Bismillah

656

۲۸ذوالقعدہ تا ۴ ذوالحجہ ۱۴۳۹ھ  بمطابق    ۱۷تا۳۰اگست۲۰۱۸ء

قرآن کی جہادی بہاریں (نقش جمال ۔ مدثر جمال تونسوی)

Naqsh-e-Jamal 640 - Mudassir Jamal Taunsavi - Quran ki Jihadi Baharein

قرآن کی جہادی بہاریں

نقش جمال .مدثر جمال تونسوی (شمارہ 640)

ایک بات یہ اچھی طرح ذہن نشین رہے کہ اللہ تعالیٰ کے ہاں اسلام اور ایمان کی بڑی قیمت ہے۔ لاالہ الا اللہ محمد رسول اللہ کا کلمہ بہت وزنی اور بہت قیمتی ہے۔ چنانچہ اگر دومسلمان فرد یا دو مسلمان گروہ آپس میں لڑتے ہیں، خواہ کسی بھی غرض اور مفاد کی خاطر ، مگر وہ ایک دوسرے کا خون حلال اور جائز نہیں سمجھتے تو آخرت میں ان دونوں کا انجام بہر حال دخولِ جنت ہے خواہ اپنے ان جرائم کی وجہ سے انہیں کتنی ہی سزا یا عذاب سہنا پڑے مگر اسلام اور ایمان انہیں بہر حال کفار سے دور لے جائے گا اور ایسا ہرگز نہیں ہوگا کہ یہ ایمان والے اور کافر ہمیشہ ایک ہی جگہ اور ایک ہی عذاب میں رہیں۔ یہ اللہ تعالیٰ کا ضابطہ اور فرمان ہے جو اس نے اپنے نبیوں اور کتابوں کے ذریعے انسانوں کا بتادیاہے اور سمجھا دیا ہے۔

اس کے برخلاف جب ایک طرف مسلمان ہوں اور دوسری جانب کافر، اور ان دونوں فریقوں کی آپس میں لڑائی ہو تو ان دونوں کے انجام کار میں بہر حال فرق ہوگا۔ ایمان والوں کا ٹھکانہ جنت ہے اور کافروں کا ٹھکانہ جہنم ہے۔

اس لیے اگرچہ مسلمانوں کی باہمی لڑائیاں پسندیدہ نہیں ہیں مگر مسلمانوں کی باہمی لڑائیوں کو کفار کے ساتھ جنگ کے برابر سمجھنا اور دونوں کو ایک ہی نظر سے دیکھنا بھی درست نہیں ہے۔ دونوں لڑائیوں کے نتائج اور انجام میں جس قدر فرق ہے اسے بہر حال ملحوظ رکھنا چاہئے اوریہ بھی یاد رکھنا چاہئے کہ اللہ تعالیٰ نے اس کائنات کو ہی سب کچھ نہیں بنایا، بلکہ اس زندگی کے بعد ایک اور زندگی بھی رکھی ہے اور اس زندگی کے معاملات اِس زندگی کے معاملات سے بہت مختلف ہوں گے۔

مسلمانوں کی آپس میں لڑائی ہوتو دعاء کے الفاظ یوں سکھائے گئے:

اللھم اصلح ذات بینہم

اے اللہ! ان کے درمیان صلح پیدا فرمادیجیے۔

اور مسلمانوں پر کافروں کی طرف سے لڑائی مسلط ہوتو دعاء کے الفاظ یوں سکھائے گئے:

اللہم اہلک الکفرۃ الذین یصدون عن سبیلک و یکذبون رسلک و یقاتلون اولیاء ک

اے اللہ! ان کافروں کو تباہ فرما، جو تیرے راستے سے روکتے ہیں، جو تیرے رسولوں کو جھٹلاتے ہیں اور جو تیرے دوستوں سے جنگ کرتے ہیں۔

٭…٭…٭

اِن دِنوں ملک بھر میں ’’دورات تفسیر‘‘ کا سالانہ سلسلہ خیر و خوبی کے ساتھ جاری ہے۔ الحمد للہ

ہمارے ملک میں ہی نہیں بلکہ دیگر بھی کئی اسلامی ممالک میں مختلف نوعیتوں کے’’دورات تفسیر ‘‘کے سلسلے جاری رہتے ہیں اور اللہ کرے یہ سلسلے مفید سے مفید تر انداز میں جاری رہیں اور امت مسلمہ ان سے مستفید ہوتی رہے۔

البتہ مجلس دعوۃ القرآن کے زیر اہتمام ہمارے ملک میں جو دورات تفسیر پڑھائے جاتے ہیں ان کی نوعیت دیگر تمام دورات سے کافی مختلف اور منفرد ہے۔ ان دورات تفسیر میں ایک ہی مستقل موضوع پرقرآنی آیات کا ترجمہ و تفسیر پڑھایا جاتا ہے، اور یہ موضوع ہے : جہاد فی سبیل اللہ

’’جہاد ‘‘دین اسلام کا بلند ترین شعبہ اور چوٹی والا حصہ ہے اور اس سے جہاد کی جو اہمیت واضح ہوتی ہے وہ بھی بالکل عیاں ہے۔

جہاد: اسلام کی روح ہے

جہاد: اسلام کی پہچان ہے

جہاد:اسلام کا امتیازی نشان ہے

جہاد: اسلام کی خصوصی شان ہے

 اسلام میں سے جہاد کو نکال دیا جائے یا ختم کردیاجائے یا معطل کردیاجائے تو سمجھو اسلام کی روح نکال لی گئی۔ اسلام کی پہچان الگ کر لی گئی ۔ اسلام کا امتیاز مٹاڈالا گیا اور اسلام کی خصوصی شان چھین لی گئی ۔ اب خود ہی سوچئے کہ اس کے بعد پھر اسلام کے دامن میں کیا بچتا ہے؟

آج جہاد کے خلاف جتنی بھی سازشیںہو رہی ہیں ، غیروں کی عیاری اور اپنوں کو سادگی اور کج فہمی سے جہاد کے سامنے جتنے بھی بند باندھے جارہے ہیں ان سب کا مقصد یہی ہے کہ ’’اسلام‘‘ کو ایک ’’بے دست و پا‘‘ دین بنادیاجائے۔ ایسا دین جس کی دعوت کی پشت پر بھی قوت نہ ہواور جس کے دفاع کے لیے بھی کوئی مزاحمت نہ ہو۔ چنانچہ آج دیکھا جا سکتا ہے کہ اسلام اور مسلمان ایک لاوارث قوم کی طرح نظر آتے ہیں۔ اسلام اور قرآن کی شان میں کوئی گستاخی کرتا ہے تو بھی اس پر کئی قدغن نہیں ہے اور مسلمانوں پر کوئی جارحیت کرتا ہے تو بھی دنیا انہیں اپنے دفاع کے لیے مزاحمت اختیار کرنے کی اجازت دینے کو تیار نہیں ہے۔

امت مسلمہ کو جہاد سے دور رکھنے کے لیے کئی حربے استعمال کیے جارہے ہیں اور اسے کئی خود ساختہ پابندیوں سے جکڑنے کے لیے داؤ و پیچ لگائے جارہے ہیں۔ مگر ان سب کا ایک بہت ہی مضبوط توڑ ہے اور وہ ہے قرآن کریم کا نظریہ جہاد

قرآن کریم جہاد کے تمام ابواب کی بنیاد خود مضبوط کرتا ہے، اور تمام اہم مسائل کے لیے اساسی ہدایات خود فراہم کرتا ہے اور یہ ایسا امتیاز ہے جو صرف اسے ہی حاصل ہے۔ قرآن کریم توحید کا پیغام دیتا ہے تو ساتھ ہی یہ ہدایت بھی کرتا ہے جو قوم اس توحید کی راہ میں رکاوٹ ہو اسے جہاد سے زیر کرو گویا جہاد توحید کا پشتیبان ہے۔ قرآن کریم رسولوں کی آمد اوران کے مقاصد بتلاتا ہے تو اس میں یہ بھی صاف دِکھلاتا ہے کہ اللہ تعالیٰ کے نبی اور رسول اُس کی راہ میں جہاد کرتے رہے ہیں ،تاکہ نبوت و رسالت پر ایمان رکھنے والوں کے لیے جہاد فقط ایک فکری نظریہ اور محض ڈائیلاگ بازی کا کھیل نہ بن جائے بلکہ یہ بات صاف رہے کہ جہاد عمل کی چیز ہے اور یہ میدان عمل میں کود کر ہی سرانجام دیاجاتا ہے۔ جہاں زخم لگتے ہیںاور کوئی مصیبتوں کا سامنا کرنا پڑتا ہے اور پھر کامیابی انہیں کو ملتی ہے جو ان مصیبتوں کو سہتے ہیں، مصیبتوں کے سامنے کمزور نہیں پڑتے،اور جھک نہیں جاتے بلکہ صبر سے کام لیتے ہوئے راہ جہاد میں ثابت قدم رہتے ہیں۔ پھر قرآن کریم عقیدہ آخرت کی اہمیت بتلاتا ہے تو وہاں بھی یہ صاف صاف دِکھلاتا ہے کہ جہاد کرنے والے اور جہاد نہ کرنے والے اُس دن برابر نہیں ہوں گے۔ جہاد میں سختیوں سہنے والے اور اُن سختیوں سے جی چُرانے والے یکساں نہیں ہوں گے۔ قرآن عقیدہ آخرت بتلا کر جہاد کی سختیوں کو آسان بناتا ہے، اور جہاد کی سختیاں دِکھا کر کافروں کے لیے پیغام چھوڑتا ہے کہ اگر تم جہاد کی بنیاد پر پہنچنے والی مصیبتوں سے ڈرتے ہو تو سوچو کہ کفر کی وجہ سے جو جہنم میں جانا پڑے گا تو اس کی مصیبتوں کو کس طرح جھیلوگے؟؟

الغرض جہاد کرنا، جہاد کا شوق رکھنا، جہاد کے لیے بے چین رہنا، جہاد کی تیاری میں لگناہی ایک مسلمان اور ایک مومن کی شان ہے ۔ جب کہ جہاد نہ کرنا، جہاد کا شوق نہ رکھنا، جہاد سے جی چُرانا، جہاد میں جانے والوں کے راستے میں روڑے اَٹکانا، جہاد میں مسلمانوں کا ساتھ دینے کے بجائے کافروں سے یاریاں لگانا، کافروں کا ساتھ دینا، مسلمانوں کی جاسوسیاں کرکے کافروں کو معلومات فراہم کرنا یہ سب باتیں ایک منافق کا شیوہ اورمنافق کی پہچان ہیں۔ ہمیں اپنی جان و مال اور زبان سے جہاد جاری رکھنے کا حکم دیا گیا ہے اور ہم اسی حکم کو پورا کرنے کے پابند ہیں۔

آپ بھی اگر اس حکم کو پورا کرنا چاہتے ہیں تو آئیے ان دورات تفسیر آیات جہاد میں بھرپور شرکت کیجیے تاکہ یہ حکم شرعی پوری طرح سمجھ بھی سکیں اور عمل میں بھی لاسکیں!!

٭…٭…٭

رنگین صفحات کے مضامین

  • رنگ و نور ۔ سعدی کے قلم سے
  • Rangonoor English
  • Message Corner
  • رنگ و نور پشتو ترجمہ
  • کلمۂ حق ۔ مولانا محمد منصور احمد
  • السلام علیکم ۔ طلحہ السیف
  • قلم تلوار ۔ نوید مسعود ہاشمی
  • نقش جمال ۔ مدثر جمال تونسوی
  • سوچتا رہ گیا ۔ نورانی کے قلم سے

Alqalam Latest Epaper

Alqalam Latest Newspaper

  • القلم کے گذشتہ شمارے و مضامین
  • کارٹون
TAKWIR Web Designing (www.takwir.com) Copyrights Alqalam Weekly Online