Bismillah

694


۱۰رمضان المبارک۱۴۴۰ھ

طب نبویﷺ سے علاج ۔ 581

طب نبویﷺ سے علاج

(شمارہ 581)

حضورﷺ نے فرمایا:جو شخص کسی مریض کی عیادت کرے، جس کی اجل ابھی نہ آچکی ہو ، تو اس کے پاس بیٹھ کر سات مرتبہ یہ پڑھے ’’اَسْأَلُ اللّٰہَ الْعَظِیْمَ رَبَّ الْعَرْشِ الْعَظِیْمِ اَنْ یَّشْفِیَکَ‘‘ یہ پڑھنے سے اللہ اس کو عافیت بخشیں گے۔‘‘

حضورﷺ جب خود کسی مریض کے پاس آتے یا مریض آپﷺ کے پاس لایا جاتا تو یہ دعاء پڑھتے:’’اَذْھِبِ الْبَاْسَ رَبَّ النَّاسِ،وَاشْفِ اَنْتَ الشَّافِیْ شِفَائً لَّایُغَادِرُ سَقَماً‘‘ مریض کو بھی چاہیے کہ وہ سورۃ الفاتحہ، سورۃ الاخلاص اور معوذ تین پڑھ کر اپنے ہاتھوں میں پھونک کر اپنے چہرے پر پھیر لے۔ جیساکہ یہ عمل حدیث صحیح میں خود آنحضرتﷺ سے ثابت اور منقول ہے۔

نیز مریض کو یہ دعاء کرب بھی پڑھنا مناسب ہے:

’’لَااِلٰہَ اِلَّااللّٰہُ الْعَظِیْمُ الْحَلِیْمُ لَااِلٰہَ اِلَّااللّٰہُ رَبُّ الْعَرْشِ الْعَظِیْمِ،لَااِلٰہَ اِلَّااللّٰہُ رَبُّ السَّمٰوٰتِ وَرَبُّ الْاَرْضِ وَرَبُّ الْعَرْشِ الْکَرِیْمِ‘‘

مریض کے لیے درد والم کا اظہار کرنا جائز ہے۔ جیسا کہ ایک مرتبہ رسول اللہﷺ نے( درد کی شدت سے) کہا:ہائے میرا سر‘‘لیکن جزع و فزع یا غصہ اور ناراضگی کا اظہار نہ کرے بلکہ اللہ کی حمد بیان کرے اور زبان پر کوئی شکوہ یا شکایت نہ آنے دے، البتہ مریض کے لواحقین، طبیب سے مریض کے متعلق پوچھ سکتے ہیں۔

 جیسا کہ حضورﷺ کی عیادت کر کے جب حضرت علی رضی اللہ عنہ باہر آئے تو ان سے لوگوں نے آنحضورﷺ کا حال پوچھا تو انہوں نے کہا کہ اللہ کا شکر ہے کہ آپ ﷺ نے صحت یابی کی حالت میں صبح کی ہے۔‘‘

٭…٭…٭

رنگین صفحات کے مضامین

  • رنگ و نور ۔ سعدی کے قلم سے
  • Rangonoor English
  • Message Corner
  • رنگ و نور پشتو ترجمہ
  • کلمۂ حق ۔ مولانا محمد منصور احمد
  • السلام علیکم ۔ طلحہ السیف
  • قلم تلوار ۔ نوید مسعود ہاشمی
  • نقش جمال ۔ مدثر جمال تونسوی
  • سوچتا رہ گیا ۔ نورانی کے قلم سے

Alqalam Latest Epaper

Alqalam Latest Newspaper

Rangonoor Web Designing Copyrights Khabarnama Rangonoor