Bismillah

640

۳تا۹شعبان المعظم ۱۴۳۹ھ  بمطابق ۲۰تا۲۶اپریل۲۰۱۸ء

قنوتِ نازلہ کی ضرورت (رنگ و نور ۔ سعدی کے قلم سے)

Rangonoor 639 - qunoot-e-nazila ki zarorat

قنوتِ نازلہ کی ضرورت

رنگ و نور ۔۔۔سعدی کے قلم سے (شمارہ 639)

اللہ تعالیٰ امت مسلمہ کو فتح، غلبہ اور اپنی حفاظت عطاء فرمائیں…قنوت نازلہ کا عمل بڑا مبارک، مسنون اور مجرب عمل ہے… کوشش کرنی چاہیے کہ یہ عمل ہم سب کی ذاتی… اور اجتماعی زندگی میں مضبوطی کے ساتھ آ جائے…

پہلا کام

’’دعائ‘‘ اللہ تعالیٰ کو بہت محبوب ہے… ’’دعائ‘‘ تقدیر کو بدل دیتی ہے… ’’دعائ‘‘ ایک نہ خطا ہونے والا ہتھیار ہے… ’’دعائ‘‘ ہر سعادت کا ذریعہ ہے… جس کو ’’دعائ‘‘ مل گئی وہ ’’دعائ‘‘ کے ذریعہ سب کچھ پا لیتا ہے… اور جو ’’دعائ‘‘ سے محروم رہتا ہے وہ بہت سی مزید محرومیوں میں جا گرتا ہے…

’’دعائ‘‘ بڑی جاندار عبادت اور بڑی شاندار نعمت ہے…یہ ہر عبادت اور ہر ذکر کا مغز ہے… ’’دعائ‘‘ اللہ تعالیٰ کا حکم ہے… ’’دعائ‘‘ تمام انبیاء علیہم السلام کی سنت ہے… قنوت نازلہ کو اپنی زندگی میں لانے کے لئے پہلا کام یہ کریں کہ … قنوت نازلہ کی فضیلت کو پڑھیں اور سمجھیں …یہ کوئی عام اور معمولی دعاء نہیں ہے… یہ وہ ’’دعائ‘‘ ہے جسے ’’فرض نماز‘‘ میں جگہ عطاء فرمائی گئی ہے… اور آپ جانتے ہوں گے کہ… ’’فرض نماز‘‘ کتنی اونچی عبادت ہے… ایمان کے بعد’’ فرض نماز‘‘ کا درجہ ہے…اور ’’فرض نماز‘‘…ہمارے پورے دین کا ’’ستون‘‘ ہے … فرض نمازوں کے لئے اللہ تعالیٰ نے جو اوقات مقرر فرمائے ہیں… یہ قبولیت کے خاص اوقات ہیں… یہ محبت کے اوقات ہیں… یہ مناجات کے اوقات ہیں… یہ راز و نیاز کے اوقات ہیں … قنوت نازلہ چونکہ اس امت کی ضرورت ہے اس لئے اسے ’’فرض نمازوں ‘‘ میں جگہ ملی ہے… اور فرض نمازوں کی دعائیں ان شاء اللہ ضرور بضرور قبول ہوتی ہیں…

الحمد للہ گزشتہ کالم میں ’’قنوت نازلہ‘‘ کی اچھی خاصی اور جامع ترتیب آ گئی تھی… اسے دو چار بار پڑھ لیں… دوسرے مسلمانوں تک بھی پہنچائیں… اس کی برکت سے ان شاء اللہ خود ہماری زندگی میں ’’قنوت نازلہ‘‘ آ جائے گا… جب ہماری زندگی میں دین کے دشمن بھی موجود ہیں… جب ہماری زندگی میں مظلوم مسلمان بھی موجود ہیں… جب ہماری زندگی میں بے بس مسلمان قیدی بھی موجود ہیں… جب ہماری زندگی میں ہمارے بے شمار ایسے دشمن موجود ہیں … جو ہم سے صرف دین کی وجہ سے دشمنی رکھتے ہیں تو پھر ہماری زندگی میں ’’قنوت نازلہ‘‘ بھی موجود ہونی چاہیے… اور ہماری زندگی میں جہاد بھی ضرور موجود ہونا چاہیے…

دوسرا کام

قنوت نازلہ کی دعائیں یاد کر لیں… کم از کم وہ تین دعائیں جو گذشتہ رنگ ونور میں تھیں… اور اسی طرح کی مزید جامع دعائیں… دعاء یاد کرنا بہت آسان کام ہے… طریقہ یہ ہے کہ کسی ترجمہ جاننے والے کے پاس بیٹھ کر دعاء کے ہر ہر لفظ کو الگ الگ کر کے… اس کا ترجمہ سمجھ لیں… آپ حیران ہوں گے کہ… عربی کے اکثر الفاظ وہی ہیں جو ہم اردو میں بھی استعمال کرتے ہیں…

جب ترجمہ اچھی طرح سمجھ میں آ جائے تو اب ایک ایک جملہ یاد کرتے جائیں… جب کوئی جملہ یاد ہو جائے تو اسے پچھلے جملے کے ساتھ دہرائیں… بس اس طرح بہت آسانی سے دعاء یاد ہو جائے گی… ایک دعاء یاد کر کے سارا دن چلتے پھرتے اسے دہراتے رہیں… مانگتے رہیں …جو ملے اسے سناتے رہیں… ان معاملات میں شرم کرنا محرومی کی بات ہے…

تیسرا کام

دوسرے مسلمانوں کو ’’قنوت نازلہ‘‘ کا مسئلہ سمجھائیں…اپنی اپنی مساجد میں بغیر جھگڑا ڈالے… اتفاق و مشاورت کے ساتھ ’’قنوت نازلہ‘‘ شروع کرائیں… ’’قنوت نازلہ‘‘ کی دعائیں مسلمانوں کو یاد کرائیں اور اُن کا ترجمہ انہیں سمجھائیں تاکہ… جب امام صاحب پڑھیں تو ہر کوئی اچھی طرح سمجھ کر آمین کہے اور مانگنے کی کیفیت نصیب ہو… اور جب ہم اکیلے نماز پڑھیں تو خود جہری نمازوں میں ’’قنوت نازلہ‘‘ کا اہتمام کریں… اسی طرح اگر کبھی کسی مصیبت میں پھنس جائیں… یا قید ہو جائیں تو قنوت نازلہ کا عمل ہمارے ساتھ ہو اور ہم اپنی نمازوں میں فوراً اسے شروع کر دیں… آج مسلمانوں کو کافروں سے محبت کا سبق پڑھایا جا رہا ہے… آج مسلمانوںکو کافروں کے نقش قدم پر چلنے کی دعوت دی جارہی ہے… آج مسلمانوں کو غلامی کے آداب سکھائے جا رہے ہیں کہ…کس طرح ہم نے زمانے کے ساتھ ساتھ چلنا ہے… آج مسلمانوں کے دلوں میں کافروں کی عظمت بٹھائی جا رہی ہے کہ… وہ ہم سے کس طرح آگے ہیں … استغفر اللہ، استغفر اللہ…لا حول ولا قوۃ الا باللہ…کیسے ظالمانہ اسباق آج اصلاح کے نام پر مسلمانوں میں پھیلائے جا رہے ہیں… وہ دشمنان اسلام جو لعنت کے مستحق ہیں… جو امت مسلمہ کے قاتل ہیں… جو ہماری نسل تک مٹانے کے درپے ہیں جب تک ہم ان کی دشمنی کو محسوس نہیں کریں گے… اس وقت تک ہم ان کے مقابلے میں کھڑے نہیں ہو سکیں گے… ہمیں امت مسلمہ میں آزادی کی روح بیدار کرنی ہو گی … ہمیں امت مسلمہ کو اس کی عظمت کا احساس دلانا ہو گا… ہمیں امت مسلمہ کو اس کے غلبے کی یاد دلانی ہو گی…

اس کے لئے ایک بہترین طریقہ … قنوت نازلہ کی سنت کا احیاء بھی ہے کیونکہ’’ قنوت نازلہ‘‘ کا بنیادی مقصد… اہل ایمان کے لئے نصرت و غلبہ مانگنا … اور  دشمنان اسلام کے لئے لعنت اور غضب الہٰی کا سوال ہے…

جب ہمیں اس بات کا احساس ہو گا کہ … کفر و شرک کوئی معمولی گناہ نہیں ہیں … بلکہ یہ وہ جرائم ہیں … جن پر اللہ تعالیٰ کی اور تمام مخلوق کی لعنت برستی ہے تو پھر ہم… کفر و شرک کی غلامی کبھی گوارہ نہیں کریں گے…اور نہ ان کی ظاہری ترقی ہمیں کسی بھی طرح متاثر کرے گی…

خواتین اسلام سے گزارش

مسلمان خواتین میں… کئی ’’اہل دعائ‘‘ ہوتی ہیں… ’’اہل دعائ‘‘ ایک روحانی مقام ہے جو کہ کسی کسی مسلمان کو نصیب ہو جاتا ہے… اور مسلمان عورتوں کو یہ مقام زیادہ ملتا ہے… امت میں بڑی بڑی ’’اہل دعائ‘‘ خواتین ہر زمانے میں گزری ہیں… اور ان شاء اللہ اس زمانے میں بھی موجود ہوں گی… کیونکہ ماشاء اللہ یہ جہاد اور قربانی کا زمانہ ہے… قنوت نازلہ چونکہ امت مسلمہ کی ضرورت ہے اس لئے خواتین کو بھی… اپنی نمازوں میں اس کا اہتمام کرنا چاہیے… جب بھی کوئی حادثہ یا واقعہ ہو… تو خواتین چند دن کے لئے قنوت نازلہ کا اہتمام کر لیا کریں… پھر کچھ دن چھوڑ دیا کریں… پھر شروع کر دیا کریں … آج کل جیسے ہی کوئی حادثہ ہوتا ہے تو… کچھ لاڈلے بس یہی فرمائش شروع کر دیتے ہیں کہ … فوراً مذمتی بیان جاری ہو… مظلوموں کی ویڈیوز شیئر کی جائیں… یعنی صرف سوشل میڈیا پر ہی سارا اودھم مچایا جائے… اور پھر کبھی کبھی انہیں یہ وہم بھی لگ جاتا ہے کہ… سوشل میڈیا پر ان کے شور سے اقوام متحدہ لرز اُٹھی ہے… اور کابل کی حکومت بھی گھٹنوں کے بل بیٹھ گئی ہے… حالانکہ یہ صرف وہم ہوتا ہے… اقوام متحدہ کو سب جانتے ہیں…وہ آپ کے سوشل پیغامات نہیں پڑھتی … اور نہ ہی اس کی بنائی ہوئی کمیٹیاں مسلمانوں کے مسائل حل کرتی ہیں… بہرحال سوشل میڈیا ایک فضول سی مجبوری بن چکی ہے اورکچھ بھی نہیں…

ظالمانہ واقعات کی آپ ضرور مذمت کریں … آپ اُن پر ضرور آواز اُٹھائیں…آپ سے جتنا ہو سکتاہو ظلم کو بے نقاب کریں… یہ اچھی بات ہے مگر آپ دوسروں کو طعنے نہ دیں کہ فلاں کیوں خاموش ہے؟ فلاں کیوں نہیں بول رہا… کچھ لوگ بولتے نہیں مگر وہی  بہت کچھ کر لیتے ہیں … دوسرا آپ اپنے اس عمل کو اپنے لئے کافی نہ سمجھیں… یہ شور شرابا بہت معمولی درجے کا کام ہے… اصل کام یہ ہے کہ آپ جہاد کی نیت کریں …جہاد کی تیاری کریں اور جہاد میں شرکت کریں اور دوسرا بڑا کام یہ ہے کہ… آپ ’’قنوت نازلہ‘‘ کا اہتمام کریں اور قنوت نازلہ کا ماحول بنائیں … یعنی خود قاتلوں اور ظالموں سے فریاد کرنے کی بجائے کہ… وہ ہمارے لئے کمیٹیاں اور کمیشن بنائیں…

ہم اللہ تعالیٰ سے فریاد کریں کہ… وہ ظالموں اور قاتلوں کو ملعون و برباد فرمائے اور ہمیں قوت اور عمل کی توفیق عطاء فرمائے…

خواتین اسلام کی دعاؤں میں بڑا سوز ہوتا ہے… آج امت مسلمہ کی بیٹیاں بہت مظلوم ہیں … مگر بہت با ہمت ہیں… اللہ تعالیٰ نے خواتین میں ’’منوانے‘‘ کی صلاحیت رکھی ہے… آپ ایسے مواقع پر … جیسا کہ ابھی قندوز میں ہوا… فلسطین میں ہو رہا ہے… کل ہی شام میں کیمیاوی ہتھیار استعمال ہوئے… کشمیر بھی لہولہان ہے … ’’قنوت نازلہ‘‘ کا اپنی نمازوں میں مکمل خشوع و خصوع کے ساتھ اہتمام کریں…

آہ ! اسیرانِ اسلام

حضرت آقا محمدمدنیﷺنے… مکہ میں محبوس مسلمانوں کے لئے ’’قنوت نازلہ‘‘ کا اہتمام فرمایا … آج دنیا میں جگہ جگہ اسیرانِ اسلام کی ’’دردناک داستانیں ‘‘ بکھری پڑی ہیں… کسی کو بیس سال ہو گئے تو کسی کو پچیس سال… کوئی جیلوں میں ہی شہید ہو گیا تو اکثر معذوری اور بڑھاپے کا شکار ہو گئے… اب تو مسلمانوں نے اُن کے لئے سوچنا تک چھوڑ دیا ہے… وہ یاد آتے ہیں تو دل بے ساختہ رونے لگتا ہے… اور اپنی ذات سے شرم محسوس ہونے لگتی ہے… اتنی بڑی امت مسلمہ ایک عافیہ بہن کو نہ چھڑا سکی… آہ! اسیران اسلام آہ ! راہ عشق کے معتکفین … ہم قنوت نازلہ میں ان سب کے لئے دعاء شروع کر دیں… کچھ آنسو، کچھ آہیں اور کچھ دعائیں … اللہ تعالیٰ سے امید ہے کہ برف پگھلے گی… توفیق کے دروازے کھلیں گے… اور امت مسلمہ کے یہ عظیم افراد…آزادی دیکھیں گے ان شاء اللہ

لا الہ الا اللّٰہ،لا الہ الا اللّٰہ،لا الہ الا اللّٰہ محمد رسول اللّٰہ

اللہم صل علی سیدنا محمد والہ وصحبہ وبارک وسلم تسلیما کثیرا کثیرا

لا الہ الا اللّٰہ محمد رسول اللّٰہ

٭…٭…٭

 

قنوت نازلہ

 اَللّٰھُمَّ انْصُرِ الْاِ سْلَامَ وَالْمُسْلِمِیْنَ وَاَنْجِزْ وَعْدَکَ وَکَانَ حَقًا عَلَیْنَا نَصْرُ الْمُوْمِنِیْنَ اَللّٰھُمَّ اَلِّفْ بَیْنَ قُلُوْبِھِمْ وَاَصْلِحْ ذَاتَ بَیْنِھِمْ وَانْصُرْھُمْ عَلٰی عَدُوِّکَ وَعَدُوِّھِمْ ۔ اَللّٰھُمَّ اَھْلِکِ الْکَفَرَۃَ الَّذِیْنَ یَصُدُّوْنَ عَنْ سَبِیْلِکَ و َیُکَذِّبُوْنَ رُسُلَکَ وَ یُقَاتِلُوْنَ اَوْلِیَائَکَ۔ اَللّٰھُمَّ خَالِفْ بَیْنَ کَلِمَتِھِمْ وَ زَلْزِلْ اَقْدَامَھُمْ۔ اَللّٰھُمَّ شَتِّتْ شَمْلَھُمْ وَ فَرِّقْ جَمْعَھُمْ وَ خَرِّبْ بِلَا دَھُمْ۔ اَللّٰھُمَّ اَلْقِ فِی قُلُوْبِھِمْ الرُّعْبَ۔ اَللّٰھُمَّ خُذْھُمْ اَخْذَ عَزِیْزٍ مُّقْتَدِرْ۔ اَللّٰھُمَّ اِنَّا نَجْعَلُکَ فِی نُحُورِھِمْ وَ نَعُوْذُ بِکَ مِنْ شُرُوْرِھِمْ۔ اَللّٰھُمَّ اَنْزِلْ بِھِمْ بَأسَکَ الَّذِیْ لَا تَرُدُّہُ عَنِ الْقَوْمِ الْمُجْرِمِیْنَ

اے اللہ! اسلام اور مسلمانوں کی مددفرمادیجیے، اور اپنا وہ وعدہ پورا فرمادیجیے(جس میں آپ نے فرمایا ہے کہ)اور ہم پر لازم ہے اہل ایمان کی مدد کرنا۔ اے اللہ! اہل ایمان کے دلوں میں باہمی الفت ڈال دیجیے، اور ان کے باہمی تعلقات سُدھار دیجیے، اور آپ اپنے دشمنوں اوران کے دشمنوں کے مقابلے میں انہیں مدد دیدیجیے۔ اے اللہ! اُن کافروں کو تباہ کردیجیے جو آپ کے راستے سے روکتے ہیں، اور آپ کے رسولوں کو جھٹلاتے ہیں، اور آپ کے دوستوں سے لڑتے ہیں۔ اے اللہ! اُن کافروں کی باتیں میں باہمی اختلاف ڈال دیجیے، اوران کے قدموں کو لڑکھڑا دیجیے، اوران کے معاملات کو منتشر فرمادیجیے، اور اُن کی اجتماعیت کو ٹکڑے ٹکڑے کردیجیے، اور ان کے شہروں اور ملکوں کو ویران کردیجیے۔ اے اللہ! ان کے دلوں میں رُعب ڈال دیجیے۔ اے اللہ! انہیں غالب اور کامل قدرت والی ذات کے پکڑنے کی طرح پکڑ لیجیے۔ اے اللہ! ہم آپ کو ان کی گردنوں پر مسلط ہوجانے کی التجاء کرتے ہیں اور ان کے شرور سے آپ کی پناہ میں آتے ہیں۔ اے اللہ! ان پر ایسا عذاب نازل فرمادیجیے جس عذاب کو آپ مجرم لوگوں سے ہٹاتے نہیں ہیں۔

اَللّٰھُمَّ اھْدِنِی فِیْ مَنْ ھَدَیْتَ وَعَافِنِیْ فِیْمَنْ عَافَیْتَ وَتَوَلَّنِیْ فِیْمَنْ تَوَلَّیْتَ ، وَ بَارِکْ لِی فِیْمَا اَعْطَیْتَ وَ قِنِیْ شَرَّ مَاقَضَیْتَ ، فَاِنَّکَ تَقْضِیْ وَ لَایُقْضٰی عَلَیْکَ ۔ اِنَّہ لَا یَذِلُّ مَنْ وَّالَیْتَ وَ لَا یَعِزُّ مَنْ عَادَیْتَ ، تَبَارَکَ رَبَّنَا وَتَعَالَیْتَ

اے اللہ ! مجھے بھی ان لوگوں کے ساتھ ہدایت عطاء فرمائیے ، جنہیں آپ نے ہدایت دی ہے اور مجھے بھی اُن لوگوں کے ساتھ عافیت میں رکھئے ، جن کو آپ نے عافیت سے سرفراز فرمایا ہے اور میری بھی ان لوگوں کے ساتھ نگہداشت فرمایئے ، جن کو آپ نے اپنی نگہداشت میں رکھا ہے ، جو کچھ آپ نے عطاء فرمایا ہے، اس میں میرے لئے برکت عطاء فرمایئے ، قضاء و قدر کے شر سے میری حفاظت فرمائیے، کیونکہ آپ فیصلہ کرتے ہیں ، آپ کے خلاف کوئی فیصلہ نہیں کیا جاسکتا ، جسے آپ دوست بنالیں، وہ ذلیل نہیں ہو سکتا اور جس کے آپ دشمن ہوں، وہ باعزت نہیں ہو سکتا ، پروردگار ! آپ کی ذات ، مبارک اور بلند ہے۔

(جب جماعت کی نماز میں یہ دعاء پڑھیں تو جمع متکلم کی صیغہ بنادیں…مثلا: اَللّٰھُمَّ اھْدِنَا … وَ عَافِنَا وَ تَوَلَّنَا)

اَللّٰھُمَّ اغْفِرْ لِلْمُوْمِنِیْنَ وَالْمُوْمِنَاتِ وَالْمُسْلِمِیْنَ وَالْمُسْلِمَاتِ وَاَلِّفْ بَیْنِ قُلُوْبِھِمْ وَاَصْلِحْ ذَاتَ بَیْنِہِمْ وَ انْصُرْھُمْ عَلی عَدُوِّکَ وَعَدُوِّھِمْ ۔ اَللّٰھُمَّ الْعَنْ کَفَرَۃَ اَھْلِ الْکِتَابِ الَّذِیْنَ یُکَذِّبُوْنَ رُسُلَکَ وَیُقَاتِلُوْنَ اَوْلِیَائَ کَ ۔ اَللّٰھُمَّ خَالِفْ بَیْنَ کَلِمَتِہِمْ وَ زَلْزِلْ اَقْدَامَھُمْ وَ اَنْزِلْ بِھِمْ بَاْ سَکَ الَّذِیْ لَا تَرُدُّہُ عَنِ الْقَوْمِ الْمُجْرِمِیْنَ۔

الٰہی ! صاحب ایمان مردوں اور عورتوں اور مسلمان مردوں اور عورتوں کی مغفرت فرما دیجئے ، ان کے دلوں کو جوڑ دیجئے ، ان کے باہمی اختلاف کو دور فرما دیجئے ، ان کی آپ کے دشمن اور ان کے دشمن کے مقابل مدد فرمایئے ، اے اللہ! کفار اہل کتاب پر آپ کی لعنت ہو، جو آپ کے رسولوں کو جھٹلاتے ہیں اور آپ کے اولیاء سے بر سر پیکار ہیں ، اے اللہ ! ان کے درمیان اختلاف پیدا کر دیجئے ، ان کے قدم کو متزلزل فرما دیجئے اور ان کو آپ اپنے اس عذاب میں مبتلا فرمایئے ، جو مجرم لوگوں سے ہٹایا نہیں جاتا۔

رنگین صفحات کے مضامین

  • رنگ و نور ۔ سعدی کے قلم سے
  • Rangonoor English
  • Message Corner
  • رنگ و نور پشتو ترجمہ
  • کلمۂ حق ۔ مولانا محمد منصور احمد
  • السلام علیکم ۔ طلحہ السیف
  • قلم تلوار ۔ نوید مسعود ہاشمی
  • نقش جمال ۔ مدثر جمال تونسوی
  • سوچتا رہ گیا ۔ نورانی کے قلم سے

Alqalam Latest Epaper

Alqalam Latest Newspaper

  • القلم کے گذشتہ شمارے و مضامین
  • کارٹون
TAKWIR Web Designing (www.takwir.com) Copyrights Alqalam Weekly Online