگے بڑھانے کے لیے مذہب کا سہارا لیا اور تورات کی مَن گھڑت روایات کو اپنے حق میں بہ طور دلیل پیش کیا۔ یہ ثابت کرنے کی کوشش کی گئی کہ فلسطین اصلاً یہودیوں کا قومی ملک ہے اور فلسطینی یہاں نو آباد کار ہیں۔ اس طرح فلسطینیوں کے وجود کو ختم یا کم کرنے کے لیے طاقت کے استعمال اور جنگوں کے ساتھ ساتھ سیاسی تصفیوں کا بھی سہارا لیا جاتا رہا۔

فلسطینی قوم کے خلاف سازش ریل گاڑی کی بوگیوں کی مانند ہے جو ایک دوسرے سے الگ بھی ہیں اور جڑی ہوئی بھی ہیں۔ اصل کشمکش کا آغاز 1897ء کی بازل کانفرنس سے ہوا۔ اس کے بعد اعلان بالفور (1917) اس کی اگلی کڑی تھی جس میں ارض فلسطین میں یہودیوں کے وطن کا جھوٹ گھڑا گیا۔ پھر 1929ء کا انقلاب براق، 1936ء کی طویل ترین ہڑتال جس کے بعد نکبہ کا قتل عام، پھر انتفاضہ 1987ء ، انتفاضہ الاقصیٰ2000ء یہ تمام وہ اہم مراحل ہیں جن میں فلسطینی قوم نے اپنے وجود کی بقاء کی جنگ لڑی۔ فلسطینی آج بھی دشمن کے سامنے اپنے آئینی حقوق کی جدو جہد پورے توانا عزم کے ساتھ کر رہے ہیں۔ دشمن نے فلسطینیوں کو تقسیم کرنے کے لیے اوسلو معاہدہ جیسے اقدامات کیے مگر ہر بار فلسطینی نے پہلے سے بڑھ کر یکجہتی کا مظاہرہ کیا۔

زندہ قوم

فلسطین میں صہیونی ریاست کے قیام کی بنیاد برطانوی سامراج نے ڈالی اور اس خار دار پودے کو پروان امریکیوں نے چڑھایا۔ سنہ 1948ء سے 1993ء تک مجرمانہ غفلت کی مرتکب عالمی برادری نے فلسطینیوں کے حقوق کے لیے کوئی موثر قدم نہ اٹھایا بلکہ فلسطین میں یہودی آباد کاری اور فلسطینیوں پر مظالم کے تسلسل میں امریکا اور برطانیہ صہیونی ریاست کے دست و بازو بنے رہے۔

فلسطینیوں کو جبراً ھجرت پر مجبور کیا جاتا، ان کا قتل عام کیا جاتا اور اَملاک غصب کر کے یہودیوں کو دی جاتی رہیں مگر عالمی سامراجی طاقتوں نے فلسطینیوں پر مظالم بند کرانے کے بجائے انہیں اوسلو معاہدے کا لالی پاپ دیا جس کی اگلی اور انتہائی بھیانک شکل 2018ء کی صدی کی ڈیل کی شکل میں دیکھی جاسکتی ہے۔

فلسطینی تجزیہ نگار اور پناہ گزینوں کے امور کے ماہر رمزی رباح کا کہنا ہے کہ فلسطینی قوم کی مشکلات شروع سے ہی چلی آ رہی ہیں۔ عالمی طاقتوں نے فلسطینی قوم کے حقیقی مطالبات کو ہمیشہ نظرانداز کیا اور برائے نام اور جعلی امن معاہدوں کے ذریعے فلسطینیوں کو چنگل میں پھنسانے کی کوششیں کی جاتی رہیں۔ تاہم فلسطینی قوم نے ہمیشہ بیداری اور زندہ ہونے کا ثبوت دیا اور اپنے حقوق پر کلہاڑا چلانے والوں کو یہ پیغام دیا کہ فلسطینی قوم بکنے اور جھکنے والی ہرگز نہیں۔

انہوں نے کہا کہ فلسطینیوں کو قومی یکجہتی کی جتنی آج ضرورت ہے، ماضی میں کبھی نا تھی۔ آج فلسطینی قوم کو ڈونلڈ ٹرمپ کی صدی کی ڈیل کی سازش کا سامنا ہے۔ تجزیہ نگار محمد مصلح نے کہا کہ صہیونی ریاست کے منصوبوں کے پس پردہ توراتی نظریہ کار فرما ہے جس کا اصل ہدف ارض فلسطین سے فلسطینی قوم کے وجود ہی کو ختم کرنا ہے۔انہوں نے کہا کہ فلسطینی قوم کا اپنی شناخت پر قائم رہنا ہی صہیونی ریاست کے مذموم عزائم کے سامنے سب سے بڑی رکاوٹ ہے۔ صہیونی ریاست کے لیڈر فلسطینیوں کے حقوق کیا، ان کے وجود ہی کو تسلیم نہیں کرتے جب کہ فلسطینی قوم اپنے زور بازو سے آج تک نہ صرف خود کو زندہ رکھے ہوئے ہے بلکہ اپنے حقوق کی جنگ لڑ رہی ہے۔

نوآبادیاتی نظام کی ترویج

فلسطین میں صہیونی ریاست کے 70 سالہ قیام کے عرصے پر نظر ڈالیں تو قدم قدم پر ہمیں فلسطینی قوم کے قتل عام کے ثبوت ملتے ہیں۔ ستر برس سے فلسطین میں یہودی آباد کاری کا کینسر پھیل رہا ہے۔رمزی رباح کا کہنا ہے کہ سنہ1948ء کی نکبہ میں12لاکھ فلسطینیوں کو جلاوطن کرکے ایک لاکھ یہودیوں کو آباد کیا گیا۔ فلسطینیوں کی جبری بے دخلی اور ھجرت اس لیے کی جاتی رہی تاکہ فلسطینی آبادی میں یہودیوں کے مقابلے میں اقلیت میں بدل جائیں۔ اگر فلسطینی آبادی میں اکثریت میں رہتے ہیں تو اس طرح صہیونی ریاست کو اپنے عزائم آگے بڑھانے مشکل ہوجائیں گے۔ہجرت کے بعد سب سے زیادہ فلسطینی غزہ کی پٹی میں آباد ہوئے جہاں فلسطینی پناہ گزینوں کی آبادی کا تناسب کل آبادی کا 70 فی صد ہے۔ فلسطین کے عرب شہروں میں صہیونی ریاست نے نوآبادیاتی نظام کے مطابق پالیسی اپنائی۔ فلسطینی اراضی غصب کرکے یہودیوں کو دی گئی۔ کالونیاں بنائی گئیں۔ فلسطینی قصبے تقسیم کئے گئے اور طاقت کے ذریعے فلسطینیوں کو ان کے وطن اصلی سے نکل جانے پر مجبور کیا جاتا رہا۔صہیونی ریاست نے آرمی ایکٹ 1797 جاری کیا جس کے تحت سیکٹر C میں فلسطینیوں کے مکان تعمیر کرنے پر پابندی عاید کردی۔

٭…٭…٭

رنگین صفحات کے مضامین

  • رنگ و نور ۔ سعدی کے قلم سے
  • Rangonoor English
  • Message Corner
  • رنگ و نور پشتو ترجمہ
  • کلمۂ حق ۔ مولانا محمد منصور احمد
  • السلام علیکم ۔ طلحہ السیف
  • قلم تلوار ۔ نوید مسعود ہاشمی
  • نقش جمال ۔ مدثر جمال تونسوی
  • سوچتا رہ گیا ۔ نورانی کے قلم سے

Alqalam Latest Epaper

Alqalam Latest Newspaper

  • القلم کے گذشتہ شمارے و مضامین
  • کارٹون
TAKWIR Web Designing (www.takwir.com) Copyrights Alqalam Weekly Online