Bismillah

694


۱۰رمضان المبارک۱۴۴۰ھ

حضرت اسمٰعیل علیہ السلام (عہد زریں۔689)

حضرت اسمٰعیل علیہ السلام

عہد زریں (شمارہ 689)

منیٰ:

مکہ سے منیٰ کا فاصلہ سات آٹھ کلو میٹر ہے، اگر چہ گنبد صفا کے قریب اور کوہ ابو قبیس کے نیچے بنی ہوئی سرنگوں میں سے جائیں تو یہ فاصلہ تین ساڑھے تین کلومیٹر رہ جاتا ہے۔ مکہ سے منیٰ کے نیم دائرے کے راستے میں محلہ شعب ابی طالب ( شعب علی رضی اللہ عنہ) میں نبی اکرمﷺ کا مولد مبارک، مسجد جن، محلہ شعب بنی عام، محلہ الجعفریہ،الروضہ، خنساء، کوہ حرا کو جانے والی سڑک فیصلیہ، دائیں ہاتھ جدید آبادی العزیزیہ اور آگے وہ سڑک ہے جو منیٰ میں سیدھی قربان گاہ پہنچتی ہے، اس لیے اس کا نام مجرالکبش ہے۔ منیٰ میں دائیں بائیں پہاڑیوں کے سلسلے ہیں جس کی آغوش میں ایک ڈیڑھ کلومیٹر چوڑی وادی ہے۔ منیٰ میں تین جمرات ہیں جہاں ابلیس نے حضرت ابراہیم علیہ السلام کوبیٹا ذبح کرنے کے ارادے سے بہکانے کی کوشش کی تھی اور خلیل اللہ علیہ السلام نے اسے کنکریاں مار کر بھگا دیا تھا۔ چنانچہ حجاج جمرات پر کنکریاں مار کر وہی سنت ابراہیمی اداکرتے ہیں۔

جمرات سے آگے مسجد خیف ہے جس میں ایک بڑے گنبد والی بارہ دری ہے جہاں حجۃ الوداع کے موقع پر نبی کریمﷺ خیمہ زن ہوئے تھے۔ وادی منیٰ کی گزرگاہ کے عین درمیان دس بارہ فٹ اونچی اور چھ فٹ چوڑی وہ دیوار ہے جو اصحاب الفیل کے واقعے کی نشاندہی کے لئے بنائی گئی ہے، قریباً سو میٹر آگے ایسی ہی ایک اور دیوار کھڑی ہے۔ ان دونوں نشانات کے درمیان وادیٔ محسر ہے۔ یہیں ہاتھی والوں کا واقعہ پیش آیا تھا۔

٭…٭…٭

Ehad-e-Zareen Naqsha-689

رنگین صفحات کے مضامین

  • رنگ و نور ۔ سعدی کے قلم سے
  • Rangonoor English
  • Message Corner
  • رنگ و نور پشتو ترجمہ
  • کلمۂ حق ۔ مولانا محمد منصور احمد
  • السلام علیکم ۔ طلحہ السیف
  • قلم تلوار ۔ نوید مسعود ہاشمی
  • نقش جمال ۔ مدثر جمال تونسوی
  • سوچتا رہ گیا ۔ نورانی کے قلم سے

Alqalam Latest Epaper

Alqalam Latest Newspaper

Rangonoor Web Designing Copyrights Khabarnama Rangonoor