Bismillah

613

۲۲تا۲۸محرم الحرام۱۴۳۸ھ   بمطابق ۱۳تا۱۹اکتوبر۲۰۱۷ء

کرپشن اور بدکرداری سے پاک سیاست (قلم تلوار۔نوید مسعود ہاشمی)

Qalam Talwar 605 - Naveed Masood Hashmi - Curroption aur Badkari se paak Siyasat

کرپشن اور بدکرداری سے پاک سیاست

قلم تلوار...قاری نوید مسعود ہاشمی (شمارہ 605)

اللہ تعالیٰ ہم سب کو اپنے غیض و غضب اور درد ناک عذاب سے محفوظ رکھے ۔ مغربی روشن خیالی کے کلچر نے ،پاکستانی قوم کو بدتمیزیوں اور بے غیرتی کے سوا کچھ نہیں دیا ۔ دجالی چینلز ویڈیو ،سی ڈیز، ڈش، کیبل، موبائل انٹرنیٹ وغیرہ نے جہاں ایک طرف کافروں کی ثقافتی یلغار کو مسلمانوں کے گھر گھر پہنچانے کا اہتمام کیا وہاں دوسری طرف مسلمان عورتوں کو گھروں سے نکا ل کر بازاروں، دکانوں، دفتروں اور مختلف سیاسی پارٹیوں کی زینت بنانے کے لئے بھی، ڈالر خور این جی اوز کی معرفت خوب جال پھیلایا۔

وفات سے کئی سال قبل افسانوی کردار کے حامل جنرل حمید گل مرحوم سے اس خاکسار کی مظفر آباد کے ایک ہوٹل میں ملاقات ہوئی ۔۔۔ وہ وہاں پر کشمیری مجاہدین کی طرف سے منعقد کردہ القتال کانفرنس میں شرکت کے لئے تشریف لائے ہوئے تھے ۔۔۔ میں نے ان سے پوچھا کہ جنرل صاحب! جس خان کو آپ بڑے چاؤ سے سیاست میں لائے ہیں، لگتاہے کہ اب آپ اس سے مایوس ہوچکے ہیں؟ اس مرد دانا کا جواب اس وقت تو میری سمھ میں نہ آیا مگر موجودہ حالات کے تناظر کو اس جواب کی روشنی میں سمجھا جاسکتا ہے ۔ مرد جری جنرل حمید گل مرحوم نے بس ایک مصرعہ سنا کر اس موضوع پر بات بالکل ہی ختم کر دی وہ مصرعہ یہ تھا کہ: کردار سے قومیں بنتی ہیں ۔ گفتار کے چکر کچھ بھی نہیں

سپریم کورٹ کے 5ججز نے پانامہ کیس میں وقت کے وزیراعظم میاں محمد نواز شریف کے خلاف نااہلی کا فیصلہ دیا۔۔۔ تو ہم عدالت کے ساتھ اس لئے کھڑے ہوگئے کیونکہ ہم سمجھتے ہیں کہ سیاست کو کرپٹ لوگوں اور کرپشن سے پاک ہونا چاہیے ۔۔۔ تو کیا سیاست کو بدکردار لوگوں اور بدکردار ی سے پاک نہیں ہونا چاہیے؟ کیا اَخلاق باختہ لوگوں اور جنسی بھیڑیوں کو سیاست سے نکال باہر نہیں کرنا چاہیے؟ ہمارے وہ سیاستدان جو ۔ اپنے جلسوں میں جس ریاست مدینہ کی بات کرتے ہیں ۔ کیا اس ریاست مدینہ میں مادر پدر آزاد کلچر کی کہیں دور دور تک گنجائش موجود ہے؟126 دنوں کے دھرنوں ۔۔۔ اور پھر مختلف جلسوں اور کانفرنسوں میں میڈیا کی دیکھتی آنکھوں کے سامنے خواتین کے ساتھ جس قسم کے حسن سلوک کے مظاہرے ہوتے رہے ۔اسے سب نے دیکھا۔ ریاست مدینہ کے والی و بانی خاتم الانبیاء ﷺ نے میوزک کی دھنوں اور گلوکاروں کے ساتھ مل کر ۔۔۔ نوجوان لڑکیوں لڑکوں عورتوں اور مردوں کو اپنے جسم تھرکانے ڈانس کرنے اور جھومنے کی اجازت کب اور کہاں دی ہے؟

خاتم الانبیاﷺ نے ایک دفعہ ایک انصاریؓ کو دیکھا جو اپنے بھائی کو سمجھا رہا تھا کہ ۔ زیادہ شرم نہ کیا کرو۔ آپﷺ نے سنا تو ارشاد فرمایا:حیاء ایمان کا جزو ہے (مشکوٰۃ) ایک دوسری حدیث میں پیغمبر رحمتﷺ ارشاد فرماتے ہیں کہ حیاء خیر ہی کی موجب ہوتی ہے (مشکوٰۃ شریف) یعنی انسان جس قدر باحیاء بنے گا اتنی ہی اس میں خیر بڑھتی جائے گی۔ بخاری شریف کی روایت ہے کہ رسول اکرمﷺ نے فرمایا کہ جب شرم نہ رہے تو پھر جو مرضی کر۔ یعنی بے حیاء و بے غیرت انسان نہ تو کسی ضابطہ اخلاق کا پابند ہوتا ہے اور نہ ہی وہ اپنی زندگی میں پاکیزگی اور پاکدامنی کو جگہ دینے کے لئے تیار ہوتا ہے ۔ اس کی زندگی شتر بے مہار کی مانند ہو جاتی ہے ۔ڈالر خور این جی اوز کی طرف سے پھیلائی جانے والی گمراہی کی وجہ سے یہ بڑی بدقسمتی کی بات ہے کہ کچھ عورتوں کو بھی مردوں کے برابر حقوق لینے کا شوق ہے ۔ اور یہ بھی کہ عورتوں کو مردوں کے شانہ بشانہ کام کرنا چاہیے ۔ مردوں اور عورتوں کا بے محابہ اختلاط تو حضرت آدم علیہ السلام سے لے کر رسول اکرمﷺ تک یعنی ایک لاکھ 24 ہزار انبیاء کرام میں سے کسی نبی کی شریعت نے بھی جائز نہیں رکھا۔ قرآن مقدس میں حضرت موسیٰؑ کا واقعہ درج ہے ۔۔۔ حضرت موسیٰ ؑ جب مدین پہنچے تو انہیں ایک کنویں پر لوگوں کا ہجوم نظر آیا جو اپنے جانورں کو پانی پلا رہا تھا ۔۔۔ ایک طرف اپنی بکریوں کو لے کر دو لڑکیاں الگ تھلگ کھڑی تھیں جب رش ختم ہوگیا تو ان لڑکیوں نے بچا ہوا پانی اپنی بکریوں کو پلایا ۔۔۔ مگر مردوں کے ہجوم میں گھسنا پسند نہ کیا۔ حضرت موسیٰؑ کے سوال کرنے پر بتایا  قرآن کہتا ہے کہ: وہ بولیں ہم نہیں پلاتیں چرواہوں کے چلے جانے تک۔(القرآن) اس آیت کریمہ سے معلوم ہوا کہ شریف گھرانوں کی لڑکیاں یا عورتیں ۔۔۔ عام مردوں کے ساتھ آزادانہ اختلاط کو طبعاً بھی گوارا نہیں کرتیں کسی عورت کا کسی مجبوری کی وجہ سے نوکری پیشہ ہونا ۔۔۔ اسلامی حدود و قیود کی پاسداری کی وجہ سے اس عورت کو ہر لحاظ سے مضبوط بنا دیتا ہے اور پھر کسی عورت یا نوجوان لڑکی کا کسی بھی غیر محرم خواہ وہ امام مسجد ہو استاد ہو پیر ہو یا پارٹی قائدکے ساتھ تنہائی میں بیٹھنا کس قدر خطرناک ہے؟ آئیے آقا و مولیٰﷺ سے سوال کرتے ہیں ۔

 خاتم الانبیاء ﷺفرماتے ہیں کہ :کوئی مرد کسی عورت سے تنہائی میں نہیں ملتا مگر تیسرا شیطان موجود ہوتا ہے (مشکوٰۃ) اسلامی احکامات کو پس پشت ڈال کر ۔ رسول اکرمﷺ کے ارشادات مطہرہ سے روگردانی کرکے ۔ نوجوان لڑکیوں لڑکوں مردوں اور عورتوں کو مخلوط ناچنے اور نچوانے والے ۔ نہ تو کبھی مثبت انقلاب لاسکتے ہیں اور نہ ہی معاشرے میں کوئی تبدیلی لاسکتے ہیں ۔ بجز اس کے کہ اب پارٹی کی خاتون ورکر کا ہاتھ ہے اور پارٹی قائد کا گریبان ۔ پارٹی کی خاتون ایم این اے کے الزامات ہیں ۔ اور پارٹی قائد کے چمچوں کڑچھوں کے فحاشی اگلتے جوابات ۔ ساری سیاسی اور مذہبی پارٹیوں کو خواتین کے حوالے سے اپنے کردار و عمل کا جائزہ لینا پڑے گا ۔۔۔اور اپنی اصل یعنی اسلام کی طرف رجوع کرکے ۔ مکمل اسلامی حدود و قیود کے ساتھ عورتوں کی آزادی کے لئے اقدامات اُٹھانے ہوں گے۔۔۔

٭…٭…٭

رنگین صفحات کے مضامین

  • رنگ و نور ۔ سعدی کے قلم سے
  • Rangonoor English
  • Message Corner
  • رنگ و نور پشتو ترجمہ
  • کلمۂ حق ۔ مولانا محمد منصور احمد
  • السلام علیکم ۔ طلحہ السیف
  • قلم تلوار ۔ نوید مسعود ہاشمی
  • نقش جمال ۔ مدثر جمال تونسوی
  • سوچتا رہ گیا ۔ نورانی کے قلم سے

Alqalam Latest Epaper

Alqalam Latest Newspaper

  • القلم کے گذشتہ شمارے و مضامین
  • کارٹون
TAKWIR Web Designing (www.takwir.com) Copyrights Alqalam Weekly Online