Bismillah

694


۱۰رمضان المبارک۱۴۴۰ھ

طب نبویﷺ سے علاج ۔ 533

طب نبویﷺ سے علاج

(شمارہ 533)

البتہ کبھی ایسا ہوتا ہے کہ مریض مغلوب العقل ہوتا ہے اسے زبردستی غذا دینا پڑتی ہے اور بعض اوقات مریض کو کھانے کی عدم رغبت پیٹ میں امتلاء کی کثرت کی وجہ سے بھی ہوتی ہے، ایسی صورت میں غذادی جائے گی تو خرابی بڑھے گی۔

ابن سینا اور بقراط کہتے ہیں کہ مریض کو غذاء دینا اس کی ذات کی جہت سے اس کی قوت کا دوست ہے اور اس جہت سے اس کی دشمن ہے کہ وہ اس کے دشمن کی دوست ہے اور وہ مادہ ہے۔حضوراکرمﷺ کے اس ارشاد عالی’’ اللہ ہی اس کو کھلاتا پلاتا ہے‘‘کا مطلب یہ ہے کہ اللہ جلّ شانہٗ مریضوں کے ساتھ ایسا ہی معاملہ کرتا ہے جیسے کوئی کھلاتا پلاتا ہے، جس کا نتیجہ یہ ہوتا ہے کہ کھانا پینا چھوڑنا اس کو نقصان نہیں دیتا، جیسا کہ حضورﷺ نے فرمایا:’’میں تمہاری طرح نہیں ہوں، میں اپنے رب کے ہاں اس طرح شب بسر کرتا ہوں کہ وہ مجھے کھلاتا بھی ہے اور پلاتا بھی ہے۔‘‘

کھانے میں مریض کی طبیعت و خواہش کا خیال رکھنا:

حضرت ابن عباس رضی اللہ عنہ سے مروی ہے کہ نبی کریمﷺ نے ایک آدمی کی بیمار پرسی کی اور اس سے پوچھا کہ تمہاری طبیعت کیا چاہتی ہے؟ اس نے کہا کہ گندم کی روٹی۔‘‘

ایک روایت میں ہے کہ:’’کیک کھانے کو چاہتی ہے، پھر آپﷺ نے فرمایا:

جس کے پاس گندم کی روٹی ہو وہ اپنے بھائی کو بھیج دے۔‘‘

اسی طرح ارشاد نبویﷺ ہے کہ’’ جب تمہارا مریض کسی چیز کی خواہش کرے تو اس کو کھلائو۔ اگر مریض ایسی چیز تناول کرے جس کے کھانے کی وہ خواہش رکھتا ہو اور وہ چیز مضر ہوتو وہ چیز اس کے لیے فائدہ مند ہوگی یا کم ازکم ضرردے گی بہ نسبت اس چیز کے استعمال کرنے کے جس کی وہ خواہش نہ رکھے اگر چہ وہ چیز نفع مند ہو۔

 لہٰذا جب مریض کی خواہش سچی ہو تو طبیب کو بھی اس کی عرض کردہ خواہش کو قبول کرنا چاہیے۔ بقراط کا قول ہے کہ کھانے پینے کی جو چیز کم ہو، اس کی طبیعت پہلے بہتر ہواور لذت دار ہو، اسے اس کھانے پر ترجیح دینا چاہیے جو اس سے اعلیٰ و افضل ہو۔‘‘

مریض کو مضر صحت اشیاء زیادہ استعمال کرنے سے روکنا:

حضرت جعفر بن محمد اپنے والد سے نقل کرتے ہیں کہ حضور اکرمﷺ کی خدمت میں کھجوروں کا ایک پیالہ بطور ہدیہ پیش کیا گیا اور حضرت علی رضی اللہ عنہ بخار میں مبتلاتھے تو انہوں نے کھجور لی، پھر دوسری لی حتی کہ سات کھجوریں لے لیں تو آنحضورﷺ نے فرمایا کہ بس ،اتنی ہی کافی ہیں۔‘‘

اس کی وجہ یہ ہے کہ کھجور میں حرارت ہوتی ہے اور وہ بخاروالوں کے لیے مضر ہوتی ہے درد سر اور پیاس پیدا کرتی ہے اگر تھوڑٰی مقدار میں لے لی جائے تو مضرت نہیں ہوتی۔

 

٭…٭…٭

رنگین صفحات کے مضامین

  • رنگ و نور ۔ سعدی کے قلم سے
  • Rangonoor English
  • Message Corner
  • رنگ و نور پشتو ترجمہ
  • کلمۂ حق ۔ مولانا محمد منصور احمد
  • السلام علیکم ۔ طلحہ السیف
  • قلم تلوار ۔ نوید مسعود ہاشمی
  • نقش جمال ۔ مدثر جمال تونسوی
  • سوچتا رہ گیا ۔ نورانی کے قلم سے

Alqalam Latest Epaper

Alqalam Latest Newspaper

Rangonoor Web Designing Copyrights Khabarnama Rangonoor