Bismillah

668

۷تا۱۳ربیع الاول۱۴۴۰ھ  بمطابق       ۱۶تا۲۲نومبر۲۰۱۸ء

آزاد کشمیر…حنظلہ شہید کانفرنس (قلم تلوار۔نوید مسعود ہاشمی)

Qalam Talwar 650 - Naveed Masood Hashmi - hanzla shaheed conference

آزاد کشمیر…حنظلہ شہید کانفرنس

قلم تلوار...قاری نوید مسعود ہاشمی (شمارہ 650)

کشمیر میں نوجوان جانیں قربان کررہے ہیں اور ''اسلام آباد'' میں الیکشن الیکشن کا کھیل جاری ہے  اب صرف مقبوضہ کشمیر ہی نہیں بلکہ آزاد جموں و کشمیر کے پہاڑ بھی مقبوضہ کشمیر کو بھارتی تسلط سے آزادی دلوانے کے نعروں سے لرز رہے ہیں  ہر چند کہ اس خاکسار کی صحت سفر کے قابل نہ تھی  اس لئے راولاکوٹ کے دوستوں کو ٹیلی فون پردرجنوں بار انکار کیا مگر زبان سے انکار اور دل حنظلہ شہید کی یاد میں منعقدہ کانفرنس میں شرکت کے لئے بیقرار رہا' شہید حنظلہ کے والد مولانا محمد نواز ' مولانا اتفاق حسین ' مولانا مسعود الیاس 'بھائی زاہد محمود کشمیری کا شکریہ کہ جنہوںنے بار بار موبائل کالوں کے ذریعے راقم کو کانفرنس میں شرکت کے لئے قائل کرنے کی کوشش کی ' اس خاکسار کو مجاہدین کشمیر اور شہداء کشمیر سے ہمیشہ سے پیار رہا ہے  یہ پہلی مرتبہ ہو رہا تھا کہ شہداء کشمیر کی محبت پر طبیعت کی خرابی غلبہ پارہی تھی مگر دوستوں کا شکریہ کہ جن کی بار بار ترغیب اور حوصلہ افزائی کی بدولت یہ خاکسار طبیعت کی خرابی کو شکست دیکر  شہداء کشمیر کے ''پیار'' کو امر کرنے میں کامیاب ہوگیا۔ اتوار24 جون کی نماز فجر کے بعد مولانا آصف فاروقی پہنچ گئے اور ہم نے مری' کوہالہ' دھیر کوٹ کے راستے ضلع باغ کے علاقے جگ لڑی کے فلک بوس پہاڑوں کو کراس کرتے ہوئے مرکزی عید گاہ جھیڑ غنی میں منعقدہ حنظلہ شہید کانفرنس میں پہنچے تو جلسہ گاہ غیرت مند کشمیری مسلمانوں سے کھچا کھچ بھری ہوئی تھی  مجھے بتایا گیا کہ کانفرنس میں جمعیت علماء اسلام' جماعت اسلامی سمیت تام سیاسی ' مذہبی جماعتوں کے علاوہ کشمیری مجاہد تنظیموں کے جانبار شہید حنظلہ کو خراج تحسین پیش کرنے کے لئے جوق در جوق پہنچے تھے۔ محمدحنظلہ نے 17 سال قبل جہاد مقدس کو عبادت سمجھ کر اس پر عمل پیرا ہونے والے مولانا محمد نواز کے گھر آنکھیں کھولیں تھیں  معصوم حنظلہ نے جیسے ہی ہوش سنبھالا تو اسے پتہ چلا کہ اس کے سگے تایا کمانڈر محمدافضل خان اس کی پیدائش سے قبل ہی 26 اگست1999 ء کو مقبوضہ کشمیر کے ضلع راجوری میں بھارتی درندوں سے مردانہ وار جہادی معرکہ لڑتے ہوئے شہادت کا جام نوش کرچکے ہیں  یوں میٹرک کرنے کے ساتھ ساتھ کشمیر کی آزادی کی تحریک میں وہ بچپن سے ہی شامل ہوگیا  اس کے والد مولانا محمد نواز خان ' مولانا محمد مسعود ازہر کے جانثاروں میں شامل ہیں  ماں باپ دونوںنے اپنے ہونہار مجاہد بیٹے کی مکمل حوصلہ افزائی کی  محمد حنظلہ چھوٹی سی عمر میں ہی ایک سچا عبادت گزار بن گیا  اس لئے جہاد کشمیر کو شعوری حالت میں قبول کیا تھا اس نے وہ ہر قسم کی جہاد دشمن تاویلوں اور سیاسی آلودگیوں سے مکمل محفوظ رہا  اس کے والد بتاتے ہیں کہ وہ راتوں کو سجدے میں سر رکھ کر سسکیاں لے لے کر رویا کرتا تھا  وہ ہر حالت میں مقبوضہ کشمیر کے اندر ظالم بھارتی درندوں کے ساتھ دو دو ہاتھ کرنا چاہتا تھا  ہر وقت شہادت کی تمنا اس کا نصب العین بن چکی تھی ' چنانچہ13جون2018 ء کے دن ضلع کپواڑہ میں راولاکوٹ کا یہ خوبصورت اور خوب سیرت کم سن نوجوان بھارتی فوج کے ساتھ ایک معرکے میں8 بھارتی فوجیوں کو جہنم واصل کرنے کے بعد لیلیٰ شہادت سے ہم آغوش ہوکر خلد بریں میں جاپہنچا۔ محمد حنظلہ شہید کانفرنس سے اس خاکسار نے بحیثیت مہمان خصوصی خطاب کرتے ہوئے عرض کیا کہ ''جو شیطانی قوتیں ''جہاد'' کو ختم کرنے کے خواب دیکھ رہی ہیں وہ یاد رکھیں کہ ''جہاد'' ''وقتال'' اللہ کا حکم اور رسول اللہ کی سنت ہے  ساری دنیا تو ختم ہوسکتی ہے مگر اللہ کا حکم جہاد قیامت تک جاری رہے گا۔ کشمیر پاکستان کی شہ رگ اور 21 کروڑ پاکستانیوں کے دلوں کی دھڑکن ہے' مجھے اسلام آباد کے حکمرانوں' سیاست دانوں اور دانشوروں سے کوئی توقع نہیں ہے کہ یہ کشمیر کے حوالے سے کچھ کریں گے  ہاں البتہ میں پاکستان اور آزاد کشمیر کے نوجوانوں کے کردار سے مطمئن ہوں' الحمد للہ نوجوان جہاد کشمیر کو اپنا ''فرض'' سمجھ رہے ہیں اور یہ جہاد کشمیر کی بہت بڑی کامیابی ہے۔اس خاکسار نے عرض کیا کہ حیرت ہوتی ہے ان جاہلوں کی عقلوں پر یہ اعتراضا ت کرتے ہیں کہ17 سال کابچہ مروا دیا 17 سال کے کم سن نوجوان کو جہاد کشمیر میں نہیں جاناچاہیے تھا ' ایسے لبرل جاہلوں سے کوئی پوچھے کہ تم آٹھ ' آٹھ سال کے معصوم بچوں میں فحش گانوں کے مقابلے کروائو تو یہ درست' تم دس دس سا ل کے بچوں کو ڈانسر اور گلوکار بنائو تو یہ جائز' لیکن اگر محمد نواز خان اپنے 17 سالہ غیرت مند جوان بیٹے کو جہاد کشمیر میں بھجوائے تو تم اپنی جاہلانہ باتوں سے فضا خراب کرنے کی کوشش کرو نہیں؟ ایساکرنے کی کسی کو بھی اجازت نہیں دی جائے گی۔ ''کشمیر'' مذمت سے نہیں بلکہ ہندوئوںکی مرمت سے آزادہوگا' جہاد کشمیر کے خلا ف پروپیگنڈا کرنے والے ''را'' کے ایجنٹ ہیں مقبوضہ کشمیر میں جاری جہاد غزہ ہند کا حصہ ہے۔

سوا کروڑ سے زائد کشمیر کے مظلوم مسلمانوں کو بھارتی فوج کے رحم و کرم پر چھوڑنا''درندگی'' کی حوصلہ افزائی کرنے کے مترادف ہے  جس کی یہ قوم کبھی بھی اجازت نہیں دے گی'بھارت پاکستان کا ازلی دشمن ہے' بھارت کا موجودہ وزیراعظم ایک متعصب ہندو اور بدنام زمانہ قاتل ہے' مسلمان اور اسلام دشمنی اس کی گٹھی میں پڑی ہوئی ہے' بھارتی فوج کے خونی پنجوں سے کشمیری قوم کو آزاد کرانے کے لئے  جہاد کی آنچ کو تیز کرنا پڑے گا'حنظلہ شہید کانفرنس سے صوبائی منتظم مولانا مسعود الیاس' جماعت اسلامی کے رہنما نثار شاہق ' مولانا آصف فاروقی' مولانا فیاض خان اور سینئر صحافی بشیر عثمانی نے بھی خطاب کیا۔

٭…٭…٭

رنگین صفحات کے مضامین

  • رنگ و نور ۔ سعدی کے قلم سے
  • Rangonoor English
  • Message Corner
  • رنگ و نور پشتو ترجمہ
  • کلمۂ حق ۔ مولانا محمد منصور احمد
  • السلام علیکم ۔ طلحہ السیف
  • قلم تلوار ۔ نوید مسعود ہاشمی
  • نقش جمال ۔ مدثر جمال تونسوی
  • سوچتا رہ گیا ۔ نورانی کے قلم سے

Alqalam Latest Epaper

Alqalam Latest Newspaper

  • القلم کے گذشتہ شمارے و مضامین
  • کارٹون
TAKWIR Web Designing (www.takwir.com) Copyrights Alqalam Weekly Online