Bismillah

694


۱۰رمضان المبارک۱۴۴۰ھ

طب نبویﷺ سے علاج ۔ 604

طب نبویﷺ سے علاج

(شمارہ 604)

یہاں پر اس سے مراد حسن صوت ہے۔

 ’’حضرت ذوالنون مصریؒ سے سماع کے بارے میں سوال ہوا تو فرمایا: سماع، ایک سچا ورود ہے جو دلوں کو حق تعالیٰ کی طرف کھینچتا ہے۔‘‘

اور ان سے خوش آوازی کے متعلق پوچھا گیا تو فرمایا: ’’خوش آوازی کچھ اشارے اور کنایات ہیں جو اللہ نے ہر پاکیزہ انسان میں ودیعت رکھے ہیں۔‘‘

حضرت دائود علیہ السلام بھی بڑے خوش الحان تھے جب وہ اپنی خطائوں پر رویا کرتے تھے اور جب زبور کی تلاوت کرتے تو جن و انس اور وحوش وطیور آپ کے اردگرد جمع ہوجاتے تھے۔

 آنحضورﷺ نے ابو موسیٰ اشعری رضی اللہ عنہ کے بارے میں فرمایا:’’ ان کو بھی آل دائود کے مزامیر میں سے ایک مزماردیا گیاہے۔‘‘

افلاطون کا قول ہے کہ دنیا کی لذتیں چار ہیں:

’’کھانا،پینا، جماع اور سماع‘‘

آپ دیکھتے ہوں گے کہ جو لوگ تھکا دینے والے پیشوں سے وابستہ ہیں جیسے دھوبی ،قلی وغیرہ وہ اپنی طبیعت کو ہلکا کرنے کے لیے مختلف خوش آوازیں نکالتے رہتے ہیں۔

 بچہ کو دیکھتے ہو کہ جب رورہا ہو تو حدی کی آواز سن کر خاموش ہوجاتا ہے اور اونٹ بھی حدی کی آواز پر جنگلوں کے فاصلے طے کر لیتا ہے۔

 ایک حکایت بیان کی جاتی ہے کہ ایک دیہاتی ایک شخص کا غلام تھا، جو بڑا خوش الحان تھا، اس نے ایک دن اونٹ کو ہنکانے کے لیے حدی خوانی کی تو سامان لدا ہونے کے باوجود اس نے تین دن کا فاصلہ ایک دن میں طے کرلیا، جب واپس پہنچا تو اوندھالیٹ گیا اور مرگیا۔

 اب دیکھو کہ یہ اونٹ مفہوم نہ سمجھنے کے باوجود خوش آوازی سے کتنا متاثر ہوا!

 پھر اہل ذوق و معرفت جب ایسی خوش آوازی کو سنیں گے تو ان کا کیا حال ہوگا؟کستورہ پرندہ اور بلبل کو دیکھ لو ایسی جگہوں پر اپنے آپ کو گرا دیتا ہے جہاں طرب آمیز سماع ہوتا ہے۔

(جاری ہے)

رنگین صفحات کے مضامین

  • رنگ و نور ۔ سعدی کے قلم سے
  • Rangonoor English
  • Message Corner
  • رنگ و نور پشتو ترجمہ
  • کلمۂ حق ۔ مولانا محمد منصور احمد
  • السلام علیکم ۔ طلحہ السیف
  • قلم تلوار ۔ نوید مسعود ہاشمی
  • نقش جمال ۔ مدثر جمال تونسوی
  • سوچتا رہ گیا ۔ نورانی کے قلم سے

Alqalam Latest Epaper

Alqalam Latest Newspaper

Rangonoor Web Designing Copyrights Khabarnama Rangonoor