Bismillah

648

۳۰رمضان المبارک تا۶شوال ۱۴۳۹ھ  بمطابق    ۱۵تا۲۱ جون۲۰۱۸ء

ایران! احتجاج کے نئے ریکارڈ (قلم تلوار۔نوید مسعود ہاشمی)

Qalam Talwar 626 - Naveed Masood Hashmi - Iran Ihtejaj k Naye Record

ایران! احتجاج کے نئے ریکارڈ

قلم تلوار...قاری نوید مسعود ہاشمی (شمارہ 626)

بیروزگاری اورمہنگائی کے خلاف ایران کے70 سے زائد شہروں میںزبردست اور پر تشدد مظاہرے کرنے والے۔۔۔ ایرانی عوام کیا ایران کے حکمرانوں کو معاشی اصلاحات پر مجبور کر پائیں گئے؟

الجزیرہ کی رپورٹ کے مطابق’’ایران میں اب تک 1992؁ئ،1994؁ئ،2001ئ؁،2009ئ؁ اور2015ئ؁ میں بھی سخت احتجاجی مظاہرے ہوئے، لیکن اس بار ایرانی عوام نے شدید ترین احتجاجی مہم شروع کر کے ماضی کے تمام ریکارڈ توڑ ڈالے‘‘

ایرانی مظاہرین نے نہ صرف تھانوں پر حملے کئے۔۔۔ بلکہ متعدد سرکاری املاک کو بھی نذر آتش کرنے کی کوششیں کیں، مشہد سے شروع ہونے والے احتجاجی مظاہرے اصفہان، شیراز، کرمان، زاہدان، ہمدان، بندرعباس اور تہران سمیت70 سے زائد شہروں میں پھیل گئے۔۔۔ ایران کے حکمرانوں کی پالیسیوں کے خلاف لاکھوں ایرانی شہری سڑکوں پر نکلے تو۔۔۔ حکومت کو ملک بھر میں موبائل، انٹرنیٹ سروس کے ساتھ ساتھ ٹیلی گرام اور فوٹو شیئرنگ ایپ انسٹا گرام پر بھی عارضی طور پر پابندی لگانا پڑی۔۔۔ مگر یہ پابندیاں بھی مظاہرین کے غیض و غضب کو ختم نہ کر سکیں۔

کہا جاتا ہے کہ ایران میں پہلی مرتبہ ایرانی حکومت کے سپریم لیڈرآیت اللہ خامنہ ای کے خلاف بھی نعرے لگنا شروع ہوئے، مظاہرین نے عراق اور شام میں ایرانی آپریشنز کے سربراہ جنرل قام سلیمانی کی تصاویر پھاڑ کر ان سے نفرت کا اظہار کیا۔ ایرانی صدر حسن روحانی سمیت دیگر ایرانی حکام نے شائد کبھی خواب میں نہ سوچا ہوگا کہ عرب’’بہار‘‘ کے جھونکے تہران کے دروازوں پر بھی دستک دینے لگ جائیں گئے۔

ایرانی حکومت کے توسیع پسندانہ عزائم سے ہر ذی شعور انسان خوب اچھی طرح واقف ہے، انہی توسیع پسندانہ عزائم کیوجہ سے ایران نے عراق، لبنان،شام، بحرین اور یمن میں مداخلت کی۔۔۔ کبھی امریکی فوج کے ساتھ مل کر عراق میںحکومت قائم کرنے کی کوشش کی تو کبھی بشار الاسد جیسے ناپاک اور خونخوار’’بھیٹریئے‘‘ کے ساتھ مل کر شام کے مسلمانوں کا قتل عام کیا۔۔۔ یہاں تک کہ یمن کے حوثیوں کو نہ صرف ٹریننگ اور اسلحہ دیکر سعودی عرب کے خلاف کھڑا کردیا۔۔ بلکہ پاسداران انقلاب کے کئی جرنیل بذات خود یمن پہنچے اور حوثی باغیوں کے ساتھ مل کرسعودی عرب کے خلاف بر سر پیکار ہوئے۔

خود ایران میںبسنے والے سنی العقیدہ مسلمانوں کے ساتھ ایرانی حکمران کے مظالم کو تو چھوڑیئے، ایران نے 1979 ئ؁ سے پاکستان میں جس طرح سے ایرانی انقلاب کولانچ کرنے کی۔۔۔ مذموم کوشش کی۔۔۔ یہ اسی کانتیجہ ہے کہ پاکستان گزشتہ 3دہائیوں تک فرقہ واریت کی آگ میںجلتا رہا۔۔۔ فرقہ واریت کی دلخراش کہانیاں تو اپنی جگہ پر ہیںہی۔۔۔ لیاری کے بدنام زمانہ ڈان عزیر بلوچ اور بھارتی خفیہ ایجنسی’’را‘‘ کے دہشتگرد اور جاسوس کل بھوشن یادیو نے گرفتاری کے بعد ایران کے حوالے سے جو خوفناک انکشافات کئے وہ میڈیا کے ذریعے پوری دنیا تک پہنچے۔۔۔ لازمی بات ہے کہ جب ایران دنیا کے دوسرے ملکوں میں’’ایرانی انقلاب‘‘ لانچ کرنے کیلئے ان ممالک میں مخصوص نظریات کی حامل جماعتیں بنانے کی کوششیں کرے گا۔

جب ایران،عراق سے لیکر بحرین، شام، لبنان اور یمن تک مسلح مداخلت کرے گا۔۔۔ جب ایران ایک دہشتگرد گروپ حزب اللہ کی اعلانیہ سرپرستی کرے گا۔۔۔ جب ایران گلگت، چترال سے لیکر پارا چنار تک سینکڑوں نوجوانوں کو نکال کر ایران کے راستے شام تک لے جائے گا۔۔۔ جہاں جا کر وہ وہاں کی فوج کے ساتھ مل کر مقامی سنی مسلمانوں کا قتل عام کریں گے، تو یہ سارے اقدامات مفت میں تو نہیں ہوں گئے،بلکہ ان سب اقدامات کے لئے کروڑوں۔۔۔ اربوںڈالرز بھی خرچ کرنا پڑیں گئے۔۔۔ ایرانی حکمران دوسرے مسلم ممالک میںایرانی انقلاب لانچ کرنے اور مسلح لڑائیوں پر اربوںڈالرز لٹائیں گئے۔۔۔ تو اس سے ایران کی معیشت پر بے پناہ بوجھ پڑے گا، مزید سونے پر سہاگہ یہ کہ جب حکومت اور بیوروکریسی میں کرپشن کا غلبہ بڑھے گا تو اس کے اثرات بھی۔۔۔ نچلے درجے کے عوام پر ہی پڑیں گئے، صرف ایران ہی نہیں بلکہ پاکستان کااصل مسئلہ بھی کرپشن ہی ہے۔۔۔ چنانچہ ’’پانامہ‘‘ کی ہوشربا کہانیوں کے منظر عام پرآنے کے بعد۔۔۔ ملک اسوقت جس سیاسی ابتری کا شکار ہے۔۔ وہ سب کے سامنے ہے۔۔۔ ایرانی لیڈروں کے اثاثوں کے حوالے سے ایک امریکی جریدے میں جو رپورٹ شائع ہوئی۔۔۔ اسے انسان پڑھ لے تو دنگ رہ جاتا ہے ۔۔ جریدہ فوربز اپنی رپورٹ میں لکھتا ہے کہ ’’سپریم لیڈر خامنہ ای کے اثاثوں کی مالیت95 ارب ڈالر کے لگ بھگ ہے، ایران کے 5 فیصد افراد90فیصد دولت پر قابض ہیں‘‘۔۔۔ رپورٹ تو بہت تفصیلی ہے، مگر میں اس لئے نہیں لکھ رہا ۔۔۔ کیونکہ میرا مقصد کسی کو بدنام کرنا نہیں۔۔۔ بلکہ دلائل کے ساتھ بات سمجھانا ہے۔۔۔ جب ایران میں بے روزگای تمام حدیں توڑ ڈالے گی۔۔۔ جب افلاس اور بھوک کے ہر جانب ڈیرے ہوں گے۔

جب عوام روٹی کے ایک لقمے اور پانی کی بوند بوند کوترس رہے ہوں گے۔۔ توپھر احتجاجی مظاہرے بھی ہوں گئے، بھوک ہڑتالیں بھی ہوں گی، عوام سڑکوں پر بھی نکلیںگئے۔۔۔اور جب مظاہرین کو روکنے کے لئے ۔۔۔ حکومت سختی کرے گی۔۔۔ عوام پر لاٹھی چارج ،آنسو گیس کی شیلنگ ہوگی۔۔۔ حتیٰ کہ عوام پرگولیاں چلائی جائیں گی۔۔۔ تو پھر ردعمل میںآگ بھی لگے گی۔۔۔تھانوں پر حملے بھی ہوں گئے۔۔۔ اورایران کے کئی شہروں میںگزشتہ دنوں۔۔۔ یہی کچھ ہوتا رہا،احتجاج کرنے والے ایرانی مظاہرین اپنے حکمرانوں سے مطالبہ کر رہے تھے۔۔ کہ ہمیں دو وقت کا کھانا تو دو۔

ایران کی گارڈن کونسل کے رکن محمد رضا باہتر کا کہنا تھا کہ ایران کی80ملین آبادی میں18ملین لوگوں کو دو وقت کی روٹی بھی میسر نہیں ہے۔۔  11ملین سے زائد لوگ خطِ غربت کی لکیر کے نیچے زندگی گزارنے پر مجبور ہیں۔۔۔ جبکہ ایرانی حکومت نے صرف دو برسوں میں شام کے محاذ پر160ملین ڈالر سے زائد رقم پھونک ڈالی۔اور سالانہ5 ارب ڈالر بے مقصد جنگ پر خرچ ہورہے ہیں۔۔۔ شام میں لڑنے والے جنگجوؤں کی تنخواہیں بھی ایران ادا کرتا ہے‘‘

یہی وجہ ہے کہ ایران کے شہروں میں دیواروں پر ایرانی مظاہرین نے’’مرگ برولایت فقیہ‘‘ ’’مرگ برخامنہ ای کی چاکنگ کی‘‘

 شاید یہی وجہ ہے کہ ایران کے صوبے قزوین کے شہر ترکستان میں ایک مذہبی تربیت گاہ’’حوزہ علمیہ‘‘ کو مظاہرین نے آگ لگادی، العربیہ ٹی وی کی رپورٹ کے مطابق ایران کی مذہبی قیادت پر عوام کواس لئے بے پناہ غصہ ہے، کیونکہ گزشتہ کئی دہائیوں سے یہی مذہبی لیڈران ایران کے سیاہ و سفید کے مالک ہیں، سچی بات ہے کہ ایران کی خوفناک اندرونی صورت حال دیکھ کر سخت افسوس ہوتا ہے ۔۔۔ ایران کے حکمرانوں کی ذمہ داری ہے کہ۔۔۔ وہ اپنے عوام پر سختی کرنے کی بجائے۔۔۔ ان کے مطالبات پر کان دھرنے کی کوشش کریں۔۔۔ کہیںایسا نہ ہو کہ کل دنیا کو’’عرب بہار‘‘ کو بھول کر ’’ایران بہار‘‘ کے خون ریز چرچے سنانا پڑیں۔

٭…٭…٭

رنگین صفحات کے مضامین

  • رنگ و نور ۔ سعدی کے قلم سے
  • Rangonoor English
  • Message Corner
  • رنگ و نور پشتو ترجمہ
  • کلمۂ حق ۔ مولانا محمد منصور احمد
  • السلام علیکم ۔ طلحہ السیف
  • قلم تلوار ۔ نوید مسعود ہاشمی
  • نقش جمال ۔ مدثر جمال تونسوی
  • سوچتا رہ گیا ۔ نورانی کے قلم سے

Alqalam Latest Epaper

Alqalam Latest Newspaper

  • القلم کے گذشتہ شمارے و مضامین
  • کارٹون
TAKWIR Web Designing (www.takwir.com) Copyrights Alqalam Weekly Online