Bismillah

694


۱۰رمضان المبارک۱۴۴۰ھ

تبدیلی اور قادیانی (قلم تلوار۔نوید مسعود ہاش)

Qalam Talwar 677 - Naveed Masood Hashmi - Tabdeeli aur Qadiyani

تبدیلی اور قادیانی

قلم تلوار...قاری نوید مسعود ہاشمی (شمارہ 677)

ایک معاصر اَخبار میں چھپنے والی خبر کے مطابق ۔۔۔ ’’بھارت کے شہرقادیان میں منعقدہونے والے قادیانیوں کے سالانہ جلسے میں چناب نگر سے ہزاروں قادیانیوں کو سرکاری سرپرستی میں پورے پروٹوکول کے ساتھ بھارت بھیجے جانے کا انکشاف ہوا ہے۔۔۔ خبر کے مطابق، قادیانیوں کا سالانہ جلسہ ہر سال بھارت کے شہرقادیان میں26تا28 دسمبر کو منعقد ہوتا ہے،جس میں اِسلام مخالف زہریلا پروپیگنڈا کیا جاتا ہے، اس اسلام مخالف جلسے میں قادیانیوں کا ہزاروں کی تعداد میں پاکستان سے بھارت جانا کسی خطرے سے کم نہیں‘‘

 اس خبر کو پڑھنے کے بعد اَندازہ لگانے کی کوشش کیجئے کہ تبدیلی آئی یا نہیں؟ قادیان کے ’’جہنمی غلام‘‘ کے خلاف سوا سو سال سے اکابرینِ اسلام کا جونکتہ نظر اوراٹل فیصلہ ہے وہ کسی سے ڈھکا چھپا نہیںہے، مسلمانوںکے بچے بچے کی زبان پر ہے کہ جھوٹا مدعی نبوت ہونے کی وجہ سے قادیان کا ’’مرزا‘‘ کافر اورزندیق تھا، ہے اور قیامت تک رہے گا۔۔۔ جو اس لعنتی’’مرزے‘‘ کے پیروکار کہلاتے ہیں ، وہ بھی کافر، زندیق اور لعنتی ہیں اور تاقیامت رہیں گے۔۔۔

یہ تو ہو گئی ایمان اور عقیدے کی بنیاد۔۔۔ مگر دوسری طرف مرزاقادیانی ملعون کے پیروکار پاکستان سے بھی مخلص نہیں ہیں، جس کا واضح ثبوت یہ بھی ہے کہ اس دجالی گروہ کے ذمہ داران پاکستان سے فرار ہو کر لندن پہنچے اور پھر وہاں پر اپنی اِرتدادی سرگرمیوں کیلئے ہیڈکوارٹر بنایا۔

قادیانیوں کے لندن میں قائم ہیڈکوارٹر سے ہمیشہ پاکستان کے خلاف پروپیگنڈا کیا گیا، لندن ہو، جرمنی ہو، فرانس ہو یا امریکہ، انہوں نے ہمیشہ ان ملکوںکے دروں پر جانے والے پاکستانی وزیراعظم اور دیگر سیاست دانوں کو گھیر گھار کر دباؤ میں لانے کی کوششیںکیں۔۔۔

مجھے یہ لکھنے میںکوئی باک نہیں ہے کہ جس طرح 70 سالوں سے بھارت کے ہندوؤں، وہاں کی فوج، سیاست دانوں اور ہندو میڈیا نے پاکستان کو آج تک قبول نہیں کیا۔۔۔ بالکل اسی طرح سر ظفر اللہ قادیانی سے لے کر مرزا طاہر، اعجاز منصور اور مرزامسرور سمیت غلام قادیانی کے دجالی گروہ سے تعلق رکھنے والے کسی فردنے آج تک پاکستان کو قبول نہیںکیا، جس طرح ہندو بنیوں نے پاکستان کے خلاف سازش کاکوئی موقع ہاتھ سے جانے نہیں دیا۔۔۔بالکل اسی طرح فرنگی سامراج کے اس خود کاشتہ دجالی گروہ نے بھی پاکستان کے خلاف سازشیں جاری رکھیں،ایٹمی پروگرام پاکستان کی سلامتی کیلئے نہایت اہم ہے، دنیا کی ساری کفریہ طاقتیں پاکستان کو ایٹم بم بنانے سے روکناچاہتی تھیں۔۔۔ قادیانی ڈاکٹر عبدالسلام بھی شروع، شروع میں۔۔۔۔ ایک پاکستانی کی حیثیت سے شامل تھا، لیکن پھر وقت نے ثابت کیا کہ ایٹم بم کی غیر ملکی طاقتوں کو مخبری کرنے والا یہی قادیانی ملعون نکلا،اور اسی جرم کی بناء پر اسے اس عظیم پروگرام سے علیحدہ کر دیا گیا، اسرائیلی فوج میںکئی سو قادیانیوں کی شمولیت ان کی اسلام، مسلمان اور پاکستان دشمنی کا ایک اور واضح اور منہ بولتا ثبوت ہے۔۔۔

مرزا غلام قادیانی ملعون انگریز سرکار کا نمک خوار اور راتب خورتھا، اس نے اپنے ساتھیوں کو انگلش سرکار سے وفاداری، اسلام اور مسلمانوں سے غداری کادرس دیا، قادیانی گروہ کی نس نس میں یہود و ہنود اور نصاریٰ کی محبت سمائی ہوئی ہے۔۔۔ قادیانیت کوئی’’مذہب‘‘ نہیں بلکہ فتنہ و فساد، گمراہی اور شیطنت کا نام ہے۔۔۔ اس لئے اسلام اور مسلمانوں کے خلاف ان کے بس میں جو کچھ بھی ہوتا ہے یہ کر گزرتے ہیں۔۔۔ عمران خان کے وزیراعظم بننے کے بعد کراچی اور اسلا م آباد سمیت پورے ملک میں قادیانی نیٹ ورک کا نہایت شدو مد کے ساتھ متحرک ہوجانا کیا محض اتفاق سمجھ کر چھوڑ دیا جائے؟

صرف یہی نہیں بلکہ 1971ء کے تقریباً47سالوں بعد جب عمران خان نے اقتدار سنبھالا تو ڈالر خور این جی اوز کے خرکاروں نے قادیانیوں کی حمایت میں اسلام آباد کے اندر جلوس نکالا، کیا یہ بھی محض اتفاق تھایا پھر’’تبدیلی‘‘ کا شاخسانہ؟

دالیں،چاول،کوکنگ آئل، گھی، شکراور کھانے پینے کی دیگر اشیاء کی قیمتوں میں تو’’تبدیلی‘‘آہی گئی تھی۔۔۔ بجلی اور گیس کو شکار کرنے کے بعد’’تبدیلی‘‘ جان بچانے والی اَدویات کی طرف بڑھی۔۔۔ اور دواؤں کی قیمتوں میں 15فیصد اضافہ کر کے غریب عوام کی کمر توڑ کر رکھ دی۔۔۔

عوام روتے، دھوتے تو شائد یہ سب سہہ لیں؟ لیکن اگر کسی کا خیال یہ ہو کہ وہ’’تبدیلی‘‘ کا جھاڑو مسلمانوں کے اجتماعی عقیدے پر بھی پھیرنے میں کامیاب ہو سکتاہے تو یہ اس کی خام خیالی ہے!

آج حکمرانوں کو کوٹ لکھپت جیل میں قید اس’’قیدی‘‘ پر بھی ایک نظر ڈال لینی چاہئے۔۔۔ کہ جس نے اپنے دور اقتدار میں ختم نبوتؐ کے قوانین کو چھیڑنے کی مذموم کوشش کی تھی، ممکن ہے کہ حکمران یہ سمجھتے ہوں کہ نواز شریف کو سزا انہوں نے دلائی۔ جی ہاں میرارب بعض کو بعض کے ہاتھوں سے اسی طرح سزائیں دِلوایا کرتا ہے۔۔۔

3دفعہ وزیراعظم رہنے والے نواز شریف کے بارے میں خبر یہ ہے کہ وہ جیل میں بہت کمزور ہو گئے ہیں۔۔۔ اگر کوئی ملاقات پہ چلا جائے تو اس کا استقبال بھی اداس مسکراہٹ سے کرتے ہیں، جیل میں ملاقات کیلئے جانے والے صحافی سے فرماتے ہیں کہ’’کیسے سنے گا میری کہانی، میری زبانی‘‘

یہ وہی متکبر مزاج شخص ہے کہ جوکبھی فرعونی لب و لہجے میں کہا کرتا تھا کہ’’اللہ، رام، بھگوان میں کوئی فرق نہیں‘‘ (نعوذ باللہ) جس کا کہنا تھا کہ میں پاکستان کو سیکولر ریاست بناؤں گا، جو ختم نبوت کے باغی دجالی گروہ قادیانیوں کواپنا بھائی قرار دیتے ہوئے نہیں تھکتا تھا،آج کوٹ لکھپت جیل میں جا کر اس سے کوئی پوچھے تو سہی کہ اسے رام، بھگوان اور اللہ میں فرق سمجھ آیا یا نہیں؟

کوئی جائے اور اس سے پوچھے کہ کیا اب بھی وہ پاکستان کو ’’سیکولر‘‘ بنانا چاہتا ہے؟عقل والوں کے لئے اللہ نے بڑی نشانیاں رکھی ہیں، کاش کہ کوئی عبرت حاصل کرنے والا تو ہو؟

ہم تبدیلی مارکہ وزیراعظم کو بتائے دیتے ہیں کہ ریاستِ پاکستان کوئی کرکٹ کے میدان میں جیتا ہوا ’’کپ ‘‘نہیںبلکہ20لاکھ سے زائد مسلمانوں کی بے مثال قربانیوں سے حاصل شدہ وہ مملکت ہے کہ جس کا وجود قادیانی شیطانی طاقتوں کی آنکھوں میں آج بھی کھٹک رہا ہے،اس لئے قادیانی گروہ کوآئین اورقانون کاپابند بنایا جائے۔۔۔

یہ کیا دوغلی پالیسی ہے کہ ناموس رسالت کے کارکنوں کی پکڑ، دھکڑ اور ان پر تو پابندیاں۔۔۔ مگردوسری طرف قادیانیوں پر اس حد تک نوازشات کہ وہ ہزاروں کی تعدادمیں بڑی آسانی کے ساتھ ویزے حاصل کر کے حکومتی پروٹوکول میں بھارت پہنچ جائیں،قوم یہ کبھی قبول نہیں کرے گی۔۔۔

٭٭…٭٭

رنگین صفحات کے مضامین

  • رنگ و نور ۔ سعدی کے قلم سے
  • Rangonoor English
  • Message Corner
  • رنگ و نور پشتو ترجمہ
  • کلمۂ حق ۔ مولانا محمد منصور احمد
  • السلام علیکم ۔ طلحہ السیف
  • قلم تلوار ۔ نوید مسعود ہاشمی
  • نقش جمال ۔ مدثر جمال تونسوی
  • سوچتا رہ گیا ۔ نورانی کے قلم سے

Alqalam Latest Epaper

Alqalam Latest Newspaper

  • القلم کے گذشتہ شمارے و مضامین
  • کارٹون
Rangonoor Web Designing Copyrights Khabarnama Rangonoor