Bismillah

694


۱۰رمضان المبارک۱۴۴۰ھ

نفیس پھُول ۔ 665

نفیس پھُول

امام جمال الدین ابن الجوزیؒ

(شمارہ 665)

اور اس سلسلہ میں اپنے مجاہدہ کی مقدار پر طاعت خداوندی کے مقصود کو پالیتے ہیں جیساکہ فصل کی کٹائی اس کی کاشت کے تناسب سے ہوتی ہے، مگر مجھے اس میں بھی ایک دقیق و لطیف خرابی محسوس ہوتی ہے اور وہ یہ ہے کہ اگر نفس کی مذکورہ بیداری وہوشیاری ہمیشہ یکساں رہے تو اس کے ایسے شر میں واقع ہونے کا خطرہ ہے جو پہلی خرابی اور نقصان سے کہیں زیادہ ہے مثلاً یہ کہ اپنے حال پر عجب اور خود پسندی دوسروں کو حقیر جاننا اور بسااوقات یہ چیزیں ترقی اختیار کرکے اس قسم کے دعووں تک پہنچا دیتی ہیں کہ میری یہ خصوصیت ہے ، میرے پاس یہ ہے کہ میرے اندر یہ قابلیت اور استحقاق ہے وغیرہ وغیرہ جس سے یہ پھراپنے گناہوں کے صحرا میں بد حواس ہو کر گھو منے لگ جاتا ہے، اگر یہ اندر گھسنے کے بجائے کنارے کے قریب رہتا اپنی عبودیت کی ذلت و درماندگی کا حق ادا کرتا تو کہیں بہتر تھا اور یہ باتیں اکثریت کے لحاظ سے ہیں اسی لئے وہ اس مقام سے ذرا پر ے رہتے ہیں اور جو لوگ اس بیج کو بوتے ہیں اور ان کی فصل بھی درست ہوتی ہے تو پھر ان کے لئے کئی ایک لغزش کے مقام آتے ہیں جہاں پر خوف کی آنکھ ان کی نگہداشت کرتی ہے جس سے ان کی بندگی کو صحت اور عبادت کو سلامتی ملتی ہے، اسی حقیقت کی طرف صحیح حدیث شریف میں اشارہ کیا گیا ہے کہ’’ اگر تم گناہ نہ کرو تو اللہ تعالیٰ تمہیں لے جائے گا اور ایسے لوگوں کو لے آئے گا جو گناہ کر کے اس پر استغفار کریں گے اور اللہ تعالیٰ ان کی مغفرت فرمائیں گے۔‘‘

جاہل صوفیاء

غور و فکر سے مجھے یہ معلوم ہوا کہ مال کی کچھ تعداد جمع کرنا اور محفوظ رکھنا ضروری ہے اور جاہل صوفیاء جو تمام مال سے خالی ہو بیٹھنے کو توکل کا نام دیتے ہیں یہ شریعت میں جائز نہیں ہے۔ آنحضرتﷺ نے حضرت کعب بن مالک رضی اللہ تعالیٰ عنہ کو فرمایا:اپنا کچھ مال محفوظ اور اپنے پاس جمع رکھو۔ نیز اسی طرح کا مضمون حضرت سعد رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے فرمایا: ’’ تو اپنے وارثوں کو غنی چھوڑ کر جائے اس سے بہتر ہے کہ تو انہیں نادار اور بھیک مانگنے والا چھوڑ کر مرے‘‘ اگر کوئی جاہل یہ سوال کرے کہ ابو بکر رضی اللہ عنہ نے تو سارا مال پیش کردیا تھا تو جواب یہ ہے کہ وہ باہمت مرد تھے اور تاجر بھی تھے سارا مال دے کر بھی حسب ضرورت وہ مال لے سکتے تھے اور گزران چلا سکتے تھے، ایسے لوگ اگر سارامال کبھی خرچ لیں تو قابل مذمت نہیں۔لائق مذمت تو وہ لوگ ہیں جو وسائل نہیں رکھتے اور پورا مال صرف کر بیٹھتے ہیں…

رنگین صفحات کے مضامین

  • رنگ و نور ۔ سعدی کے قلم سے
  • Rangonoor English
  • Message Corner
  • رنگ و نور پشتو ترجمہ
  • کلمۂ حق ۔ مولانا محمد منصور احمد
  • السلام علیکم ۔ طلحہ السیف
  • قلم تلوار ۔ نوید مسعود ہاشمی
  • نقش جمال ۔ مدثر جمال تونسوی
  • سوچتا رہ گیا ۔ نورانی کے قلم سے

Alqalam Latest Epaper

Alqalam Latest Newspaper

Rangonoor Web Designing Copyrights Khabarnama Rangonoor