Bismillah

663

۱تا۷صفر المظفر۱۴۴۰ھ  بمطابق    ۱۲تا۱۸اکتوبر۲۰۱۸ء

وحشیانہ بمباری سے 100 بچوں سمیت 550 افراد شہید، ہزاروں زخمی

(شمارہ 633)

وحشیانہ بمباری سے 100 بچوں سمیت 550 افراد شہید، ہزاروں زخمی

شام میں بشار الاسد فورسز کی ظالمانہ کارروائیوں سے قیامت صغریٰ برپا ، غوطہ شہر پر کیمیائی گیس حملے کی اطلاعات ،عالم اسلام اور انسانی حقوق کے چمپئن ممالک کی مجرمانہ خاموشی
غوطہ پر بمباری رکوانے میں عالمی برادری ناکام،مسلسل بمباری کے دوران ایک ہفتے میں سینکڑوں بے گناہ شہریوں کو شہید کیا گیا، اسپتالوں کو بھی نشانہ بنایا گیا،تباہ شدہعمارتوں کے ملبے سے لاشوں کی تلاش جاری
 شہرمیں ادویات اورکھانے پینے کی اشیا کی شدید قلت،سرکاری فورسز کے طیاروں نے غوطہ کے شہروں دوما، زمالکا او رحموریہ کو نشانہ بنایا، بم برسانے کے بعد زمینی کارروائی کی تیاری کر رہی ہے
30 روزہ جنگ بندی قراردادمنظورہوتے ہی پھرشامی،روسی بمباری، سلامتی کونسل نے متاثرہ علاقوں تک امداد کیلئے رسائی مانگ لی،مشرقی غوطہ  2013 سے محاصرے میں ہے جہاں 4 لاکھ افراد مقیم ہیں

دمشق(نیٹ نیوز) شام میں بشارالاسداور روسی فورسز نے مظالم کی انتہا کر دی، غوطہ پر مسلسل 7 روز سے وحشیانہ بمباری کا سلسلہ جاری ہے جس کے نتیجے میں100 سے زائد بچوں ، خواتین سمیت 550 بے گناہ شہری شہید کردیئے گئے اور ہزاروں زخمی ہوگئے،فورسزنے متعدد ہسپتالوں کو بھی نشانہ بنایا، شدید بمباری سے عمارتیں ملبے کا ڈھیر بن گئیں، بشار فورسز کی جانب سے حملوں میں کیمیائی گیس کے استعمال کی بھی اطلاعات ہیں ،عمارتوں کے ملبے سے لاشو ں کی تلاش اور امدادی کارروائیاں جاری ہیں،شہر میں ادویات اور کھانے پینے کی اشیاء کی شدید قلت پیدا ہوگئی،30 روزہ جنگ بندی قراردادمنظورہوتے ہی پھرشامی،روسی بمباری،قرارداد میں سلامتی کونسل نے متاثرہ علاقوں تک امداد کیلئے رسائی مانگ لی۔ تفصیلات کے مطابق بشارالاسد کی سرکاری فورسز کے طیاروں نے غوطہ کے شہروں دوما، زمالکا او رحموریہ کو نشانہ بنایا۔شام میں بشار حکومت کی جانب سے الغوطہ الشرقیہ کے علاقے پر وحشیانہ فضائی بم باری کا سلسلہ جاری ہے۔ اس سلسلے میں تازہ ترین کارروائی میں مزید 24 شہری اپنی جانوں سے ہاتھ دھو بیٹھے جن میں تین بچے بھی شامل ہیں۔شام کے شہرغوطہ میں سرکاری فوج کی بمباری جاری ہے، شہداء کی تعداد550 ہوگئی جبکہ ایک ہزارسے زائد زخمی ہوگئے،مرنے والوں میں سو بچے بھی شامل ہیںخون میں نہائے پھول سے بچے عالمی برادری   سے اپنا قصورپوچھ رہے ہیں لیکن انسانی حقوق کے چیمپئن ممالک خاموش ہیں جبکہ اسلامی ممالک بھی بے حسی کا مظاہرہ کررہے ہیں۔ بین الاقوامی امدادی اداروں کے مطابق 5 اسپتالوں کو بھی نشانہ بنایا گیا اور بشار فوج بلا امتیاز بم برسانے کے بعد زمینی کارروائی کی تیاری کر رہی ہے۔ محصور علاقے کے ایک قصبے حموریہ سے موصول ویڈیو میں زخمی لوگوں کو تباہ شدہ عمارتوں سے نکلتے دیکھا جاسکتا ہے۔اقوام متحدہ نے بمباری روکنے کی اپیل کرتے ہوئے کہا ہے کہ صورتحال قابو سے باہر ہوتی جا رہی ہے۔اس علاقے میں خوراک، ایندھن اور ادویات کی پہلے ہی کمی ہے۔ بشار فوج نے دعویٰ کیا کہ باغیوں نے دمشق پر راکٹ داغے جس سے 2 افراد ہلاک ہو ئے تھے۔ مشرقی غوطہ کا علاقہ 2013 سے محاصرے میں ہے جہاں تقریباً 4 لاکھ افراد مقیم ہیں۔دوسری جانب ترکی نے خبردار کیا ہے کہ شامی حکومت شمالی شام میں کردوں کے خلاف لڑنے والے ترک افواج کی مدد نہ کرے۔ادھرسلامتی کونسل نے شام میں ایک ماہ کی جنگ بندی کی قرارداد منظور کرلی ہے،اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل نے شام میں 30 روزہ جنگ بندی کی قرارداد متفقہ طور پر منظور کرتے ہوئے شامی حکومت سے مطالبہ کیا ہے کہ امدادی اور طبی سامان متاثرہ علاقوں تک پہنچانے کی اجازت دی جائے۔شام کے دارالحکومت دمشق کے قریب واقع علاقے مشرقی غوطہ میں شامی اور روسی افواج ایک ہفتے سے بمباری اور گولہ باری کررہی ہیں جس کے نتیجے میں وہاں 127 بچوں سمیت 500 سے زیادہ شہری جاں بحق اور ہزاروں زخمی ہوچکے ہیں۔ کویت اور سوئیڈن نے غوطہ میں جاری قتل عام رکوانے کے لیے مشترکہ طور پر سلامتی کونسل میں شام میں 30 روزہ جنگ بندی کی قرارداد پیش کی جو متفقہ طور پر منظور ہوگئی۔سلامتی کونسل میں روس کی حمایت سے شام میں 30دن کی فوری جنگ بندی کی قرار داد کی اتفاق رائے سے منظوری کے باوجود بشار مخالفین پر بشار فضائیہ کی بمباری اور ٹینکوں کی گولہ باری جاری ہے۔شامی فوج نے زمینی راستے سے مشرقی غوطہ میں داخلے کی کوششیں بھی شروع کر دی ہیں۔تازہ شامی حملوں کے نتیجے میں مشرقی غوطہ میں ایک ہی خاندان کے9 افراد شہید ہو گئے۔ ایک بچہ کیمیائی حملے کا شکار ہوا۔ سلامتی کونسل میں جنگ بندی قرارداد کی متفقہ منظوری کے بعد شدت کمی ہونے کے باوجود شامی حملے بدستور جاری ہیں۔غوطہ پر جیش الاسلام ، فیلاق الرحمن اور تحریر الشام پر مشتمل اتحاد کا قبضہ ہے،اتحاد میں القاعدہ سے منسلک النصرہ بریگیڈ شریک ہے۔ جرمنی اور فرانس نے روسی صدر ولا دی میر پیوٹن سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ بشار انتظامیہ پر جنگ بندی کی پابندی کیلئے دباؤڈالے۔

رنگین صفحات کے مضامین

  • رنگ و نور ۔ سعدی کے قلم سے
  • Rangonoor English
  • Message Corner
  • رنگ و نور پشتو ترجمہ
  • کلمۂ حق ۔ مولانا محمد منصور احمد
  • السلام علیکم ۔ طلحہ السیف
  • قلم تلوار ۔ نوید مسعود ہاشمی
  • نقش جمال ۔ مدثر جمال تونسوی
  • سوچتا رہ گیا ۔ نورانی کے قلم سے

Alqalam Latest Epaper

Alqalam Latest Newspaper

  • القلم کے گذشتہ شمارے و مضامین
  • کارٹون
TAKWIR Web Designing (www.takwir.com) Copyrights Alqalam Weekly Online