Bismillah

694


۱۰رمضان المبارک۱۴۴۰ھ

نفیس پھُول ۔ 664

نفیس پھُول

امام جمال الدین ابن الجوزیؒ

(شمارہ 664)

اور فکر خوراک و پوشاک کے لئے چکر کاٹتا ہے اور دیکھتا ہے کل کے لئے کیا موجود ہے بلکہ سال بھر کے لئے کیا جمع ہے اور اس کے لئے تدابیر سوچتا ہے اور کھانے پینے میں مشغول رہتے رہتے ان فضلات کے خارج کرنے کی فکر بھی لگتی ہے جو موذی بھی ثابت ہوجاتے ہیں مثلا ً مادہ وغیرہ اور اس کے لئے نکاح کی حاجت پڑتی ہے پھر دیکھتا ہے کہ اس کے لئے کسب دنیا کے بغیر چارہ نہیں تو اس کی فکر اور اس کے تقاضوں میں لگ جاتا ہے، پھر اولاد ہونے لگتی ہے تو اس کے لوازمات میں الجھتا ہے، گو یا دنیا کے اصول و فروع میں اسی کی فکر کا عمل دخل ہے اور جب انسان مجلس میں آتا ہے تو بھوکا نہیں ہوتا اور نہ ہی کسی تقاضے کو دبائے ہوئے ہوتا ہے بلکہ اپنی پوری ہمت وارادہ کے ساتھ آتا ہے اور دنیا کے مشاغل سے یکسو ہو کر آتا ہے تو وعظ اس کے دل میں اترتا ہے اور اس کو اس کی مانوس باتیں یاددلاتا ہے اور سابقہ معرفت کی طرف کھینچتا ہے جس سے دل کے جذبات عرفان کی سواری پر سوار ہو کر تیار ہوتے ہیں اور نفس کو اس کی غفلت اور انہماک سے ہٹانے کے لئے حاضر ہوتے ہیں اور گذشتہ کوتاہیوں پر احساس کو جھنجوڑتے ہیں تو انکھیں مذمت سے بہنے لگتی ہیں اور تلافی کے لئے عزائم پختہ ہونے لگتے ہیں اور یہ نفس ان مشاغل میں غرق نہ ہوتا جن کا تذکرہ پہلے ہوچکا ہے تو یہ اپنے رب تعالیٰ کی طاعت میں لگ سکتا تھا اور جب یہ اللہ تعالیٰ کی محبت کے دائرہ میں داخل ہوجائے تو اسے اس کے قرب کی لذت کی وجہ سے ہر ماسوا سے دہشت ہونے لگتی ہے اسی لئے زاہد لوگ خلوتوں کو مقدم رکھتے ہیں اور موانع سے یکسوئی کی تدابیر کرتے ہیں …

٭…٭…٭

رنگین صفحات کے مضامین

  • رنگ و نور ۔ سعدی کے قلم سے
  • Rangonoor English
  • Message Corner
  • رنگ و نور پشتو ترجمہ
  • کلمۂ حق ۔ مولانا محمد منصور احمد
  • السلام علیکم ۔ طلحہ السیف
  • قلم تلوار ۔ نوید مسعود ہاشمی
  • نقش جمال ۔ مدثر جمال تونسوی
  • سوچتا رہ گیا ۔ نورانی کے قلم سے

Alqalam Latest Epaper

Alqalam Latest Newspaper

Rangonoor Web Designing Copyrights Khabarnama Rangonoor