Bismillah

694


۱۰رمضان المبارک۱۴۴۰ھ

خواتین اسلام سے رسول اکرمﷺ کی باتیں (شمارہ 533)

خواتین اسلام سے رسول اکرمﷺ کی باتیں

(شمارہ 533)

جن لوگوں کو نماز تہجد پڑھنے کی عادت ہے ان کو روزانہ یہ وقت نصیب ہوتا ہے جو بہت سہانا وقت ہے، اس وقت بڑے سکون کے ساتھ نماز پڑھنے اور دعاء کرنے کا وقت ملتا ہے، نہ شور وشغب نہ کسی طرح کی آوازیں، نہ بچوں کی لڑائی جھگڑا، نہ اور کوئی قصہ وقضیہ، صرف اللہ سے لولگانے کا وقت ہوتا ہے، اگر نماز تہجد کے لیے اُٹھنے کی توفیق ہوجائے تو کیا کہنے، اگر اُٹھنا نہ ہو اور آنکھ کھل جائے تب بھی کچھ نہ کچھ اس وقت میں اللہ کا ذکر کر ہی لینا چاہئے، اگر چہ لیٹے لیٹے ہی ہو۔

رات میں ایک ایسی گھڑی ہے جس میں دعاء قبول ہوتی ہے

حضرت جابر رضی اللہ عنہ کا بیان ہے کہ میں نے حضوراقدسﷺ کو فرماتے سنا کہ بلاشبہ رات میں ایک ایسی گھڑی ہے کہ جو بھی کوئی مسلمان شخص اس میں اللہ سے دنیا اور آخرت کی کسی خیر کا سوال کرے گا اللہ جلّ شانہٗ اسے ضرور عنایت فرمائے گا اور یہ گھڑی ہر رات ہوتی ہے۔ (مشکوٰۃ المصابیح: ص ۱۰۹ بحوالہ مسلم)

 حضرت ابو امامہ رضی اللہ عنہ کا بیان ہے کہ میں نے حضور اقدسﷺ کو فرماتے ہوئے سنا کہ جو شخص رات کو آرام کرنے کے لیے اپنے بستر پر پاک حالت میں(یعنی باوضو) پہنچا اور اللہ کا ذکرکرتا رہا یہاں تک کہ اسے نیند نے پکڑلیا تو رات میں کسی بھی وقت جب کروٹ بدلتے ہوئے اللہ تعالیٰ سے دنیا و آخرت کی کسی چیز کا سوال کرے گا تو اللہ تعالیٰ وہ خیر اس کو عطا فرمادے گا۔( مشکوٰۃ المصابیح: ص ۱۱۰ بحوالہ کتاب الاذکار)

تشریح:پہلی حدیث سے معلوم ہوا کہ پوری رات میں ایک گھڑی ضرور ایسی ہوتی ہے جس میں دعاء کرلی جائے تو دعاء ضرور قبول ہوتی ہے۔حدیث میں اس گھڑی کا پتہ نہیں دیا اور اس پتہ نہ دینے میں مصلحت اور حکمت یہ ہے کہ مومن بندے رات میںوقت بے وقت جب موقع لگے اور یاد آجائے لیٹے ،بیٹھے دعاء کرتے رہا کریں اور دعاء سے ہر گز غافل نہ ہوں، جب موقع لگے کوئی نہ کوئی دعاء مانگ لیں۔

 اوردوسری حدیث میں ارشا فرمایا کہ جو شخص باوضورات کو اپنے بستر پر لیٹے اور ذکر اللہ کرتے کرتے سوجائے تو اس باوضو سونے اور ذکرکرتے کرتے نیند آجانے کی وجہ سے اسے یہ شرف دیا گیا ہے کہ سوتے سوتے رات بھر میں جتنی بھی کروٹیں لے گا ہر کروٹ کے وقت اس کی دعاء قبول ہوگی چاہے آخرت کے لیے دعاء مانگے، چاہے دنیا کی بھلائی کی دعاء کرے۔

رات جو جب سونے لگے تو لیٹ کر سنت کے موافق دعائیں پڑھے، سونے سے پہلے پڑھنے کی سورتیں پہلے سے نہ پڑھی ہوں تو انہیں پڑھے، تسبیحات فاطمی پڑھے اور ان کے علاوہ دوسرے اذکار پڑھتے ہوئے سو جائے اور باوضو سونے کی کوشش کرے پھر جب سوتے سوتے آنکھ کھلے تو بھی اللہ کا ذکرکرے اور اللہ سے دعاء مانگے، یہ دعاء خاص طور پر قبول ہوتی ہے جیسا کہ حدیث بالا میں ارشاد فرمایا ہے، رات کو سوتے سوتے آنکھ کھلنے پرقبولیت دعاء کا وعدہ بعض ایسی روایات میں بھی مذکور ہے جن میں باوضوسونے کی قید نہیں ہے، لہٰذا اگر باوضو سونا نہ ہو تب بھی جس وقت آنکھ کھلے ضرور دعاء کرلے۔

 جمعہ کے دن ایک خاص گھڑی ہے جس میں ضرور دعاء قبول ہوتی ہے

 حضرت ابوہریرہ رضی اللہ عنہسے روایت ہے کہ حضور اقدسﷺ نے ارشاد فرمایا:بلاشبہ جمعہ کے دن ایک ایسی گھڑی ہے کہ جو کوئی مسلمان بندہ اس میں کسی خیر کا سوال کرے گا اللہ جلّ شانہٗ اسے ضرور عطا فرمائیںگے۔( مشکوٰۃ المصابیح: ص ۱۱۹ بحوالہ بخاری ومسلم)

 تشریح: اس حدیث پاک سے معلوم ہوا کہ جمعہ کے دن ایک ایسی گھڑی ہے کہ اس میں ضرور دعاء قبول ہوتی ہے، یہ گھڑی کس وقت ہوتی ہے اس کے بارے میں روایات مختلف ہیں۔ 

(جاری ہے)

٭…٭…٭

 

رنگین صفحات کے مضامین

  • رنگ و نور ۔ سعدی کے قلم سے
  • Rangonoor English
  • Message Corner
  • رنگ و نور پشتو ترجمہ
  • کلمۂ حق ۔ مولانا محمد منصور احمد
  • السلام علیکم ۔ طلحہ السیف
  • قلم تلوار ۔ نوید مسعود ہاشمی
  • نقش جمال ۔ مدثر جمال تونسوی
  • سوچتا رہ گیا ۔ نورانی کے قلم سے

Alqalam Latest Epaper

Alqalam Latest Newspaper

Rangonoor Web Designing Copyrights Khabarnama Rangonoor