Bismillah

694


۱۰رمضان المبارک۱۴۴۰ھ

خواتین اسلام سے رسول اکرمﷺ کی باتیں (شمارہ 666)

خواتین اسلام سے رسول اکرمﷺ کی باتیں

(شمارہ 666)

غیبت کئی طرح سے ہوتی ہے اور اس کا سننا بھی حرام ہے

غیبت بہت بری چیز ہے جس طرح غیبت کرنا منع ہے غیبت سننا بھی منع ہے اور آخرت میں اس کا وبال بھی بہت بڑا ہے۔ بعض مردوں اور عورتوں کو دیکھا گیا ہے کہ غیبت کا ان کو ایسا چسکا لگ جاتا ہے کہ ہر مجلس اور ہر موقع میں غیبت ہی کرتے یا سنتے رہتے ہیں، جب تک کہ کسی کی غیبت نہ کریں ان کی روٹی ہی ہضم نہیں ہوتی۔ کسی کی زبان سے غیبت کردی اور کسی کی آنکھ کے اشارہ سے اور کسی کی نقل اتار کر، کسی کی خط لکھ کر اور کسی کی غیبت اخبار میں مضمون دے کرکردی،غیبت کے شوقین مردوں کو بھی نہیں بخشتے، جو لوگ اس دنیا سے گذر گئے ان کی بھی غیبتیں کرتے ہیں، حالانکہ یہ اس اعتبار سے بہت خطرناک ہے کہ دنیا میں نہ ہونے کی وجہ سے ان سے معافی نہیں مانگی جا سکتی پھر اس میں دوہراگناہ ہے کیونکہ میت کی غیبت کے ساتھ ان لوگوں کی دل آزاری بھی ہوتی ہے جو مرنے والے سے نسب کا یا کسی طرح نسبت کا تعلق رکھتے ہیں جو شخص دنیا سے چلا گیا، اگر اس کا کوئی مالی حق رہ گیا ہو تو وہ اس کے وارثوں کو دے کر جان چھوٹ سکتی ہے لیکن مرنے والے کی غیبت کو ورثہ بھی معاف نہیں کر سکتے۔

غیبت کرنے یا سننے میں جو نفس کو مزہ آتا ہے اس مزہ کا نتیجہ جو آخرت میں بصورت عذاب ظاہر ہوگا اس وقت نفس کی اس لذت کا خمیازہ بھگتنا پڑے گا جو بہت برا ہوگا، جس طرح کسی کا مالی حق دبالینے یعنی روپیہ پیسہ یا کوئی چیز غیر شرعی طور پر لے کر قبضہ کرلینے سے میدان قیامت میں نیکیوں اور گناہوں سے لین دین ہوگا، اسی طرح جس نے کسی کی غیبت کی ہوگی یا غیبت سنی ہوگی یا کسی بھی طرح سے کسی کی بے آبروئی کی ہوگی، بے جامار پیٹ کی ہوگی ، گالی دی ہوگی ،تہمت لگائی ہوگی، ان صورتوں میں بھی نیکیوں اور برائیوں سے لین دین ہوگا جس کی صورت یہ ہوگی کہ جس کا حق دبایا ہوگا یاکسی بھی طرح سے اس کی بے آبروئی کی ہوگی، تو جس نے ایسی حرکت کی ہوگی اس کو ظالم قرار دیا جائے گا اور جس کا پیسہ یا کوئی حق دبایا یا غیبت کی ہو یا کسی بھی طرح سے بے آبروئی کی تو اس کے عوض ظالم کی نیکیاں مظلوم کو دلادی جائیں گی۔ اگر نیکیوں سے پورانہ پڑا تو مظلوم کی برائیاں یعنی گناہ اس سے لے کر ظالم کے سرڈال دئیے جائیں گے، پھر اسے دوزخ میں ڈال دیا جائے گا۔ یہ مضمون حدیث شریف میں بہت واضح طور پر بیان فرمایا ہے۔(مشکوٰۃ المصابیح :ص ۴۳۵)

ہوش مند بندے وہی ہیں جو اپنی زبان پر قابو رکھتے ہیں، تیری میری برائی میں نہیں پڑتے، نہ غیبت کرتے ہیں نہ غیبت سنتے ہیں، بہت سے لوگوں کو دیکھا گیا ہے خوب زیادہ ذکر و تلاوت کرتے ہیں، نمازیں بھی لمبی لمبی پڑھتے ہیں اور بھی طرح طرح نیکیوں میں مشغول رہتے ہیں لیکن چونکہ غیبتوں اور تہمتوں سے بچنے کا اہتمام نہیں کرتے اس لیے اپنی ساری نیکیوں کو اپنے حق میں مٹی کردیتے ہیں۔ جن کے حق دبائے یا غیبتیں کیں یا غیبتیں سنیں یہ بھاری بوجھل نیکیاں ان کو دے دی جائیں گی اور ان کے گناہ اپنے سر پر اٹھائیں گے اور پھر حیران کھڑے رہ جائیں گے، پھر دوزخ کا عذاب بھگتنا پڑے گا۔

جو غیبت کی ہے یا سنی ہے اس دنیا میں معافی مانگ کر اس سے سبکدوش ہوجائے

ہر مسلمان پر لازم ہے کہ آئندہ کے لیے غیبت کرنے، غیبت سننے، تہمت لگانے، گالی دینے ،کسی کی نقل اتارنے، کسی کا مذاق بنانے سے اپنی حفاظت کرلے اور جن لوگوں کے حقوق دبائے ہیں یا غیبتیں کی ہیں یا سنی ہیں یا کسی کے حق میں کسی بھی طرح سے آگے یا پیچھے کوئی کلمہ ایسا کہا ہے جو ناگواری کا باعث ہو تو ان سب سے معافی مانگے، اگر ملاقات ہونے کی صورت نہ ہو تو خط کے ذریعہ معافی طلب کریں، اگر کوئی شخص مرگیا ہو تو مالی حق اس کے وارثوں کو دے دے اور دوسری چیزوں کی معافی کے واسطے مرنے والے کے لیے اتنی زیادہ دعائے مغفرت کرے جس سے یقین ہوجائے کہ اس کی جو غیبت یابرائی کی تھی یا غیبت سنی تھی یا تہمت لگائی تھی اس کی تلافی ہوگئی۔

 بعض علماء نے یوں فرمایا ہے کہ جس کی غیبت کی یا سنی اگر اسے پتہ چل گیا ہو تو اس سے معافی مانگ لے اور اگر اسے پتہ نہ چلا ہو تو اسے بتائے بغیر اس کے لیے اس قدر دعائے مغفرت کرے کہ غیبت وغیرہ کی پوری طرح سے تلافی ہوجائے ۔

کسی جگہ غیبت ہونے لگے تو دفاع کرے ورنہ اُٹھ جائے

ہمارے ایک استاد غیبت سے بچنے کا اس قدر اہتمام فرماتے تھے کہ کسی کا اچھا تذکرہ بھی اپنی مجلس میں نہیں ہونے دیتے تھے وہ فرماتے تھے کہ آج کل کسی کی تعریف کے کلمات کہنا بھی مشکل ہے اگر کوئی شخص کسی کے حق میں اچھے کلمات کہنا شروع کرے تو فوراً ہی دوسرا شخص اس کی برائی شروع کردیتا ہے پھر سب حاضرین غیبت سننے میں مبتلا ہوجاتے ہیں۔

٭…٭…٭

رنگین صفحات کے مضامین

  • رنگ و نور ۔ سعدی کے قلم سے
  • Rangonoor English
  • Message Corner
  • رنگ و نور پشتو ترجمہ
  • کلمۂ حق ۔ مولانا محمد منصور احمد
  • السلام علیکم ۔ طلحہ السیف
  • قلم تلوار ۔ نوید مسعود ہاشمی
  • نقش جمال ۔ مدثر جمال تونسوی
  • سوچتا رہ گیا ۔ نورانی کے قلم سے

Alqalam Latest Epaper

Alqalam Latest Newspaper

Rangonoor Web Designing Copyrights Khabarnama Rangonoor