Bismillah

668

۷تا۱۳ربیع الاول۱۴۴۰ھ  بمطابق       ۱۶تا۲۲نومبر۲۰۱۸ء

خونریز معرکے، گرنیڈ حملوں میں8 انڈین فوجی واصل جہنم، متعدد شدید زخمی،مجاہد سمیت 9 کشمیری شہید

(شمارہ 657)

خونریز معرکے، گرنیڈ حملوں میں8 انڈین فوجی واصل جہنم، متعدد شدید زخمی،مجاہد سمیت 9 کشمیری شہید

ککرناگ میں مجاہدین کی موجودگی پرقابض فورسز کا سرچ آپریشن، مکان مورچہ زن مجاہدین جیش نے 5 انڈین فوجیوں کو بھون ڈالا، 2 شدید زخمی
ایک مجاہد جام شہادت نوش کرگیادیگر5 ساتھی بحفاظت بچ نکلنے میں کامیاب،سینکڑوں افراد مجاہد ین کے حمایت میں سڑکوں پر نکل آئے ،فورسز پر پتھراؤ
سرینگر نیو بائی پاس پر قائم سی آر پی ایف ناکے پر مجاہدین جیش کا گرنیڈ حملہ، متعدد اہلکار زخمی،بارہمولہ اور کپواڑہ میں فرضی آپریشن میں4 نوجوان شہید
حریت رہنماعلی گیلانی نظربند،مسلسل 20ویں مرتبہ نمازعید نہ پڑھنے دی گئی،بھارتی فوج کا بڈگام کی مسجد پر حملہ،دفعہ 35 کی ممکنہ منسوخی کیخلاف مظاہرے

سرینگر(نیٹ نیوز) مقبوضہ کشمیر میںخونریز معرکے، گرنیڈ حملوں، بارودی سرنگ دھماکوں میں 8 انڈین فوجی واصل جہنم ، متعدد شدید زخمی ہوگئے جبکہ ایک مجاہد سمیت 9 کشمیری شہید  ہوگئے،ککرناگ میں مجاہدین کی موجودگی پرقابض فورسز کا سرچ آپریشن، مکان میں مورچہ زن مجاہدین جیش نے 5 انڈین فوجیوں کو بھون ڈالا، 2 شدید زخمی، ایک مجاہدین نے جام شہادت نوش کیا جبکہ 5 بحفاظت بچ نکلنے میں کامیاب ہوگئے،سرینگر نیو بائی پاس پر قائم سی آر پی ایف ناکے پر مجاہدین جیش کا گرنیڈ حملہ،متعدد اہلکار شدید زخمی،بھارتی یوم آزادی کے موقع پر بدھ کے دن مقبوضہ کشمیر میں یوم سیاہ منایا گیااور سری نگر سمیت دیگر شہروں و علاقوں میں زبردست احتجاجی مظاہرے کئے گئے جن میں ہزاروں کشمیریوں نے شرکت کی،دفعہ 35 اے کی ممکنہ منسوخی ،کشمیر کی خصوصی حیثیت ختم کرنے کی کوششوں کیخلاف وادی بھر میں زبردست احتجاجی مظاہرے جاری۔ تفصیلات کے مطابق ککرناگ میں قابض بھارتی فوج اور مجاہدین کے درمیان ہونے والے معرکے میں جیش محمدﷺسے وابستہ مجاہد شہید ہو گیا جبکہ مجاہدین نے دعویٰ کیا ہے کہ اس معرکے میں قابض بھارتی فوج کے 5 اہلکار ہلاک اور2  زخمی ہوئے ہیں تاہم قابض بھارتی فوج نے اپنا کسی بھی قسم کا نقصان ظاہر نہیں کیا۔ ذرائع کے مطابق  رات کے وقت  قابض بھارتی فوج نے مجاہدین کی موجودگی کی اطلاع ملنے پر علاقے کو گھیرے میں لے کر تلاشی کارروائی شروع کی ۔ جونہی تلاشی کارروائی شروع ہوئی تو وہاں ایک مکان میں موجود مجاہدین نے بھارتی فوج کے اہلکاروں پہ گولیاں  برسانا شروع کر دیں۔ بھارتی فوج نے مزید کمک منگوائی اور خاردار تاریں بچھا کر علاقے میں آمد ورفت کو مکمل طور پہ بند کر دیا۔ اس دوران عوام مجاہدین کی حمایت میں نکل آئے اور بھارتی فوج کے اہلکاروں پر پتھراؤ شروع کر دیا۔ قابض بھارتی فوج نے عوام کو منتشر کرنے کے لئے آنسو گیس کی شیلنگ کی جس کی وجہ سے کئی لوگ زخمی ہو گئے۔ زخمیوں میں سے2  کو تشویشناک حالت میں علاج کے لئے سری نگر منتقل کر دیا گیا۔ قابض بھارتی فوج اور عوام کے درمیان جھڑپوں کا فائدہ اٹھا کر4 سے5  مجاہدین قابض بھارتی فوج کے محاصرے سے نکل گئے جبکہ1 مجاہد شہید ہو گیا۔ محصور مجاہدین کا تعلق جیشِ محمدﷺاور حزب المجاہدین سے تھا۔ معرکہ شروع ہونے کے ساتھ ہی پورے ضلع میں موبائل اور انٹرنیٹ کی خدمات معطل کر دی گئیں جنہیں معرکہ ختم ہونے کے بعد بحال کر دیا گیا۔ادھر سرینگر نیو بائی پاس پر قائم سی آر پی ایف  کے ناکے پر مجاہدین جیش نے گرنیڈ حملہ کیا جس کے نتیجے میں متعدد اہلکار شدید زخمی ہوگئے۔ضلع کپواڑہ میں جھڑپوں کے دوران 4 بھارتی فوج یشدید زخمی ہوگئے۔ ضلع کپواڑہ میں صبح کے وقت مظاہرین حملے میں ایک بھارتی فوجی ہلاک ہو گیا۔کشمیر میڈیا سروس کے مطابق بھارتی فوج کی 32راشٹریہ رائفلز کے اہلکاروں پر اس وقت حملہ کیاگیا جب انہوں نے ضلع میں ہندواڑہ کے علاقے کچلو کرال گنڈ میں تلاشی اور محاصرے کی کارروائی شروع کی۔ حملے میں ایک بھارتی فوجی ہلاک ہو گیا۔ بھارتی فوج نے بدترین ریاستی دہشت گردی جاری رکھتے ہوئے مزید4کشمیریوں کو شہید کر دیا ہے۔ چاروں نوجوانوں کو بارہمولہ اور کپواڑہ میں نام نہاد سرچ آپریشن کے دوران شہید کیا گیا۔ بھارتی دہشت گردی کیخلاف ہزاروں کشمیریوں نے سڑکوں پر نکل کر شدید احتجاج کیا۔بارہمولہ ضلع میں بھارتی فوج نے بدترین دہشت گردی کا ارتکاب کرتے ہوئے مزید 2کشمیری نوجوانوں کو شہید کر دیا جس کے بعد3دن میں شہادتیں 6ہوگئی ہیں۔بارودی سرنگ دھماکے میں بھارتی فوجی ہلاک ہو گیا۔مقبوضہ کشمیر میں سری نگر، پلوامہ، شوپیاں، ترال اور دیگر علاقوں میں عید الاضحی پر بھارت کے خلاف زبردست احتجاجی مظاہرے کئے گئے جبکہ پرجوش کشمیری نوجوانوں کی جانب سے پاکستانی پرچم لہرائے جاتے رہے۔ بھارتی فوج نے نماز عید کے موقع اضافی نفری تعینات کر کے تمام سڑکیں بلاک کر رکھی تھیں تاہم اس کے باوجود کشمیریوں نے تمام پابندیاں پاؤں تلے روند کر احتجاجی مظاہرے کئے۔ اس دوران کشمیریوں کی طرف سے پاکستان زندہ باد، گوانڈیا گو بیک اور ہم کیا چاہتے آزادی کے نعرے لگائے گئے۔ عید الاضحی کے موقع پر مقبوضہ سری نگر سمیت اسلام آباد(اننت ناگ)، شوپیاں،پلوامہ،ترال، بیج بہاڑہ ،کلگام ،گاندربل ،کنگن ،قاضی گنڈ ،کپواڑہ ،ہندوارہ، لنگیٹ،لولاب ،بارہمولہ ،پٹن ،بانڈی پورہ ،حاجن ،بڈگام ،چاڈورہ اور دوسرے علاقوں میں لوگوں نے عید کی نماز ختم ہوتے ہی قابض انتظامیہ کی طرف سے عائد سخت پابندیوں کے باوجود زبردست مظاہرے شروع کر دیے۔حریت کانفرنس جموں کشمیر کے چیئرمین اور بزرگ کشمیری قائد سید علی گیلانی کو بھارتی فوج نے عید پر بھی نظربند رکھا اور مسلسل 20ویں مرتبہ انہیں نماز عید ادا کرنے کی اجازت نہیں دی گئی۔علاوہ ازیں  کپواڑہ ضلع میں بارودی سرنگوں کے دھماکوں میں 1بھارتی فوجی ہلاک اوردوسرا شدید زخمی ہو گیا،یہ دھماکے کپواڑہ کے کیرن سیکٹر میں دو مختلف مقامات پر پیش آئے جبکہ عید پر 3پولیس اہلکاروں کے مارے جانے کا انکشاف ہواہے۔بھارتی فوج نے مقبوضہ کشمیر کے بڈگام ضلع میں جامع مسجد کی بے حرمتی کرتے ہوئے مسجد کے شیشے توڑ ڈالے اور مقامی کشمیریوں کے گھروں میں گھس کر کھڑکیاں، دروازے اور صحنوں میں کھڑی گاڑیوں کی زبردست توڑ پھوڑ کی۔ رات کی اندھیرے میں کی جانے والی اس دہشتگردی میں بھارتی فورسز اہلکاروں نے متعدد کشمیریوں کو وحشیانہ تشدد کا نشانہ بنایا ، زبردست ہوائی فائرنگ کی اور محمد اشرف نامی بے گناہ کشمیری کو گرفتار کر لیا۔

رنگین صفحات کے مضامین

  • رنگ و نور ۔ سعدی کے قلم سے
  • Rangonoor English
  • Message Corner
  • رنگ و نور پشتو ترجمہ
  • کلمۂ حق ۔ مولانا محمد منصور احمد
  • السلام علیکم ۔ طلحہ السیف
  • قلم تلوار ۔ نوید مسعود ہاشمی
  • نقش جمال ۔ مدثر جمال تونسوی
  • سوچتا رہ گیا ۔ نورانی کے قلم سے

Alqalam Latest Epaper

Alqalam Latest Newspaper

  • القلم کے گذشتہ شمارے و مضامین
  • کارٹون
TAKWIR Web Designing (www.takwir.com) Copyrights Alqalam Weekly Online