Bismillah

656

۲۸ذوالقعدہ تا ۴ ذوالحجہ ۱۴۳۹ھ  بمطابق    ۱۷تا۳۰اگست۲۰۱۸ء

خواتین اسلام سے رسول اکرمﷺ کی باتیں (شمارہ 631)

خواتین اسلام سے رسول اکرمﷺ کی باتیں

(شمارہ 631)

حضرت ابو ذر رضی اللہ تعالیٰ عنہ فرماتے ہیں کہ رسول اللہﷺ نے ارشاد فرمایا:مسلمان کے سامنے تمہارا مسکرانا صدقہ ہے اور بھلائی کا حکم کرنا صدقہ ہے اور برائی سے روکنا صدقہ ہے اور راہ بھٹکے ہوئے کو راہ دکھانا صدقہ ہے اور کمزور بینائی والے کی مدد کرنا صدقہ ہے اور راستہ سے پتھر، کانٹا، ہڈی دور کردینا صدقہ ہے اور اپنے ڈول سے بھائی کے ڈول میں پانی ڈال دینا صدقہ ہے۔(ترمذی)

حضرت عائشہ رضی اللہ تعالیٰ عنہا سے روایت ہے کہ حضور اقدسﷺنے فرمایا : ہرانسان تین سو ساٹھ جوڑوں پر پیدا کیا گیا ہے( یعنی ہر انسان کے جسم میں تین سو ساٹھ جوڑ ہیں، جن کے ذریعہ اُٹھتا بیٹھتا ہے اور ہاتھ پائوں موڑتا ہے اور چیزیں پکڑتا ہے اور ان جوڑوں کے شکریہ میں روزانہ صدقہ کرنا واجب ہے، سو جس نے اللہ اکبر کہا اور الحمدللہ کہا اور لا الہ الا اللہ کہا اور سبحان اللہ کہا اور استغفراللہ کہا اور لوگوں کے راستہ سے پتھر یا کا نٹا یا ہڈی ہٹادی یا بھلائی کا حکم دیا یا برائی سے روک دیا اور (سب مل کریا ان کے میں ایک ہی عمل ) تین سو ساٹھ کے عدد کے برابر ہوگیا تو وہ اس دن اس حال میں چلتا پھرتا ہوگا کہ اس نے اپنی جان کو دوزخ سے بچالیا ہوگا۔(مسلم)

جب راستہ سے تکلیف دینے والی چیز ہٹانے کایہ اجروثواب ہے تو اس کے برعکس راستہ میں تکلیف دینے والی چیز ڈالنے کا کیا وبال ہوگا؟اس پر غور کرنا چاہیے بہت سے لوگ اپنا گھر تو صاف کرلیتے ہیں لیکن گھر کا کوڑا کرکٹ، کچرا، گندگی، سڑے ہوئے پھل اور بدبودار سالن وغیرہ راستہ میں پھینک دیتے ہیں جس سے آنے جانے والوں کو شدید تکلیف ہوتی ہے ایسا بھی ہوتا ہے کہ راہ چلتے ہوئے کیلے خریدے اور چھیل کر کھانا شروع کردیا یا بچوں کو دے دیا اور چھلکا لب سڑک وہیں پھینک دیا، سب کو معلوم ہے کہ راستہ میں کیلے کا چھلکا پھینکنا بہت خطرناک ہوتا ہے بعض مرتبہ اس پر پیر پڑ کر پھسل جاتا ہے تو اچھی خاصی تکلیف پہنچ جاتی ہے راستہ میں تکلیف دینے والی چیز ہر گزنہ ڈالیں اور ایسی کوئی چیز راستہ میں پڑی ملے جس سے تکلیف پہنچ سکتی ہے تو اسے ہٹا کر ثواب کمائیں۔

پردہ پوشی کا اجر و ثواب

حضرت عقبہ بن عامر رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ حضوراقدسﷺ نے ارشاد فرمایا :جس نے کسی میںکوئی عیب کی بات دیکھی پھر اس کو چھپا لیا( تو ثواب کے اعتبار سے) وہ شخص ایسا ہے جیسے کسی زندہ دفن کی ہوئی لڑکی کو زندہ کردیا۔( مشکوٰۃ المصابیح ص ۴۲۴ازا حمد و الترمذی)

اس حدیث مبارک میں عیب پوشی کا ثواب بتایاگیا ہے، اسلام سے پہلے یعنی جاہلیت کے زمانہ میں عرب کے لوگ اس بات کو بہت ناگوار سمجھتے تھے کہ ان کے گھر میں لڑکی پیدا ہوجائے ،اگر لڑکی پیدا ہونے کی خبر ملتی تھی تو شرم کے مارے چھپے چھپے پھرتے تھے اور بہت سے ظالم ایسے تھے کہ لڑکی پیدا ہوجاتی تو اس کو زندہ دفن کردیتے تھے، جو گڑھے کے اندر مٹی میں دب کر مرجاتی تھی اسی کو قرآن مجید میں فرمایا:

واذاالموء دۃ سئلت  بای ذنب قتلت

(اور جب زندہ دفن کی ہوئی لڑکی کے بارے میں سوال کیا جائے گا کہ کس گناہ کے سبب قتل کی گئی)

 اس بات کو سمجھنے کے بعد یہ سمجھو کہ حضورﷺ نے عیب پوشی کا ثواب بتاتے ہوئے ارشاد فرمایا کہ جس نے کسی کی کوئی عیب کی بات دیکھی پھر اس کو چھپایا اورکسی پر ظاہر نہ کیا، تو اس کو اتنا بڑا ثواب ملے گا جیسے اس نے اس لڑکی کوزندہ کردیا جو قبر میں زندہ دفن کردی گئی تھی،اس ثواب کو اس انداز میں بتانے میں ایک دقیق اور باریک حکمت کی طرف اشارہ ہے اور وہ یہ کہ جب کسی شخص کا کوئی عیب ظاہر ہوجاتا ہے تو وہ اپنی اس رسوائی کے مقابلہ میں مرجانا بہترسمجھتا ہے پس جس شخص نے اس کے عیب کی پردہ پوشی کی گویا کہ اس کو زندہ کردیا، رسوائی سے بچانا اس کو دوبار ہ زندگی دینے کے مترداف قرار دیا گیا۔

 حضرت عبداللہ بن عمررضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ حضور اقدسﷺ نے فرمایا : مسلمان مسلمان کا بھائی ہے، نہ اس پر ظلم کرے،نہ اس کو (مصیبت کے وقت) بے یارومدد گار چھوڑے اور جوشخص اپنے بھائی کی حاجت میں لگا رہتا ہے، اللہ تعالیٰ اس کی حاجت روائی فرماتے ہیں اور جس نے کسی مسلمان کی بے چینی دور کردی اللہ تعالیٰ قیامت کے دن اس کی پریشانیوں میں سے اس کی ایک پریشانی دور فرمائیں گے اور جس نے کسی مسلمان کی پردہ پوشی کی قیامت کے دن اللہ تعالیٰ اس کی پردہ پوشی فرمائیں گے۔( بخاری و مسلم)

(جاری ہے)

رنگین صفحات کے مضامین

  • رنگ و نور ۔ سعدی کے قلم سے
  • Rangonoor English
  • Message Corner
  • رنگ و نور پشتو ترجمہ
  • کلمۂ حق ۔ مولانا محمد منصور احمد
  • السلام علیکم ۔ طلحہ السیف
  • قلم تلوار ۔ نوید مسعود ہاشمی
  • نقش جمال ۔ مدثر جمال تونسوی
  • سوچتا رہ گیا ۔ نورانی کے قلم سے

Alqalam Latest Epaper

Alqalam Latest Newspaper

  • القلم کے گذشتہ شمارے و مضامین
  • کارٹون
TAKWIR Web Designing (www.takwir.com) Copyrights Alqalam Weekly Online