Bismillah

660

۱۰تا۱۶محرم الحرام۱۴۴۰ھ  بمطابق    ۲۱تا۲۷ستمبر۲۰۱۸ء

غزہ پر بمباری، نہتے مظاہرین پر اسرائیلی فائرنگ سے6 شہید(درجنوں اغوا)

(شمارہ 623)

غزہ پر بمباری، نہتے مظاہرین پر اسرائیلی فائرنگ سے6 شہید(درجنوں اغوا)

بیت المقدس کے معاملے پر امریکا تنہا،ہٹ دھرمی سے قرارداد ویٹو کردی، سلامتی کونسل اجلا س میں فرانس، برطانیہ سمیت 14ملکوں نے قراردادکے حق میں ووٹ دیا
ٹرمپ اعلان کے بعد فلسطینیوں پر نئے مظالم کا سلسلہ شروع،مغربی کنارے اور غزہ بارڈر پر معذور شخص اور 29سالہ نوجوان کو سر میں گولیاں ماری گئیں
جرمنی اور اسپین میں مظاہرے،اسرائیل 1967 کے بعد قبضہ کئے گئے علاقے خالی کرے،محمود عباس،نیتن یاہو کیخلاف جنگی جرائم کا مقدمہ چلانے کا مطالبہ
 اسرائیلی فوج نے غزہ سے راکٹ حملوں کا بہانہ بناکر کیریم شالوم کراسنگ بند کردی ،غزہ میں کھانے پینے کے سامان کے علاوہ ادویات کے بحران کا خدشہ
بیت المقدس میں یہودیوں کیلئے وسیع وعریض معبد کی تعمیرکا انکشاف، 2ہزار مربع میٹر جگہ مختص،اسرائیلی فورسز سے تصادم میں سینکڑوں فلسطینی زخمی ہوگئے

مقبوضہ بیت المقدس(نیٹ نیوز) ٹرمپ اعلان کے بعد اسرائیلی فورسز کی جانب سے فلسطینیوں پر مظالم کا نیا سلسلہ شروع ہوگیا، غزہ پر بمباری اور نہتے مظاہرین پر اسرائیلی فائرنگ سے 6 افرادشہید ہوگئے جبکہ صہیونی فوجی درجنوں نوجوانوں کو اغواء کرکے ساتھ لے گئے، بیت المقدس کے معاملے پر امریکا تنہا رہ گیا،سلامتی کونسل اجلا س میں فرانس، برطانیہ سمیت 14ملکوں نے مصر کی جانب سے پیش کی گئی قراردادکے حق میں ووٹ دیا لیکن اس کے باوجود امریکا نے  بیت المقدس کے معاملے پر ہٹ دھرمی کرتے ہوئے قرارداد ویٹو کردی۔ عرب اراکین نے نیتن یاہو پر جنگی مقدمہ چلانے کا مطالبہ کیا ہے جبکہ  محمود عباس نے کہاکہ 1967 ء کے بعد قبضہ کئے گئے علاقے اسرائیل خالی کردے، ٹرمپ اعلان کے  خلاف جرمنی اور اسپین میں بھی مظاہرے جاری، اسرائیلی فوج نے غزہ سے راکٹ   حملوں کا بہانہ بناکر کیریم شالوم کراسنگ بند کردی ،غزہ میں کھانے پینے کے سامان کے علاوہ ادویات کے بحران کا خدشہ پیدا ہوگیا،بیت المقدس میں یہودیوں کیلئے وسیع وعریض معبد کی تعمیرکا انکشاف، 2ہزار مربع میٹر جگہ مختص،اسرائیلی فورسز سے تصادم میں سینکڑوں فلسطینی زخمی ہوگئے۔تفصیلات کے مطابق  امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی جانب سے مقبوضہ بیت المقدس کو اسرائیلی دارالحکومت تسلیم کئے جانے کے اعلان کے بعد سے احتجاج کرنے والے فلسطینیوں پر اسرائیلیوں کے نئے مظالم کا سلسلہ جاری ہے، نماز جمعہ کے بعد مغربی کنارے اور غزہ بارڈر پر ہونے والی احتجاج کے دوران اسرائیلی فوج نے مزید 4 فلسطینیوں کو شہید کردیا، شہدا میں ایک معذور اور 29 سالہ نوجوان بھی شامل ہے، اسرائیلی فائرنگ سے جھڑپوں میں 80سے زائد فلسطینی زخمی ہیں، ایک ہفتہ سے جاری جھڑپوں میں 8 فلسطینی شہید ہوچکے ہیں جبکہ سیکڑوں فلسطینی گرفتار ہیں۔ ٹرمپ اعلان کے بعد یہودیوں کی شرانگیزیاں اور مظالم جاری ہیں۔درجنوں یہودیوں نے مسجد الاقصیٰ پر دھاوا بول کر صہیونی فورسز کی سرپرستی میں بے حرمتی کی۔ القدس اسلامی انجمن کے ترجمان فراز دبس نے ایک بیان میں کہا کہ 49 یہودی شہریوں نے قبلہ اول کے دروازوں اور صحن میں متعین اسرائیلی پولیس کی نگرانی میں دھاوا بولا۔ عینی شاہدین کے مطابق بعض یہودیوں نے مسجد سے نکلتے وقت یہودی رسومات بھی ادا کیں۔ علاوہ ازیں اسرائیلی فوج نے غزہ پر پھر بمباری کی، جس سے مزید 2 فلسطینی شہید ہو گئے۔ فلسطینی وزارت صحت کے مطابق اسرائیلی طیاروں نے بیت لاہیا میں ایک موٹر سائیکل کو نشانہ بنایا جس پر سوار 2 فلسطینی نوجوان حسن غازی نصر اللہ اور مصطفیٰ مفید السلطان شہید ہوئے۔ اسرائیلی ٹینکوں نے بھی غزہ پر گولہ باری کی۔ فلسطینی مرکز اطلاعات کے مطابق مقبوضہ بیت المقدس کو صہیونی ریاست کا دارالحکومت بنائے جانے کے غیر آئینی اقدام کے خلاف بیت المقدس، مقبوضہ مغربی کنارے اورغزہ کی پٹی میں ہزاروں فلسطینیوں نے احتجاجی مظاہرے جاری رکھے ہوئے ہیں۔ مشتعل مظاہرین اور اسرائیلی فوج کے درمیان کئی مقامات پر جھڑپیں ہوئیں۔سرائیلی پارلیمنٹ میں عرب اراکین نے وزیراعظم بنیامین نیتن یاہو کی حکومت کے خلاف عدم اعتماد کی تحریک پیش کر دی۔خاتون رکن حنین زعبی نے کہا کہ نیتن یاہو کے خلاف ہیگ میں قائم عالمی عدالت میں مقدمہ چلایا جانا چاہیے کیونکہ وہ ایک جنگی مجرم ہیں۔انہوں نے کہا کہ فلسطینی علاقوں پر اسرائیلی قبضہ غیر قانونی اور جنگی جرائم کی بنیاد ہے۔ فلسطین اور مصر نے امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی جانب سے مقبوضہ بیت المقدس کو اسرائیل کا دارالحکومت تسلیم کرنے کا اعلان مسترد کردیا ہے۔اْن کا کہنا تھا کہ مجوزہ آزاد فلسطینی ریاست کا دارالحکومت مشرقی القدس ہو گا۔۔ محمود عباس نے کہاکہ ہمارا مطالبہ ہے کہ اسرائیل جون 1967ء  کی جنگ میں قبضے میں لیے گئے فلسطینی علاقے اور مشرقی القدس خالی کردے۔ یہ علاقے مجوزہ آزاد فلسطینی ریاست کا حصہ ہیں۔ اسرائیلی فوج نے غزہ سے راکٹ حملوں کا بہانہ بناکر کیریم شالوم کراسنگ بند کردی ہے، کیریم شالوم گزرگاہ فلسطینیوں کے روزگار کے لیے اسرائیلی علاقوں میں داخل ہونے کے لیے سب سے اہم گزر گاہ ہے۔ اس گزر گاہ سے غزہ میں اشیائے خوردونوش، ادویات اور دیگر ضروری سامان کی بھی رسد ہوتی ہے۔ اسرائیلی فوج کے ترجمان کا کہنا ہے کہ کیریم شالوم کراسنگ ہر فلسطینی کے لیے بند کردی گئی ہے، صرف انسانی بنیادوں پر ہی کوئی فلسطینی اس راستے سے اسرائیل میں داخل ہوسکے گا اور وہ بھی اعلیٰ ترین عسکری حکام کی اجازت کے بغیر ممکن نہیں ہوگا۔ مقامی افراد اور بین الاقوامی سماجی کارکنوں کا کہنا ہے کہ کیریم شالوم کراسنگ بند ہونے سے غزہ میں کھانے پینے کے سامان کے علاوہ ادویات کا بحران بھی پیدا ہوسکتا ہے۔ اسرائیلی ذرائع ابلاغ نے مقبوضہ بیت المقدس میں ایک وسیع وعریض یہودی معبد کے قیام کے حکومتی منصوبے کا انکشاف کیا ہے۔ عبرانی ہفت روزہ یروشلم کی رپور ٹ کے مطابق حکومت اور بیت المقدس کی اسرائیلی بلدیہ نے القس میں جبل زیتون کی چوٹی پر راس العامود کے قریب ایک وسیع وعریض معبد کے قیام پر کام شروع کیا ہے۔ عبرانی جریدے کے مطابق مذکورہ معبد کے لیے 2000 مربع میٹر کی جگہ مختص کی گئی ہے۔ اس کی تکمیل پر 1ارب شیکل کی رقم خرچ کی جائے گی۔

رنگین صفحات کے مضامین

  • رنگ و نور ۔ سعدی کے قلم سے
  • Rangonoor English
  • Message Corner
  • رنگ و نور پشتو ترجمہ
  • کلمۂ حق ۔ مولانا محمد منصور احمد
  • السلام علیکم ۔ طلحہ السیف
  • قلم تلوار ۔ نوید مسعود ہاشمی
  • نقش جمال ۔ مدثر جمال تونسوی
  • سوچتا رہ گیا ۔ نورانی کے قلم سے

Alqalam Latest Epaper

Alqalam Latest Newspaper

  • القلم کے گذشتہ شمارے و مضامین
  • کارٹون
TAKWIR Web Designing (www.takwir.com) Copyrights Alqalam Weekly Online