Bismillah

694


۱۰رمضان المبارک۱۴۴۰ھ

نفیس پھُول ۔ 623

نفیس پھُول

امام جمال الدین ابن الجوزیؒ

(شمارہ 623)

اور یہ شخص جس حال کو چھوڑ بیٹھا تھا اس سے کہیں زیادہ بُرے حال میں مبتلا ہوجاتا ہے اور مرغوبات کے حصول میں سب سے پہلے وہ جو کچھ لگاتا ہے وہ اس کا دین ہوتا ہے اور عزت ہوتی ہے یہ سائل کی طرح ذلیل ہوکر رہ جاتا ہے اور اگر وہ ایک نظر عظیم لوگوں کے احوال پر ڈال لیتا اور صحیح احادیث میں ذرا غور کرلیتا تو پتہ چلتا کہ حضرت ابراہیم علیہ السلام اس قدر مال رکھتے تھے کہ ان کے مویشیوں کے لئے زمین تنگ آگئی تھی اور یہی حال حضرت لوط علیہ السلام کا تھا اور بھی بہت سے انبیاء علیہم السلام کا نیز صحابہ کرام کی کثیر جماعت کا، ان حضرات نے مال نہ ہونے پر صبر کیا مگر اصلاح احوال کے لئے کسب اسباب سے منع نہیں کرتے تھے۔

خود حضرت ابو بکر رضی اللہ عنہ آنحضرتﷺ کے زمانہ میں تجارت کا مشغلہ رکھتے تھے اور ان حضرات میں اکثر ایسے تھے جو بیت المال کے وظیفہ سے بچا ہوا مال پاس نہ رکھتے تھے۔ہاں ساتھیوں کی احتیاج کی ذلت سے بچتے تھے ۔

اور عبداللہ بن عمر رضی اللہ عنہ نہ کسی سے کبھی مانگتے نہ واپس رد کرتے تھے اور میں نے بہت سے اہلِ دین اوراہلِ علم حضرات کو اس حال پر دیکھا ہے کہ شروع شروع میں علمی مشاغل میں لگنے کی وجہ سے کسب مال نہ کرسکے اور جب ضروریات زندگی سے تنگ ہوئے تو ذلت اٹھانی پڑی حالانکہ وہ سب سے بڑھ کر عزت کے لائق تھے ۔

پہلے دورمیں بیت المال اور دیگر احباب کے ضرورت سے زائد مال ان حضرات کو کافی ہوجاتے تھے مگر اب جبکہ وہ سلسلہ باقی نہیں رہا تو ایک دیندار شخص جب کسی ضرورت کو حاصل کرنے کی سکت نہیں رکھتا تو دین کو اس کے لئے استعمال کرتا ہے اور کاش کہ اسے یہ نوبت نہ ہی آتی اور بسا اوقات وہ دین کو ضائع کر بیٹھتا ہے۔ مگر کوئی چیز حاصل نہیں کر پاتا، لہٰذا عاقل انسان کو لازم ہے کہ جو کچھ پاس ہو اس کی حفاظت کرے اور کسب مال کی کوشش بھی کرتا رہے تاکہ ظالم کا احسان مند ہونے سے اور جاہل کی چاپلوسی سے محفوظ رہے۔

(جاری ہے)

رنگین صفحات کے مضامین

  • رنگ و نور ۔ سعدی کے قلم سے
  • Rangonoor English
  • Message Corner
  • رنگ و نور پشتو ترجمہ
  • کلمۂ حق ۔ مولانا محمد منصور احمد
  • السلام علیکم ۔ طلحہ السیف
  • قلم تلوار ۔ نوید مسعود ہاشمی
  • نقش جمال ۔ مدثر جمال تونسوی
  • سوچتا رہ گیا ۔ نورانی کے قلم سے

Alqalam Latest Epaper

Alqalam Latest Newspaper

Rangonoor Web Designing Copyrights Khabarnama Rangonoor