Bismillah

694


۱۰رمضان المبارک۱۴۴۰ھ

کون کون’’ ظالمان‘‘ (قلم تلوار۔نوید مسعود ہاشمی)

Qalam Talwar 476 - Naveed Masood Hashmi - Kon Kon Zaliman

کون کون’’ ظالمان‘‘

قلم تلوار...قاری نوید مسعود ہاشمی (شمارہ 476)

68سال قبل پاکستان اللہ تعالیٰ کے نام پر بنایا گیا تھا...بانی پاکستان جناب محمد علی جناح نے قیام پاکستان کے مقاصد کا ذکر ان الفاظ میں کیا تھا کہ ’’ہم نے پاکستان کا مطالبہ محض زمین کا ایک ٹکڑا حاصل کرنے کے لئے نہیں کیا بلکہ ہم ایک ایسی تجربہ گاہ قائم کرنا چاہتے ہیں... جہاں اسلام کے اصولوں کو آزما سکیں۔‘‘

68سال ہونے کو ہیں... پاکستان کو قائم ہوئے ... کوئی اس قوم کو بتائے کہ 68سالوں سے پاکستان کے عوام کو نفاذ اسلام سے محروم رکھنے والے کون لوگ ہیں؟ اللہ کے نام پر بننے والے ملک میں اللہ کے نظام کو نافذ کرنے میں رکاوٹ کون بنا ہوا ہے؟ کیا پاکستان میں عملاً اسلامی نظام... مولویوں نے نافذ کرنا تھا؟ یا عوام کے کسی دوسرے گروہ نے نافذ کرنا تھا؟ آئین میں اسلام کی چند شقوں کا تڑکہ تو ضرور لگایا گیا... مگر عملی طور پر آئین میں درج اسلامی شقوں پر بھی عمل درآمد نہ کیا گیا۔

آئین میں درج اسلامی شقوں پر عملدرآمد کرنا کس کی ذمہ داری تھی؟ قومی اسمبلی کو جس کو سب سے زیادہ سپریم ہونے کا دعویٰ ہے... قومی اسمبلی کہ جہاں بیٹھے ہوئے ایلیٹ کلاس سے وابستہ لوگ یہ دعویٰ کرتے ہیں کہ وہ سارے کے سارے عوام کے نمائندے ہیں... اور وہاں قانون سازی بھی کی جاتی ہے... کوئی موجودہ قومی اسمبلی سے یہ سوال پوچھ کر دیکھے کہ آخر پچھلی منتخب اسمبلیوں یا موجودہ منتخب اسمبلی... پاکستان میں اسلامی نظام عملی طور پر نافذ کرنے میں ناکام کیوں رہی؟ اس کاجواب کسی کے پاس نہیں ہوگا!

صرف یہ کہہ دینا کافی نہیں ہے... کہ پاکستان کے آئین میںاللہ کی حاکمیت کی شق موجود ہے‘ صرف یہ کہہ دینا کافی نہیں ہے کہ آئین میں چند محدود سی اسلامی شقیں موجود ہیں جس ملک کے آئین میں اللہ کی حاکمیت کا تصور موجود ہو... کیا اس ملک میں سودی نظام نافذ کرنے کی گنجائش باقی رہ جاتی ہے؟ جس ملک میں اللہ کی حاکمیت کا تصور موجود ہو... کیا اس ملک کا الیکٹرانک میڈیا ... فحاشی‘ عریانی‘ بدمعاشی اور اسلام دشمن کو پروان چڑھانے کا حق رکھتا ہے؟

جس ملک کا مخصوص میڈیا... جھوٹ کو سچ اور سچ کو جھوٹ ثابت کرنے میں یدطولیٰ رکھتا ہو... جس ملک کے دانشور‘ نام نہاد اسکالر‘ کالم نگار اور تجزیہ نگار ٹی وی شوزمیں بیٹھ کر کھلے عام اسلامی احکامات کا مذاق اڑاتے ہوں... اس ملک کے آئین میں اگر اسلامی شقیں موجود بھی ہوں... تو عو ام کو اس کا کیا فائدہ؟ عوام کے کانوں میں سیکولر لادینیت کا گند ٹھونسنے والوں کے خلاف ریاستی ادارے حرکت میں کیوں نہیں آتے؟

اپنی تجوریاں بھرنے کے لئے پاکستان کی نوجوان نسل کو فحاشی و عریانی کے سیلاب ڈبونے والوں کے خلاف کیا آئین میں کوئی شق موجود ہے؟ اگر ہے تو پھر ان کے خلاف قانون حرکت میں کیوں نہیں آتا؟ گزشتہ روز چکوال سے ایک ’’محترم قاری‘‘ نے مسیج کے ذریعے مجھ سے سوال کیا کہ ’’آپ کا قلم امریکہ کے خلاف تو بڑا رواں رہتا ہے... خارجی ظالمان کے خلاف کب حرکت میں آئے گا؟‘‘

شاید اس محترم بھائی نے ... پشاور سانحہ کے بعد چھپنے والے میرے کالم غور سے نہیں پڑھے... اگر وہ غور سے پڑھ لیتے تو انہیں یہ شکوہ نہ رہتا... یہ خاکسار تو سیکولر ظالمان ہوں‘ امریکی ظالمان ہوں... یا ٹی ٹی پی کے ظالمان... روز اول سے ہی ان سارے ’’ظالمان‘‘کو ایک ہی تھیلی کے چٹے بٹے سمجھتا اور لکھتا چلا آرہا ہے... میں نے نہ کبھی امریکہ سے امیدیں وابستہ کیں‘ نہ برطانیہ‘ ایران یا سعودی عرب سے امیدیں یا توقعات وابستہ کیں... خدا گواہ ہے کہ میں نے اپنے ذاتی مفاد یا مالی ۔۔ کے لئے کبھی ایک ’’لفظ‘‘ بھی نہیں لکھا... خارجی اور داخلی فتنوں کے اسباب کو ہمیشہ پوری جرات کے ساتھ بے نقاب کیا... پاکستان اللہ کے نام پر معرض وجود میں آیا تھا... اگر اس سرزمین پر اللہ کا نظام عملاً نافذ نہ کیا گیا ... تو کیا ادھر‘ ادھر کی مارنے یا آئیں بائیں‘  شائیں کرنے سے یہاں امن قائم ہو جائے گا؟

پشاور کے سانحہ میں شہید کئے جانے والے تو مظلوم طالب علم تھے... میرے نزدیک ان کے علاوہ بھی پاکستان میں کسی بھی بے گناہ کو قتل کرنے والا... چاہے اپنی نسبت طالبان کی طرف کرے یا اس کا تعلق سیاسی اور لسانی جماعتوں کے عسکری ونگز کے ساتھ ہو... یہ سب ’’ظالمان‘‘ اور دہشت گردوں کے زمرے میں آتے ہیں۔

ان ’’ظالمان‘‘ کو قانون کے کٹہرے میں کھڑا کرنا... حتیٰ کہ شواہد کی روشنی میں تختہ دار پر چڑھانا بالکل درست ‘ جائز اور لازمی ہے۔

مگر میرا بنیادی سوال پھر وہی ہے... کہ اللہ کے نام پر حاصل کئے جانے والے پاکستان کو ڈنڈے اور میڈیا کے زور پر... زبردستی سیکولر بنانے کی کوششیں کیوں کی جارہی ہیں؟ اسلامی تہذیب کو پس پشت ڈال کر یورپ اور انڈیا کی تہذیب کو پاکستان میں طاقت اور دھونس کے ذریعے منوانے کی کوششیں کیوں جا رہی ہیں؟ آخر پاکستان کے الیکٹرانک چینلز کس کے ایجنڈے کو پروان چڑھانے میں مصروف ہیں؟ پاکستان کے آئین میں درج ہے کہ قادیانی غیر مسلم اقلیت ہیں... مگر الیکٹرانک چینلز کے سٹوڈیوز میں بیٹھ کر... بعض این جی او کے نمائندے اور سیکولر ’’ظالمان‘‘ نہ صرف یہ کہ آئین کی اس شق کا کھلے عام مذاق اڑاتے ہیں... بلکہ قادیانیوں کے خلاف ذوالفقار علی بھٹو مرحوم کی حکومت میں کئے جانے والے فیصلے پر شدید تنقید بھی کرتے ہیں... ایسے ظالمان کے خلاف قانون حرکت میں کیوں نہیں آتا... پاکستان میں دہشت گردی کرنے والے ہوں... دہشت گردی کو فروغ دینے والے ہوں... دہشت گردی کی معاونت کرنے والے ہوں... دہشت گردی کو سپورٹ کرنے والے ہوں... دہشت گردوں کو مالی فائدہ دینے والے ہوں... پشاور کے سکول میں معصوم بچوں پر ظلم ڈھانے والوں کے ساتھ اگر اشارے کنائے میں بھی تعاون کرنے والے ہوں۔

وہ سب کے سب ظالمان ہیں... ان ظالمان کو آپ خارجی کہیں یا داخلی کہیں  آپ کی مرضی... مگر ان ظالمان سے معاشرے کو پاک کرنا ضروری ہے... مگر اسی طریقے پر... امریکہ‘ برطانیہ یا بھارت کے کلچر کو پاکستان میں فروغ دینے والے ہوں... اس کلچر کو یہاں پرپرموٹ کرنے والے ہوں... پاکستان کے پاکیزہ معاشرے میں فحاشی و عریانی کو رواج دینے والے ہوں... اللہ کے نام پر بننے والے ملک میں اللہ اور اس کے رسولﷺ کے لائے ہوئے آسمانی نظام کے نفاذ کے راستے میں رکاوٹیں ڈالنے والے ہوں۔

یہود و نصاریٰ کی غلامی میں... پاک وطن کو سیکولر لادینیت کی دلدل میں دھکیلنے کی سازشیں کرنے والے ہوں... پگڑی‘ ڈاڑھی ‘ مسجد‘ مدرسے کا مذاق اُڑانے والے ہوں... رشوت‘ چور بازاری‘ لوٹ مار... کو فروغ دینے والے ہوں... ایف بی آئی‘ سی آئی اے ’’را‘‘ خاد اور موساد کی ایجنٹی کرنے والے ہوں۔

پاکستان میں ختم نبوت کے باغیوں اور گستاخان رسول کے حامی اور معاون ہوں... جھوٹی خبریں تراش تراش کر اسلام اور دینی مدارس کو بدنام کرنے والے ہوں... یا بھی سارے کے سارے ’’ظالمان‘‘ ہیں... پاکستان کے 19کروڑ عوام کو ان سارے ’’ظالمان‘‘ سے جان چھڑانے کے لئے جدوجہد کرنا پڑے گی‘ پاکستان میں فرقہ واریت پھیلانے والے ہوں... سیاسی انتشار کو بڑھاوا دینے والے ہوں... دیوبندی‘ بریلوی‘ اہلحدیث مسالک کو آپس میں لڑانے والے ہوں... جو لسانیت اور صوبائیت کے نام پر لڑاتے ہیں... یہ بھی ’’ظالمان‘‘ ہیں‘ ان تمام قسم کے ظالمان کو عدالتوں میں لانا پڑے گا۔

٭…٭…٭

رنگین صفحات کے مضامین

  • رنگ و نور ۔ سعدی کے قلم سے
  • Rangonoor English
  • Message Corner
  • رنگ و نور پشتو ترجمہ
  • کلمۂ حق ۔ مولانا محمد منصور احمد
  • السلام علیکم ۔ طلحہ السیف
  • قلم تلوار ۔ نوید مسعود ہاشمی
  • نقش جمال ۔ مدثر جمال تونسوی
  • سوچتا رہ گیا ۔ نورانی کے قلم سے

Alqalam Latest Epaper

Alqalam Latest Newspaper

Rangonoor Web Designing Copyrights Khabarnama Rangonoor