Bismillah

613

۲۲تا۲۸محرم الحرام۱۴۳۸ھ   بمطابق ۱۳تا۱۹اکتوبر۲۰۱۷ء

چین میں مسلمانوں پر مظالم کی داستان (محمد نجیب قاسمی)

چین میں مسلمانوں پر مظالم کی داستان

محمد نجیب قاسمی (شمارہ 613)

چین اِن دِنوں ایک بار پھر سرخیوں میں ہے کیونکہ اس نے حال ہی میں اپنی تنگ نظری کے تحت مسلمانوں کو قرآن کریم اور جانماز حکومتی اداروں کے پاس جمع کرانے کا ظالمانہ حکم جاری کیا ہے۔ تاریخ شاہد ہے کہ چین اپنے ظالمانہ کردار کو دنیا کے سامنے ہمیشہ چھپانے کی کوشش کرتا رہا ہے، چنانچہ اس وقت بھی اس نے عالمی میڈیا پر ہی غلط بیانی کا الزام عائد کیا ہے، حالانکہ چین کی ظالمانہ پالیسی کو پوری دنیا حتی کہ چین کے باشندے بھی کبھی نہیں بھول سکتے۔ ۳ ؍اور ۴ جون ۱۹۸۹ء کو رونما ہونے والے اُس واقعہ کے عینی شاہدین آج بھی دنیا میں موجود ہیں جب چین کی حکومت کے خلاف بیجنگ شہر کے مشہور چوک پر طلبہ نے مظاہرہ کیا تھا ،جو اُن کا قانونی حق تھا، تو چین کی فوج نے حکومت کے اشارہ پر بندوقوں اور ٹینکوں کے ذریعہ پُرامن مظاہر کرنے والے اپنے ہی ملک کے ہزاروں طلبہ کو موت کے گھاٹ اتار دیا تھا۔ تائیوان اور تبت پر ابھی تک ناجائز قبضہ چین کے ظالم ہونے کی کھلی دلیل ہے۔ اسی طرح چین ہندوستان کے ’’اکسائی چن‘‘ پر قبضہ کیے ہوئے ہے اور اپنی ہٹ دھرمی دکھاکر وقتاً فوقتاً سرحد پر کشیدگی پھیلاتا رہتا ہے۔چند ماہ قبل بھی چین کے سخت رویہ سے ہندوستان اور چین کے درمیان کشیدگی میں اضافہ ہی ہوا تھا۔ مسلمانوں پر تو چین کے مظالم کی ایک طویل داستان ہے، جس کی خبریں وہ دو ہزار کیلومیٹر پر محیط دیوار چین کے باہر جانے سے روک دیتا تھا، مگر سوشل میڈیا اور الیکٹرونک میڈیا کے زمانہ میں چین کی طرف سے مسلمانوں پر ہورہے مظالم کی خبریں وقتاً فوقتاً سامنے آتی رہتی ہیں۔ سینکڑوں سال کی تاریخ شاہد ہے کہ چین نے ہمیشہ مسلمانوں پر ظلم وستم کے پہاڑ توڑے ہیں۔ آئیے چین میں مظلوم مسلمانوں کے حالات سے آگاہی حاصل کریں کیونکہ دنیا کے لیے باعث رحمت حضور اکرم ﷺ نے ارشاد فرمایا: ایک مسلمان دوسرے مسلمان کا بھائی ہے۔ (بخاری) اسی طرح فرمان رسول ﷺ ہے: مؤمنین کی مثال ان کی دوستی، اتحاد اور شفقت میں بدن کی طرح ہے۔ بدن میں سے جب کسی حصہ کو تکلیف ہوتی ہے تو سارا بدن نیند نہ آنے اور بخار چڑھ جانے میں اس کا شریک ہوتا ہے۔ (مسلم)

آج سے تقریباً ۱۴۰۰ سال قبل ۲۹ ہجری میں چین میں اسلام کا پیغام اُس وقت پہنچا جب تیسرے خلیفہ حضرت عثمان بن عفان رضی اللہ عنہ نے دین اسلام کا پیغام پہنچانے کی غرض سے ایک وفد چین ارسال کیا تھا۔ اس کے بعد بھی وفود بھیجنے کا سلسلہ جاری رہا۔ نیز اس دوران مسلمانوں نے تجارت کی غرض سے بھی چین کے سفر کیے۔ اس طرح چین کے بعض علاقوں میں لوگوں نے دین اسلام کو ابتداء اسلام سے ہی قبول کرنا شروع کردیا تھا۔ بعد میں چین کے بیشتر علاقوں میں دین اسلام کو ماننے والے موجود ہوگئے۔ مشرقی ترکستان (سنکیانگ) جس پر چین نے آج تک قبضہ کررکھا ہے، کو اموی خلیفہ ولید بن مالکؒ کے دور میں قتیبہ بن مسلم الباہلی ؒ نے ۹۳۔۹۴ھ میں فتح کیا تھا۔ مشرقی ترکستان (جو اِس وقت چین کے قبضہ میں ہے) میں طویل عرصہ تک مسلمانوں کی حکومت رہنے کی وجہ سے اس علاقہ کی بڑی تعداد مسلمان ہے، لیکن ۱۶۴۴ء میں مانچو خاندان کے قبضہ کے بعد سے مسلمانوں کے حالات خراب ہوگئے۔ ۱۶۴۸ء میں پہلی مرتبہ اس علاقہ کے باشندوں نے مذہبی آزادی کا مطالبہ کیا جو قانونی طور پر اُن کا حق تھا، جس کی بنا پر ہزاروں مسلمانوں کا قتل عام کیا گیا۔ ۱۷۶۰ء میں چین نے مشرقی ترکستان پر قبضہ کرکے ہزاروں مسلمانوں کو شہید کیا۔بعض علاقوں میں مسلسل بیس روز تک جنگ چلی۔ ۱۹۴۹ء میں چین پر کمونیسٹ پارٹی کے اقتدار میں آنے کے بعد سے چین خاص کر مشرقی ترکستان میں مسلمانوں کی مذہبی آزادی پر پابندی عائد کردی گئی۔ ان کے دینی اداروں کو بند کردیا گیا۔ مساجد فوج کی رہائش گاہ بنا دی گئیں۔ ان کی علاقائی زبان کو ختم کرکے چینی زبان اُن پر تھوپ دی گئی۔ شادی وغیرہ سے متعلق تمام مذہبی رسومات پر پابندی عائد کردی گئی۔ کمیونسٹوں کا ایک ہی ہدف رہا ہے کہ قرآن کریم کی تعلیمات کو بند کیا جائے، حالانکہ قرآن کریم انسانوں کی ہدایت کے لیے ہی نازل کیا گیا ہے۔ چین کے مسلسل مظالم کے باوجود اس علاقہ کے مسلمان اپنی حد تک اسلامی تعلیمات پر عمل کرنے کی کوشش کرتے رہے ہیں۔ ۱۹۶۶ء میں جب مسلمانوں نے کاشغر شہر میں عید الاضحی کی نماز پڑھنے کی کوشش کی تو چین کی فوج نے اعتراض کیا اور گولیاں برساکر ہزاروں مسلمانوں کو شہید کردیا۔ جس کے بعد پورے صوبہ میں انقلاب برپا ہوا، اور چین کی فوج نے حسب روایت مسلمانوں کا قتل عام کیا، جس میں تقریباً ۷۵ ہزار مسلمان شہید ہوئے۔

غرضیکہ چین نے مسلمانوں کی کثیر آبادی والے علاقہ ’’مشرقی ترکستان‘‘ پر ناجائز قبضہ کرکے پیٹرول، کوئلے اور یورینیم کے ذخائر کو اپنے قبضہ میں کر رکھا ہے۔ اور وقتاً فوقتاً وہاں کے مسلمانوں پر مظالم ڈھاتا رہتا ہے۔ مسلمانوں کی اجتماعیت کو تقریباً ختم کردیا ہے۔ لاکھوں افراد کو اب تک قتل کیا جاچکا ہے۔ حال ہی میں یہ فرمان جاری ہوا ہے کہ مسلمان اللہ تعالیٰ کی کتاب اور نماز پڑھنے کے لیے جانماز کو بھی اُن کے حوالے کردیں، یعنی اپنے گھر میں انفرادی عبادت بھی نہ کریں، جو عالمی قوانین کے بھی سراسر خلاف ہے۔ اس وقت چین میں بڑی تعداد لا مذہب کی ہے، یعنی وہ کہتے ہیں کہ بلّی، کتے اور بندر کی طرح انسان کی پیدائش کا کوئی مقصد ہی نہیں ہے، یعنی جو چاہے جس پر ظلم کرے، جو چاہے جس کا مال چرائے، جس کو چاہے نا حق قتل کردے، مرنے کے بعد کوئی دوسری زندگی نہیں ہے اس لیے اس کی کوئی پکڑ نہیں ہوگی۔ حالانکہ عقل سے بھی سوچنا چاہئے کہ ہمارا ایک چھوٹا سا کام بھی کسی مقصد کے بغیر نہیں ہوتا ہے، نیز گھر، خاندان، صوبہ اور ملک کے نظام کو چلانے کے لیے ایک طاقت درکار ہوتی ہے۔ تو دنیاکا اتنا بڑا نظام خود بخود کیسے چل سکتا ہے؟ سورج کا اپنے وقت پر طلوع ہونا اور غروب ہونا، کروڑہا کروڑ ستاروں کا نکلنا، دنیا کے تین چوتھائی حصہ میں پانی کا ہونا، ہواؤں کا چلنا کسی طاقت کے بغیر کیسے وجود میں آگئے؟ زمین کے اندر طرح طرح کے ذخائر کہاں سے آگئے؟ زمین میں پیداوار کی صلاحیت کہاں سے پیدا ہوگئی؟  ظاہر ہے کہ اتنے بڑے نظام کے چلنے چلانے کا آخر کوئی تو مقصد ہونا چاہئے۔ اور اتنا بڑا نظام خود بخود کیسے اور کیوں چل سکتا ہے؟ خالق، مالک ورازق کائنات کا ارشاد ہے: بیشک وہ لوگ جنہوں نے کفر اپنا لیا ہے۔ اُن کے حق میں دونوں باتیں برابر ہیں، چاہیں آپ ان کوڈرائیں یا نہ ڈرائیں، وہ ایمان نہیں لائیں گے۔ اللہ نے اُن کے دلوں پر اور ان کے کانوں پر مہر لگا دی ہے۔ اور اُن کی آنکھوں پر پردہ پڑا ہوا ہے، اور اُن کے لیے زبردست عذاب ہے۔ (سورۃ البقرۃ ۶ و ۷)  مسلمانوں کو ناامید نہیں ہونا چاہئے کیونکہ اللہ تعالیٰ ہمارے ساتھ ہے ، ہاں اپنی ذات سے شریعت اسلامیہ پر عمل کرتے ہوئے دنیا کے مختلف حصوں میں آباد مسلمان خاص کر چین اور برما کے مظلوم مسلمانوں کو اپنی خصوصی دعاؤں میں یاد رکھیں۔

٭…٭…٭

رنگین صفحات کے مضامین

  • رنگ و نور ۔ سعدی کے قلم سے
  • Rangonoor English
  • Message Corner
  • رنگ و نور پشتو ترجمہ
  • کلمۂ حق ۔ مولانا محمد منصور احمد
  • السلام علیکم ۔ طلحہ السیف
  • قلم تلوار ۔ نوید مسعود ہاشمی
  • نقش جمال ۔ مدثر جمال تونسوی
  • سوچتا رہ گیا ۔ نورانی کے قلم سے

Alqalam Latest Epaper

Alqalam Latest Newspaper

  • القلم کے گذشتہ شمارے و مضامین
  • کارٹون
TAKWIR Web Designing (www.takwir.com) Copyrights Alqalam Weekly Online