Bismillah

694


۱۰رمضان المبارک۱۴۴۰ھ

حضرت نوح علیہ السلام (عہد زریں۔624)

حضرت نوح علیہ السلام

عہد زریں (شمارہ 624)

نوح (علیہ السلام) نے دُعا کی: اے میرے پروردگار! ان کافروں میں سے کسی کو روئے زمین پر چلتا پھرتا نہ چھوڑ کر اگر تو انہیں چھوڑے گا تو یہ دوسروں کو بھی گمراہ کریں گے اور فاجر کافر اولاد ہی جنیں گے۔ رب کریم! مجھے اور میرے والدین کو معاف فرما اور ان کو بھی جو ایمان لاکر میرے گھر میں داخل ہوئے، غرض تمام صاحبِ ایمان مردوں اور عورتوں کو بخش دے اور ان ظالموں کی تباہی اور بربادی ہی میں اضافہ فرما۔ (نوح: ۷۱/ ۱۔ ۲۸)

حضرت نوح علیہ السلام کی قوم کے لوگ جنوبی عراق میں رہتے تھے جہاں آج کل کوفہ واقع ہے۔ اور جودی، دریائے دجلہ کے مشرقی کنارے پر جزیرہ ابن عمر کے سامنے ایک پہاڑ ہے جہاں شامی اور ترکی کی حدود ملتی ہیں۔ شام کے شہر ’’عین دیوار‘‘ سے جودی پہاڑ صاف نظر آتا ہے۔ تاریخی لحاظ سے یہ بات قابل ذکر ہے کہ اس علاقے (رافدین) کی قدیم تاریخ پر مندرجہ ذیل ادوار گزرے ہیں:

۱۔ پتھر کا قدیم دور: مستشرق سُوَیلی نے ۱۹۵۴ء میں اس دور کے کچھ آثار معلوم کیے۔

۲۔ پتھر کا نیا دور: (جرمو کی تہذیب)مستشرق بریڈوڈ نے ۱۹۴۸ء میں سلیمانیہ شہر کے مغرب میں واقع بستی جرمو میں اس دور کے عظیم مرکز کا سراغ لگایا۔ اہلِ علم نے اس مرکز کا زمان ۶۵۰۰ق۔ م بتلایا ہے۔ اس وقت بستیوں کی صورت میں آبادی کی ابھی ابتدا ہی ہوئی تھی۔

پتھر کے اس نئے دور ہی میں ’’تلَّ حَسُّونَہ‘‘ کی تہذیب کا آغاز ہوا۔ یہ شہر موصل کے جنوب میں واقع تھا۔ اس تہذیب کا زمانہ ۵۷۵۰ق۔م کے قریب قریب ہے۔ مستشرق مالوان نے ۱۹۳۱ء میں موصل کے قریب نینویٰ کے مقام پر ’’تلَّ حَسُّونَہ‘‘ کی تہذیب سے ملتے جلتے آثاردیکھے۔ اس تہذیب کے دوسرے نمونے شمالی عراق کے بہت سے مقامات پر پائے گئے۔

شام کے شہر ’’رأس العین‘‘ کے قریب، جہاں سے دریائے خابور پھوٹتا ہے ایک جرمنی عالم پارون نے پتھر کے اس نئے  دور کی تہذیب سے ملتے جلتے آثار معلوم کیے۔

٭…٭…٭

Ehad-e-Zareen Naqsha-624

رنگین صفحات کے مضامین

  • رنگ و نور ۔ سعدی کے قلم سے
  • Rangonoor English
  • Message Corner
  • رنگ و نور پشتو ترجمہ
  • کلمۂ حق ۔ مولانا محمد منصور احمد
  • السلام علیکم ۔ طلحہ السیف
  • قلم تلوار ۔ نوید مسعود ہاشمی
  • نقش جمال ۔ مدثر جمال تونسوی
  • سوچتا رہ گیا ۔ نورانی کے قلم سے

Alqalam Latest Epaper

Alqalam Latest Newspaper

Rangonoor Web Designing Copyrights Khabarnama Rangonoor