Bismillah

694


۱۰رمضان المبارک۱۴۴۰ھ

حضراتِ صحابۂ کرام رضی اللہ عنہم کی بہادری (تابندہ ستارے۔671)

حضراتِ صحابۂ کرام رضی اللہ عنہم کی بہادری

تابندہ ستارے ۔ حضرت مولانا محمدیوسفؒ کاندھلوی (شمارہ 671)

آپؓ نے فرمایا : اسے بھی میرے پاس لے آئو اور اس کی جتنی تنخواہ جمع ہوگئی ہے وہ بھی میرے پاس لے آئو۔ چنانچہ وہ انصاری ا س نوجوان کو بھی لائے اور اس کے ساتھ درہموں کی ایک تھیلی بھی لائے۔ حضرت عمررضی اللہ عنہ نے فرمایا:لویہ تھیلی۔ اب اگر تم چاہو تو( ان دراہم کو لے کر) غزوہ میں چلے جائو اور اگر چاہو تو( گھر) بیٹھ جائو۔

اللہ کے راستہ میں جانے کے لیے قرض لینا

حضرت ابنِ مسعودرضی اللہ عنہ فرماتے ہیں کہ ایک آدمی نے آکر کہا:کیا آپ نے رسول اللہﷺ کو گھوڑوں کے بارے میں کچھ فرماتے ہوئے سنا ہے؟میں نے کہا:ہاں۔ میں نے حضورﷺ کوفرماتے ہوئے سنا کہ گھوڑوں کی پیشانیوں میں قیامت تک خیر رکھ دی گئی ہے۔ اللہ کے بھروسے پر خریدو اور اللہ کے بھروسے پر قرض لو۔ کسی نے پوچھا:یا رسول اللہ! ہم اللہ کے بھروسے پر کیسے خریدیں اور اللہ کے بھروسے پر کیسے ادھار لیں؟آپﷺ نے فرمایا:تم قرض دینے والے سے یہ کہو کہ ہمیں قرض ابھی دے دو، جب مالِ غنیمت میںسے ہمارا حصہ ملے گا تو ہم اس وقت قرض ادا کردیں گے اور بیچنے والے سے یہ کہوکہ چیز ہمیں ابھی بیچ دو، جب اللہ تعالیٰ ہمیں فتح اور مالِ غنیمت دے دے گا ہم اس وقت قیمت ادا کردیں گے اور جب تک تمہارا جہاد سرسبز وشاداب رہے گا تم خیر پر رہو گے اور آخرزمانے میں لوگ جہاد میں شک کرنے لگ جائیں گے تو ان کے زمانے میں تم جہاد بھی کرنا اور پھر غزوہ میں اپنی جان بھی پیش کردینا، کیونکہ غزوہ میں جانا اس دن بھی سرسبز ہوگا( اس پر آج کی طرح اللہ کی مدد بھی آئے گی اور مال غنیمت بھی ملے گا)

مجاہد فی سبیل اللہ کو رخصت کرنے کے لیے ساتھ جانا اور اسے الوداع کہنا

حضرت ابنِ عباس رضی اللہ عنہ فرماتے ہیں کہ جب حضورﷺ نے صحابہ کو( کعب بن اشرف کو قتل کرنے کے لیے) بھیجا تو( ان کو رخصت کرنے کے لیے) حضورﷺ ان کے ساتھ چل کر بقیع غرقد تک گئے۔ پھر آپﷺ نے فرمایا:اللہ کا نام لے کر جائو۔( اور یہ دعاء دی) اے اللہ! ان کی مدد فرما۔

 حضرت محمد بن کعب قرظیؒ فرماتے ہیں کہ ایک مرتبہ حضرت عبداللہ بن یزیدرضی اللہ عنہ کو کھانے کے لیے بلایا گیا۔ جب وہ آئے تو انہوں نے کہا : حضورﷺ جب کسی لشکر کو روانہ فرماتے تو یہ فرماتے:

استودع اللّٰہ دینکم وامانتکم وخواتیم اعمالکم

میں تمہارے دین کو اور تمہاری امانتوں اور تمہارے اعمال کے خاتمہ کو اللہ کے سپرد کرتا ہوں۔

 حضرت حسن بصریؒ حضرت اسامہ رضی اللہ عنہ کے لشکر کو روانہ کرنے کی حدیث کو بیان کرتے ہیں، جس میں یہ مضمون بھی ہے کہ پھر حضرت ابو بکر رضی اللہ عنہ باہر تشریف لائے اور اس لشکر کے پاس گئے اور ان کو روانہ فرمایااور ان کو اس طرح رخصت کیا کہ حضرت ابوبکررضی اللہ عنہ خود پیدل چل رہے تھے اور حضرت اسامہ رضی اللہ عنہ سوار تھے اور حضرت عبدالرحمن بن عوف رضی اللہ عنہ حضرت ابوبکررضی اللہ عنہ کی سواری کی لگام پکڑ کرچل رہے تھے۔ تو حضرت اسامہ رضی اللہ عنہ نے ان سے عرض کیا:اے خلیفہ ٔ رسول اللہ! یا تو آپؓ بھی سوار ہوجائیں ورنہ میں بھی سواری سے نیچے اتر آتا ہوں۔ حضرت ابو بکررضی اللہ عنہ نے فرمایا:اللہ کی قسم! نہ تم اتروگے اور اللہ کی قسم! نہ میں سوار ہوں گا اس میں میرا کیا حرج ہے کہ میں تھوڑی دیر اپنے پائوں اللہ کے راستہ میں غبار آلود کرلوں، کیونکہ غازی جو قدم بھی اٹھاتا ہے اس کے لیے ہر قدم پر سات سونیکیاں لکھی جاتی ہیں اور اس کے سات سو درجے بلند کر دیئے جاتے ہیں اور اس کے سات سو گناہ مٹائے جاتے ہیں۔ جب حضرت ابو بکررضی اللہ عنہ ان کو رخصت کرکے واپس آنے لگے تو انہوں نے حضرت اسامہ رضی اللہ عنہ سے کہا:اگر تم مناسب سمجھو تو حضرت عمررضی اللہ عنہ کو میری مدد کے لیے یہاں چھوڑ جائو۔ چنانچہ حضرت اسامہ رضی اللہ عنہ نے حضرت عمررضی اللہ عنہ کو مدینہ منورہ میں حضرت ابو بکر رضی اللہ عنہ کے پاس رہ جانے کی اجازت دے دی۔

حضرت یحییٰ بن سعیدؒ فرماتے ہیں کہ حضرت ابو بکر صدیق رضی اللہ عنہ نے ملکِ شام( چار) لشکر بھیجے۔ ان میں سے ایک لشکر کے حضرت یزید بن ابی سفیان رضی اللہ عنہ امیر تھے۔

 حضرت ابوبکررضی اللہ عنہ حضرت یزید بن ابی سفیان رضی اللہ عنہ کو رخصت کرنے کے لیے ان کے ساتھ پیدل چلنے لگے۔ حضرت یزیدرضی اللہ عنہ نے حضرت ابو بکررضی اللہ عنہ سے کہا:یا تو آپ بھی سوار ہوجائیں یا پھر میں بھی سواری سے نیچے اترتا ہوں۔ حضرت ابو بکررضی اللہ عنہ نے فرمایا :تمہیں نیچے اترنے کی اجازت نہیں اور میں خود سوار نہیں ہوں گا، کیونکہ میرے جو قدم اللہ کے راستہ میں پڑ رہے ہیں مجھے ان پر اللہ سے ثواب کی امید ہے۔ آگے حدیث اور بھی ہے۔

(جاری ہے)

٭…٭…٭

رنگین صفحات کے مضامین

  • رنگ و نور ۔ سعدی کے قلم سے
  • Rangonoor English
  • Message Corner
  • رنگ و نور پشتو ترجمہ
  • کلمۂ حق ۔ مولانا محمد منصور احمد
  • السلام علیکم ۔ طلحہ السیف
  • قلم تلوار ۔ نوید مسعود ہاشمی
  • نقش جمال ۔ مدثر جمال تونسوی
  • سوچتا رہ گیا ۔ نورانی کے قلم سے

Alqalam Latest Epaper

Alqalam Latest Newspaper

Rangonoor Web Designing Copyrights Khabarnama Rangonoor