Bismillah

694


۱۰رمضان المبارک۱۴۴۰ھ

شرمناک سکینڈل، شہباز شریف اور فورتھ شیڈول (قلم تلوار۔نوید مسعود ہاشمی)

Qalam Talwar 507 - Naveed Masood Hashmi - Sharamnaak sceandal

شرمناک سکینڈل، شہباز شریف اور فورتھ شیڈول

قلم تلوار...قاری نوید مسعود ہاشمی (شمارہ 507)

وزیراعظم میاں محمد نواز شریف کے بھائی خادم اعلیٰ پنجاب میاں شہباز شریف کی حکومت کے گڈگورننس کے دعوے سن سن کر…قوم کے کان پک چکے ہیں… لیکن وہ ’’گڈگورننس‘‘ ہے کہاں؟ اس کا اتا پتا اگر کسی کو معلوم ہو تو… ہمیں ضرور مطلع کرے… افسران کو جھاڑنا اور سڑکیں بنانا… ایک فن تو ہوسکتا ہے مگر گڈگورننس نہیں… جناب شہباز شریف کی گڈگورننس کا حال اگر کسی نے دیکھنا ہو تو اسے چاہیے کہ ایک دفعہ … قصور کے گائوں خانوال کے… لوگوں سے ضرور مل لے۔

پنجاب کے بعض اضلاع میں وہاں کی پولیس کی عوام کے ساتھ چیرہ دستیاں کوئی ڈھکی چھپی بات نہیں… پولیس کی عوام کے ساتھ کی جانے والی زیادتیوں کو دیکھ کر ایسے لگتا ہے کہ … جیسے پنجاب عملاً پولیس اسٹیٹ بن چکا ہے… یقینا پولیس میں اچھے افسران اور اہلکار بھی موجود ہوں گے… لیکن قصور میں شرمناک واقعات میں وہاں کی پولیس کا جو ہولناک کردار نظر آیا… وہ خادم اعلیٰ کی گڈگورننس کے دعوئوں کو چکنا چور کرنے کے لئے کافی ہے۔

رانا ثناء اللہ… یہ بھی صوبہ پنجاب کے عوام کے حصے میں آنے والا عجیب و غریب کردار ہے… قصور کے بچوں اور بچیوں کے ساتھ ہونے والی سیکس دہشت گردی پر پردہ ڈالنے کے لئے فرماتے ہیں کہ … یہ زمین کا تنازعہ تھا..اطلاعات کے مطابق قصور کے گائوں خانوال کے بچوں اور بچیوں کے ساتھ شرمناک واقعات… کا تسلسل دس سال سے جاری تھا… اگر وہاں قانون نام کی کوئی چیز ہوتی… وہاں انصاف ہوتا’ غیر جانبدار پولیس ہوتی تو کیا اس قدر بھیانک جرم اتنے عرصے تک ہوسکتا تھا؟ اس لئے میں یہ لکھے بغیر نہیں رہ سکتا کہ … مجھے راہزنوں سے غرض نہیں… خادم اعلیٰ کی راہبری سے سوال ہے… کیا شہباز شریف صرف لاہور کے ہی وزیراعلیٰ ہیں؟ اگر نہیں تو پھر خانوال کے بچوں کے ساتھ… ایسا شرمناک جرم کرنے والے بے ضمیر شیطان اتنے عرصے تک قانون کی نگاہوں سے کیسے بچے رہے؟

بچوں کے ساتھ ہونے والے شرمناک جرم کی خبریں… جب دنیا نے دیکھی اور سنی ہوں گی… تو دنیا بھر میں پاکستان کی بدنامی کا عالم کیا ہوگا؟ پنجاب حکومت کے ہونہار وزراء کی پھرتیاں ملاحظہ کیجئے… وزیر قانون کہتے ہیں کہ اس قسم کا معاملہ یا کوئی واقعہ… رپورٹ ہی نہیں ہوا… لیکن انہیں کے پیٹی بند بھائی صوبائی وزیر داخلہ کا کہنا تھا کہ بچوں سے زیادتی کے ثبوت ملے ہیں۔

نواز شریف کی جمہوری حکومت کی یہ بڑی خوش قسمتی ہے … کہ اب ماشاء اللہ فوجی عدالتیں قائم ہوچکی ہیں… صرف قصور کے عوام ہی نہیں… بلکہ پاکستان بھر کے عوام کے علاوہ… تحریک انصاف اور جماعت اسلامی کے قائدین یہ مطالبہ کر رہے ہیں کہ قصور کے گائوں میں 280سے زائد بچوں کے ساتھ ہونے والی اس قبیح ترین دہشت گردی کرنے والے… شیطانی مجرموں کا مقدمہ فوجی عدالت میں چلایا جائے۔

کیا میاں شہباز شریف کی صوبائی حکومت اور میاں محمد نواز شریف کی مرکزی حکومت قصور کے شرمناک واقعات میںملوث مجرموں کے خلاف مقدمہ فوجی عدالت کو بھیجنے کی جرأت کرے گی؟ جنسی دہشت گردوں کے خلاف اگر فوجی عدالت میں مقدمہ چلا کر انہیں عبرتناک سزائوں کا مزا چکھا دیا گیا… تو کوئی وجہ نہیں کہ اس قسم کے جرم میں ملوث دیگر شیطانوں کی حوصلہ شکنی نہ ہوسکے۔

خادم اعلیٰ پنجاب نے پولیس کو مسجدوں’ مدرسوں اور مولویوں کے پیچھے لگا رکھا ہے… پنجاب کے مختلف شہروں میں دینی مدارس اور مساجد پر آئے روز چھاپے مارے جارہے ہیں ‘ دینی طلباء کی گرفتاریاں کی جارہی ہیں… میاں نواز شریف حکومت کے اتحادی مولانا فضل الرحمن پنجاب میں مدارس اور مساجد پر مارے جانے والے چھاپوں پر نہ صرف یہ کہ دل گرفتہ ہیں… بلکہ ان کا کہنا ہے کہ وہ اس پر نہایت دکھی بھی ہیں۔

علماء کی پگڑیاں اچھالی جارہی ہیں… خادم اعلیٰ پنجاب کی گڈگورننس ملاحظہ فرمائیے کہ راولپنڈی کے وہ جید علماء کرام کہ جو خانقاہوں کے شیخ بھی ہیں انہیں بھی بدنام زمانہ ’’فورتھ شیڈول ’’میں … شامل کرلیا گیا ہے۔ صرف راولپنڈی ہی نہیں… بلکہ پاکستان سمیت دنیا بھر میںلاکھوں مسلمانوں کے روحانی شیخ پیر طریقت مولانا پیر عزیز الرحمن ہزاروی کی خانقاہ میں گزشتہ دنوں حاضری کی سعادت حاصل ہوئی تو اس بزرگ ترین شخصیت کو پنجاب حکومت سے نہایت نالاں اور ناراض پایا… انہوں نے مجھ سے مخاطب ہو کر فرمایا کہ میرے جیسے بوڑھے شخص کا نام بھی بدنام زمانہ’’ فورتھ شیڈول ’’میں ڈالا جاچکا ہے۔ یہ وہی حضرت پیر عزیز الرحمن ہیں کہ … مسلم لیگ (ن) کو جب بھی ووٹوں کی ضرورت پڑی… تو لیگی قائدین نے ان کی قدم بوسی سے بھی گریز نہ کیا۔

کوئی حلقہ 54سے کامیابی حاصل کرکے قومی اسمبلی میں پہنچنے والے مسلم لیگ (ن) کے ایم این اے ملک ابرار سے پوچھ کر دیکھے کہ … اگر پیر طریقت مولانا عزیز الرحمن بدنام زمانہ قانون ’’ فورتھ شیڈول’’ کے قابل تھے… تو وہ اور ان کے بھائی… بار بار ان کی خانقاہ میں جاکر… ان کی حمایت حاصل کرنے کی کوششیں کیوں کرتے رہے؟

حکومت کے اتحادی مولانا فضل الرحمن کا یہ کہنا بالکل ٹھیک ہے کہ آئندہ انتخابات میں مسلم لیگ (ن) کو پنجاب میں اپنے اعمال کا خمیازہ بھگتنا پڑے گا… بات ہو رہی تھی میاں شہباز شریف حکومت کی گڈگورننس کی… جب مسلم لیگ (ن) کی پنجاب حکومت پولیس کو اکابر علماء… مدارس و مساجد اور خانقاہوں پر چھاپوں میں مشغول رکھے گی۔ تو پھر یقینا قصور جیسے خوفناک سیکنڈل منظر عام پر آتے رہیں گے۔

شہباز شریف کو چاہیے کہ وہ مسجدوں’ مدرسوں اور مولویوں کے گھروں پر… جتنے مرضی چھاپے مروائیں… لیکن خدا را پولیس کو جرائم اور حقیقی مجرموں کی … بیخ کنی کے لئے بھی استعمال کریں۔ ان کے حکم پر قصور سیکنڈل کی انکوائری کے لئے… جوڈیشل کمیشن بن بھی گیا تو اس کا فائدہ کیا ہوگا؟ کیونکہ ابھی تک اس قسم کی ہونے والی انکوائریاں معاملات کو دبانے کے لئے ہی کی جاتی ہیں… یہ میر انہیں بلکہ عوام کا تاثر ہے’ اگر قصور سیکنڈل میں ملوث بے غیرت’ بے حیاء اور بے ضمیر مجرموں کو واقعی کیفر کردار تک پہنچانا ہے تو پھر مقدمہ فوجی عدالت میں منتقل کرنا پڑے گا۔

اس قسم کی بے غیرتی پر مشتمل واقعات کی روک تھام کے لئے …حکومت کو ذہنی اور فکری تربیت کا اہتمام بھی کرنا پڑے گا… میڈیا بالخصوص ٹی وی چینلز کے ذریعے پھیلائی جانے والی بے حیائی اور فحاشی کو بھی سختی سے روکنا پڑے گا… سیدھی سی بات ہے کہ اگر پاکستان میں اسلامی سزائوں پر عملدرآمد… یقینی بنالیا جاتا… تو ہر قسم کے جرائم خود بخود دم توڑ جاتے… بدمعاش’ رسہ گیر’ قاتل’ ٹارگٹ کلرز’ دہشت گرد’ لٹیرے’ سرمایہ دار اور جاگیردار جرم کرتے ہوئے نہ ڈرتے ہیں اور نہ گھبراتے ہیں’ مگر افسوس کہ … حکمران ان کے خلاف اسلامی سزائوں کو… نافذ کرتے ہوئے گھبراتے بھی ہیں اور شرماتے بھی… یہی وجہ ہے کہ مجرم دندناتے ہوئے پھر رہے ہیں۔

٭…٭…٭

رنگین صفحات کے مضامین

  • رنگ و نور ۔ سعدی کے قلم سے
  • Rangonoor English
  • Message Corner
  • رنگ و نور پشتو ترجمہ
  • کلمۂ حق ۔ مولانا محمد منصور احمد
  • السلام علیکم ۔ طلحہ السیف
  • قلم تلوار ۔ نوید مسعود ہاشمی
  • نقش جمال ۔ مدثر جمال تونسوی
  • سوچتا رہ گیا ۔ نورانی کے قلم سے

Alqalam Latest Epaper

Alqalam Latest Newspaper

Rangonoor Web Designing Copyrights Khabarnama Rangonoor