Bismillah

694


۱۰رمضان المبارک۱۴۴۰ھ

سوانح حضرت امیرِ شریعتؒ (قسط۳۰)

سوانح حضرت امیرِ شریعتؒ  (قسط ۳۰)

(شمارہ 586)

نعت شریف

لَوْلَاکَ ذرّئہ زجہانِ محمد است

  سُبْحَانَ مَنْ یَّرَاہ چہ شانِ محمد است

سیپارئہ کلامِ الہٰی خدا گواہ

آں ہم عبارتے ززُبانِ محمد است

نازدبنام پاکِ محمد کلام پاک

 نازم بآں کلام کہ جانِ محمدا ست

توحیدراکہ نقطۂ پُرکارِ دین ماست

دانی! کہ نکتۂ زبانِ محمد است

سرِّ قضاء وقدر ہمیں است اے ندیمؔ

پیکان امرحق زکمانِ محمد است

٭…٭…٭

درمدحِ خواجہ غلام فریدرحمہ اللہ

گلخنِ عشقِ چشتیاں بہ طپید

شعلہ اش خواجۂ غلام فرید

ہرکہ ازعشق جرعہ نہ چشید

اوچہ داندکہ چیست خواجہ فرید

مرغ فکرم زآشیاں بہ پرید

نالہائے فرید چوں بشنید

رہبر عاشقانِ پاک سرشت

شاہد عاشقانِ بزم وحید

ہر کسے سوئے منزل است رواں

کسے آں جارسید و کس نہ رسید

 خواجہ درذات آنچناں پیوست

 ہمچوآں ذات نزدحبل ورید

خواجہ راداندآں حبیب کہ او

جرعہ عشق ذات پاک چشید

دیگراں بخیہ کا روخواجۂ ما

جامۂ عشق پارہ پارہ درید

سرمۂ چشم شد بخاری را

خاک پائے خواجہ فرید

حسرتے ازدلِ ندیمؔ نہ رفت

کہ نصیبش نہ شدنگاہِ فرید

ہرکہ بدگفت خواجۂ مارا

ہست اوبے گماں یزید پلید

٭…٭…٭

بخت اگر رساشودوست دہدسبوئے خوش

ازنگہ سمن برے لالہ رخے نکوئے خوش

باغ وبہار ماندیمؔ یعنی کہ جنت النعیم

روئے خوش است ہے وخوئے

خوش بوئے خوش وگلوئے خوش

…………

یک نانِ جویں زخوان شاہی خوشتر

ازچنگ ورباب آہ صبح گا ہی خوشتر

ازتیرنگاہ زخم کاری دارم

خون جگرم زمرغ وماہی خوشتر

یک لحظہ بزیر سایۂ قدیار

واللہ! زہزار چتر شاہی خوشتر

…………

جب تک کہ غیر حق کی یونہی بندگی ہے دوست؟

یہ زندگی بھی میری کوئی زندگی ہے دوست

ذروں سے تابہ مہرستاروں سے تاچمن

عکسِ جما لِ یار کی تابندگی ہے دوست

…………

نازنینان جہاں، نازفراموش شدند

کہ گدائے تو باندازدگرمی نازد

نازدارد بہ دُرافشانیٔ خودابربہار

دردمند توبنا سور جگرمی نازد

پارسایاں ہمہ نازندبہ زہد وطاعت

یک ندیمؔ است کہ بردامن ترمی نازد

…………

چہ گوئمیت زکمال فرنگِ دشمن دیں؟

نشان دہدزمقامے کہ اہرمن چہ رسد؟

سبوشکستہ وخم خالیٔ وخرابہ تباہ

زدست ساقیٔ تشنہ بہ انجمن چہ رسد؟

بہ ذرہ ذرہ سجودے نصیبِ ماشدہ است

 بگوندیمؔ! کہ اکنوں بہ برہمن چہ رسد؟

…………

وحدۃ بوجدوحالت کثرت درآمدہ

حرکت بجلوہ جلوہ بہ حرکت درآمدہ

موسیٰ و طورووادیٔ ایمن حرآء حرم

ہرجاکہ دیدہ ایست بحیرت درآمدہ

…………

ہاں لالہ زغم خوں شدوازہجر سمن زرداست

ایں دیدۂ احمر ہم وایں چہرئہ اصفرہم

 دردے بہ جگر دار دبیمار غمت زینساں

 خواہدنہ مد اویٔ جوید نہ گہے مرہم

…………

ازشاخِ جنوں فتادہ برگیم

مردیم ودر انتظار مرگیم

باایں ہمہ ضعف وناتوانائی

دانی! کہ چہ کارہانہ کردیم؟

مامسلکِ رو بھحا نہ رفتیم

ماپیرویٔ خزاں نہ کردیم

برمسند فقریگانہ فردیم

…………

زلفیں ہوںگی شانے ہوں گے

کہیں کہیں افسانے ہوں گے

دین اور مذہب کے مرقد پر

شمعیں اور پروانے ہوں گے

…………

وہ آنکھوں میں موجود اور چشم حیراں؟

اِدھر ڈھونڈتی ہے اُدھر ڈھونڈتی ہے

…………

اپنے ہی چند تنکوں کی یہ تیلیاں نہ ہوں؟

دھڑکے ہے دل قفس میں غم آشیاںسے

…………

شیخ صاحب ہمیں بندوں کی اداء تو دکھلائیں

 پھر بتائیں ہمیں بندے سے خدا ہوجانا!

…………

حماقت کی حد ہے کہ سولی پہ چڑھ کر

سمجھتا ہے بندہ خدا ہوگیا میں!

…………

دار کے حقدار کو اورقید سہ سالہ ملے؟

ہائے قسمت ،مشکل آساں ہوتے ہوتے رہ گئی!

…………

چمن کو اس لئے مالی نے خوں سے سینچا تھا!

کہ اس کی اپنی نگاہیں بہار کو ترسیں؟

…………

گر ہودوا عشق کی تلخی نصیب عقل؟

بنتی ہے پھر توبادہ وساغر کہے بغیر

…………

مونس من انیس من

درشبِ غم جلیس من

…………

 زمانہ ہر کروٹ میں لاکھوں رنگ بدلتا ہے

مگر اس کو بھی حسرت ہے کہ ہو گرگٹ نہیں سکتا

…………

نعرہ از پاکیٔ داماں می زنم

دست برپیمانہ پنہاں می زنم

…………

آستینم بَرُخ وداغ بداماں رفتم

بچہ طور آمدہ بودم بچہ عنواں رفتم؟

…………

سب سے پہلے حسن کی رغائیاں ناپی گئیں

پھر ہمارے عشق کی پہنائیاں ناپی گئیں!

٭…٭…٭

بہاریہ نعت

ہزار صبح بہار از نگاہ می چکدش

جنوں زسایۂ زلفِ سیاہ می جکدش

چمن چمن گل ونسرین زعکس رخ ایزد

چہ خندئہ وچہ تبسم زجاہ می چکدش

صدآفتاب بہ زیرِ گلیم می رخشد

زدلقِ فقرچہ گویم کہ ماہ می چکدش

چہ شورہاست بجا نم زخندۂ نمکیں

چہ فتنہ ہاکہ زچشم ِسیاہ می چکدش

ہزار حشربدامن ہزارفتنہ بجیب

ہزار فتنہ زچشمِ سیاہ می چکدش

چہ گفتگو چہ تبسم شہاد تے بحدوث

زنور چہرہ قدم را گواہ می چکدش

قدم بہ جلوہ بہ بیں و حدوث رابہ جبیں

چہ جلوہ وچہ جبیں لاالہ می چکدش

نگہ کنیدبہ بختِ بلند بیوہ زنے

کہ ازکنارِ غریبش چہ ماہ می چکدش

حذر زخاک نشینے شکستۂ دلریش

کہ صد ہزار جہنم زآہ می چکدش

زمہرو ماہ سلام وزبرگ برگ درود

چہ خاک طیبہ کہ شام وپگاہ می چکدش

بہ تو ندیمؔ سیہ روچہ ماجرا گوید

جزایں کہ ازسرہر موگناہ می چکدش

حضرت شاہ صاحب رحمۃ اللہ علیہ ندیمؔ تخلص فرماتے تھے

روزنامہ امروز:۱۵ اکتوبر ۱۹۶۱ء؁)

٭…٭…٭

رنگین صفحات کے مضامین

  • رنگ و نور ۔ سعدی کے قلم سے
  • Rangonoor English
  • Message Corner
  • رنگ و نور پشتو ترجمہ
  • کلمۂ حق ۔ مولانا محمد منصور احمد
  • السلام علیکم ۔ طلحہ السیف
  • قلم تلوار ۔ نوید مسعود ہاشمی
  • نقش جمال ۔ مدثر جمال تونسوی
  • سوچتا رہ گیا ۔ نورانی کے قلم سے

Alqalam Latest Epaper

Alqalam Latest Newspaper

Rangonoor Web Designing Copyrights Khabarnama Rangonoor