Bismillah

694


۱۰رمضان المبارک۱۴۴۰ھ

الادب والادیب ۔ 678

الادب والادیب

(شمارہ 678)

ساغر جم سے تو اچھا ہے مرا جامِ سفال

ٹوٹ جائے تو کوئی غم نہ کوئی رنج و ملال

 میں مجاہد ہوں، نظر ہے میری جنت کی طرف

میرے کس کام کا، دنیایہ ترا حسن و جمال

تیر و تلوار سے لکھتا ہوں مقدر اپنا

ہے یہی مرا ہنر اوریہی میرا کمال

وہ مسلمان نہیںجس نے اسے ترک کیا

دین اسلام کا حصہ ہے جہاد و قتال

رب کوشہداء کی طرح چاہنے والا ہی نہیں

ہے اگر کوئی تو اس شخص کی دو مجھ کو مثال

 جب بھی دنیا سے شہیدوں کا گزر ہوتا ہے

 جھک کے تعظیم بجالاتے ہیں قطب و ابدال

خون کچھ ایسا ہوا سرد مسلمانوں کا

 نہ وہ پہلا جنوں ہے، نہ وہ پہلا سا جلال

خاک میں مل کے ہوئے خاک نشاں تک نہ رہا

اب نہ لیلیٰ ہے نہ مجنوں ہے نہ امید وصال

رات کی موت یقینی ہے سحر ہوتے ہی

 اس کو کہتے ہیں شب تا ر کاانجام و زوال

دوستی کیا ہے، وفا کیا ہے، محبت کیا ہے

 مجھ سے خامہ مراکرتا ہے اکثر یہ سوال

(ہمشیرہ باہرآفریدی شہیدؒ)

رنگین صفحات کے مضامین

  • رنگ و نور ۔ سعدی کے قلم سے
  • Rangonoor English
  • Message Corner
  • رنگ و نور پشتو ترجمہ
  • کلمۂ حق ۔ مولانا محمد منصور احمد
  • السلام علیکم ۔ طلحہ السیف
  • قلم تلوار ۔ نوید مسعود ہاشمی
  • نقش جمال ۔ مدثر جمال تونسوی
  • سوچتا رہ گیا ۔ نورانی کے قلم سے

Alqalam Latest Epaper

Alqalam Latest Newspaper

Rangonoor Web Designing Copyrights Khabarnama Rangonoor