Bismillah

694


۱۰رمضان المبارک۱۴۴۰ھ

قادیانیوں کی چالبازیاں (نقش جمال ۔ مدثر جمال تونسوی)

Naqsh-e-Jamal 603 - Mudassir Jamal Taunsavi - qadiyanion-ki-chalbazi

قادیانیوں کی چالبازیاں

نقش جمال .مدثر جمال تونسوی (شمارہ 603)

جب بھی کسی اسلامی ملک میں سیاسی حالات خراب اور امن و امان کی صورت حال بگڑتی ہے تو قادیانیت کے چیلے اس پر بہت خوش ہوتے ہیں اور وہ ایسے مواقع کی تلاش میں رہتے ہیں تاکہ ان بگڑے حالات میں وہ اپنی سرگرمیاں شروع کریں کیوں کہ ایسے حالات میں اپنی سرگرمیاں چھپ چھپا کر جاری رکھنا ان کے لیے کافی آسان ہو جاتا ہے۔

قادیانیوں کی شر انگیزیوں اور سادہ لوح لوگوں کو پھنسانے کی چال بازیوں کے مختلف حربے ہیں۔ اسی بارے میں میرے پاس واٹس اپ پر ایک بہت ہی مفید تحریر پہنچی ہے جسے افادۂ عام، رد قادیانیت اور تحفظ ختم نبوت کے نظریے سے میں اپنے آج کے کالم کا حصہ بنا رہا ہوں۔ ملاحظہ فرمائیے!

قادیانی مرد یا عورت جہاں بھی ہوں اپنے مذھب کی تبلیغ ضرور کرتے ہیں۔ اپنے بندے باہر بھیجنے کیلئے دھماکہ خیز حالات پیدا کر دیتے ہیں۔ پاکستانی انٹیلیجنس اس سے واقف ہے کاش یہ لوگ ان کے کرتوتوں کو اجاگرکریں۔

1) اخلاق سے: یہ اخلاق صرف ان سے برتتے ہیں جو ان کے عقائد سے واقف نہ ہوں۔ جیسے ٹورنٹو (کنیڈا) گیا تو میری ایک عزیزہ نے بتایا کہ ہمارے اوپر احمدی رہتے ہیں میں جب بھی سامنے مارکیٹ میں جاتی ہوں وہ میرے ساتھ جاتی ہے میرا کچھ سامان بھی اٹھالاتی ہے اور مجھے اپنے فرقے احمدیت کے بارے میں بھی بتاتی ہے۔ اسطرح وہ اس مسلمان عورت کو آہستہ آہستہ قادیانیت کا زہر دے رہی تھی۔ یہ ان کا طریقہ کار ہے۔

2) لڑکیوں کے ذریعے: سکولوں، کالجوں اور جاب وغیرہ پر لڑکیاں لڑکوں کے پیچھے لگ جاتی ہیں۔ میں بہت سے ایسے مسلمانوں کو جانتا ہوں جنہیں لڑکیاں اپنے مذھب میں لے گئیں۔ میں دعوت کے سلسلہ میں چناب نگر (ربوہ) گیا تو مجھے ان کا بیرون ملک جماعت کا امیر ملا جو میرے زور دینے پر مان گیا کہ اسے ایک لڑکی نے احمدی بنایا جو آج اس کی بیوی ہے۔

ڈنمارک، جرمنی، بیلجیم، لندن وغیرہ کے علاوہ میں پاکستان میں بھی ایسے لوگوں کو جانتا ہوں جنہیں لڑکیاں کھینچ کر قادیانیت کے جہنم میں لے گئیں۔ اس کے برعکس اگر انہیں پتہ چلے کہ کسی مسلمان لڑکی کا اپنے گھر والوں سے کچھ تنازعہ ہے تو اس کے پیچھے پڑکر بھی اسے مدد کرنے کے بہانے سے گھر سے نکال کر آہستہ آہستہ اسے قادیانی بنالیتی ہیں۔ اس کی شادی کرا دیتی ہیں پھر یہ ادھر کی رہتی ہے نہ ادھر کی، اسے کچھ عرصہ کے بعد جب غلطی کا احساس ہوتا ہے تو پھر اسے والدین قبول نہیں کرتے، اس کی زندگی تباہ ہوجاتی ہے۔

3) غیرقانونی طور پر بیرون ملک لوگوں کو پھانسنا: بعض لوگ ایجنٹوں کے ذریعے یا غلط طریقوں سے بیرون ملک آ کر پھنس جاتے ہیں اور ان کا شکار بن جاتے ہیں۔ یہ انہیں قانونی تحفظ فراہم کرنے کیلئے قادیانیت قبول کرنے پر مجبور کرتے ہیں کیونکہ ان کا پولیس کے ساتھ ہمہ وقت رابطہ ہوتا ہے۔ اس لئے اسے احمدی ظاہر کرکے اس کے ویزہ، جاب اور شادی کا مسئلہ بھی حل کرا دیتے ہیں۔

4) روزگار اور پیسے کا لالچ: پاکستان میں غربت انتہا پہ ہے جس کا قادیانی فائدہ اٹھاتے ہیں۔ لوگوں کو پیسوں، شادی، روزگار اور بیرون ملک بھیجنے کیلئے ویزہ کا لالچ دیتے ہیں شرط صرف قادیانی بننا ہوتی ہے جب انہیں یقین ہوجائے کہ یہ پکا قادیانی بن گیا ہے تو اسے باہر  بھیج دیتے ہیں۔

میں پاکستان گیا ہواتھا کہ ہمارے ہاتھ ایک قادیانی امیر کا خط لگ گیا جو اس نے جرمنی کے قادیانی امیر کو لکھا تھا۔ میں یہ خط پڑھ کر کانپ گیا تھا کہ یہ کس طرح نوجوانوں کو ورغلاکر بیرون ملک بھیجتے ہیں اور کس طرح مولوی حضرات اور پیروں کے ساتھ اپنے بندے لگا کر انہیں آپس میں لڑاتے ہیں کاش ہم ان کا یہ دھوکہ سمجھ جائیں اور ان کے اس جال میں پھنسنے سے بچ جائیں۔

5) علماء سے متنفر کرنا: عوام کو علماء نے ہی قادیانی فتنہ سے آگاہ کیا ہے۔ اس لئے قادیانی سب سے پہلے علماء کے خلاف زہریلا پروپیگنڈہ کرکے انہیں علماء سے دور کرتے ہیں تاکہ انہیں قادیانیت کے بارے میں مزید معلومات مہیا نہ ہوسکیں اور ان کا تر نوالہ بن سکیں۔

6) ابتدا میں قادیانی اختلافی بات نہیں کرتے میرے ساتھ کام کرنے والا ایک مراکشی عرب 22 سال ان کی مسجد میں نماز پڑھتا رہا، میں نے اسے ان کا بتایا تو بے حد  پچھتایا۔

7) یہ پہلے مرزا قادیانی کو ایک امام کی حیثیت سے پیش کرتے ہیں۔ آہستہ آہستہ امام مہدی کی حیثیت سے پیش کرتے ہیں۔ یہ بات مجھے سابقہ قادیانیوں نے بتائی۔ پاکستانی قومی اسمبلی میں یہ لوگ ننگے ہوئے اور مرزاقادنی کی نبوت اور نظریات کا لوگوں کو پتہ چلا۔ جب مرزا طاہر بھاگ کر لندن آیا تو اس نے اعلان کیا کہ اب ہمیں کھل کر مرزاقادیانی کی نبوت کا پرچار کرنا چاہئیے۔

8) یہ لوگ مقامی لوگوں سے رابطہ رکھتے ہیں اور کرسمس کے موقع پر مسیحیوں کو بلاتے ہیں حالانکہ مرزاقادیانی نے سیدنا عیسیٰؑ کی بہت توہین کی ہے اور مسلمانوں کو یہ حقیقت یورپین کے سامنے رکھنی چاہئے۔

9) میرا ذاتی تجربہ ہے کہ قادیانیوں کے پاس مرزاقادیانی کی کتابیں نہیں ہوتیں۔ وہ سنی سنائی باتیں کرتے ہیں نہ ہی انہوں نے مرزاقادیانی کی کتابوں کا ترجمہ کسی اور زبان میں کیا ہے تاکہ قادیانیت دنیا کے سامنے ننگی نہ ہوجائے۔

10) یہ خود کو پرامن مسلمان ظاہر کرتے ہیں ((Muslims for Peace تاکہ دنیا یہ سمجھے کہ دوسرے مسلمان دھشت گرد ہیں۔

11) یہ سیاست میں حصہ لیتے ہیں لیکن خود کو ظاہر نہیں کرتے۔

12) کافی قادیانیوں کو احساس ہوگیا ہے کہ احمدیت ایک غلط مذہب ہے اور وہ اس میں پھنسے ہوئے ہیں وہ اسے چھوڑنا چاہتے ہیں لیکن رشتہ داریاں ان کے آڑے آجاتی ہیں۔ اگر وہ ذرا سی بھی بغاوت کریں تو ان کا بائیکاٹ کردیا جاتا ہے ۔

٭…٭…٭

رنگین صفحات کے مضامین

  • رنگ و نور ۔ سعدی کے قلم سے
  • Rangonoor English
  • Message Corner
  • رنگ و نور پشتو ترجمہ
  • کلمۂ حق ۔ مولانا محمد منصور احمد
  • السلام علیکم ۔ طلحہ السیف
  • قلم تلوار ۔ نوید مسعود ہاشمی
  • نقش جمال ۔ مدثر جمال تونسوی
  • سوچتا رہ گیا ۔ نورانی کے قلم سے

Alqalam Latest Epaper

Alqalam Latest Newspaper

  • القلم کے گذشتہ شمارے و مضامین
  • کارٹون
Rangonoor Web Designing Copyrights Khabarnama Rangonoor