نفیس پھُول ۔ 682

نفیس پھُول

امام جمال الدین ابن الجوزیؒ

(شمارہ 682)

بھلابتائیے کہ ملائکہ کے لئے بھی ان آزمائشوں میں سے کوئی ہے وہاں عبادت کے سواکیا ہے اور اس میں بھی نہ طبیعت کی کوئی مزاحمت نہ خواہش کی کوئی رکاوٹ اور آپ یہ بدگمانی مت کریں کہ میں ملائکہ کی عبادت میں کسی کمی کوتاہی کا قائل ہوں کیونکہ وہ انتہائی خوف و خشیت والے ہیں، اس لئے کہ عظمت خالق کا علم رکھتے ہیں، تاہم بے خطا شخص کا اطمینان وسکون اس کے نفس کو قوت دیتا ہے اور لغزشوں میں غرق شخص کا قلق و اضطراب کی وجہ سے کلیجہ منہ کوآتا ہے، لہٰذا میرے بھائیو! اپنا مقام پہچانو اور اپنے جوہر کوگناہوں کی آلائش سے بچا کے رکھو۔ تم ملائکہ سے افضل مقام والے ہو،بہت ہی احتیاط رکھو ،کہیںگناہ تمہیں چوپایوں کی وادی میں نہ دھکیل دیں۔ ولا حول ولا قوۃ الاباللہ العلی العظیم

وساوس میں غور و خوض

میںنے بہت سے لوگوں کو دیکھا ہے اور بعض عالموں کوبھی کہ وہ ایسی بنیادی باتوں میں بحث کرنے سے باز نہیں آتے کہ جن سے ناواقف رہنے کا اوران کی حقیقت میں بحث نہ کرنے کاانہیں حکم دیا گیا ہے، مثلاًروح ہے اللہ تعالیٰ نے اسے مخفی رکھا ہے، ارشاد ہے:’’آپ فرما دیجئے کہ روح میرے رب کے امر سے ہے‘‘مگر انہوں نے قناعت نہیں اختیار کی اوراس کی ماہیت میں بحث شروع کردی حالانکہ وہ کچھ بھی حاصل نہیں کر پائے اور نہ ہی کوئی ایک اپنے دعویٰ پر کوئی دلیل قائم کر سکا اور یہی معاملہ عقل کا ہے کہ اس کے موجود ہونے میں کوئی شک نہیں جیسا کہ روح لاریب موجود ہے دونوں چیزیں اپنے آثار سے پہچانی جاتی ہیں۔

٭…٭…٭